IBN E MAJA

Search Result (170)

35) Etiquette

35) آداب و اخلاق

Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3657

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شَرِيكُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ سَلَامَةَ السُّلَمِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أُوصِي امْرءًا بِأُمِّهِ،‏‏‏‏ أُوصِي امْرءًا بِأُمِّهِ،‏‏‏‏ أُوصِي امْرءًا بِأُمِّهِ ثَلَاثًا،‏‏‏‏ أُوصِي امْرءًا بِأَبِيهِ،‏‏‏‏ أُوصِي امْرءًا بِمَوْلَاهُ الَّذِي يَلِيهِ،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ عَلَيْهِ مِنْهُ أَذًى يُؤْذِيهِ .
Ibn Salamah As-Sulami narrated that the Prophet (ﷺ) said: I enjoin each one to honor his mother,I enjoin each one to honor his mother,I enjoin each one to honor his mother(three times), I enjoin each one to honor his guardian who is taking care of him, even if he is causing him some annoyance. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں آدمی کو اپنی ماں کے ساتھ اچھے سلوک اور برتاؤ کرنے کی وصیت کرتا ہوں، میں آدمی کو اپنی ماں کے ساتھ اچھے سلوک اور برتاؤ کرنے کی وصیت کرتا ہوں، میں آدمی کو اپنی ماں کے ساتھ اچھے سلوک اور برتاؤ کرنے کی وصیت کرتا ہوں، میں آدمی کو اپنے باپ کے ساتھ اچھے سلوک اور برتاؤ کرنے کی وصیت کرتا ہوں، میں آدمی کو اپنے مولیٰ ۱؎ کے ساتھ جس کا وہ والی ہو اچھے سلوک اور برتاؤ کرنے کی وصیت کرتا ہوں، خواہ اس کو اس سے تکلیف ہی کیوں نہ پہنچی ہو ۲؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3658

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَيْمُونٍ الْمَكِّيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عُمَارَةَ بْنِ الْقَعْقَاعِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي زُرْعَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ مَنْ أَبَرُّ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمَّكَ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمَّكَ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أَبَاكَ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ؟ قَالَ:‏‏‏‏ الْأَدْنَى فَالْأَدْنَى .
Abu Hurairah, may Allah be pleased with them, said that: Allah's Messenger said: They said: 'O Messenger of Allah, whom should I treat kindly?' He said: 'Your mother.' He said: 'Then who?' He said :'Your mother. He said: 'Then who?' He said: 'Your father'. He said : 'Then who?' He said: 'The next closest and the next closest.' لوگوں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! حسن سلوک ( اچھے برتاؤ ) کا سب سے زیادہ مستحق کون ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمہاری ماں ، پھر پوچھا: اس کے بعد کون؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمہاری ماں ، پھر پوچھا اس کے بعد کون؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمہارا باپ ، پھر پوچھا: اس کے بعد کون حسن سلوک ( اچھے برتاؤ ) کا سب سے زیادہ مستحق ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پھر جو ان کے بعد تمہارے زیادہ قریبی رشتے دار ہوں، پھر اس کے بعد جو قریبی ہوں ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3659

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا جَرِيرٌ،‏‏‏‏ عَنْ سُهَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا يَجْزِي وَلَدٌ وَالِدَهُ،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَجِدَهُ مَمْلُوكًا فَيَشْتَرِيَهُ،‏‏‏‏ فَيُعْتِقَهُ .
Abu Hurairah, may Allah be pleased with them, narrated that: Allah's Messenger said: No child can compensate his father unless he finds a slave, and buys him and sets him free. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کوئی بھی اولاد اپنے باپ کا حق ادا نہیں کر سکتی مگر اسی صورت میں کہ وہ اپنے باپ کو غلامی کی حالت میں پائے پھر اسے خرید کر آزاد کر دے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3660

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الصَّمَدِ بْنُ عَبْدِ الْوَارِثِ،‏‏‏‏ عَنْ حَمَّادِ بْنِ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَاصِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ الْقِنْطَارُ اثْنَا عَشَرَ أَلْفَ أُوقِيَّةٍ،‏‏‏‏ كُلُّ أُوقِيَّةٍ خَيْرٌ مِمَّا بَيْنَ السَّمَاءِ وَالْأَرْضِ ،‏‏‏‏ وَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ الرَّجُلَ لَتُرْفَعُ دَرَجَتُهُ فِي الْجَنَّةِ،‏‏‏‏ فَيَقُولُ:‏‏‏‏ أَنَّى هَذَا،‏‏‏‏ فَيُقَالُ:‏‏‏‏ بِاسْتِغْفَارِ وَلَدِكَ لَكَ .
Abu Hurairah, may Allah be pleased with them, narrated that: Allah's Messenger said: Qintar is twelve thousand 'Uqiyah, each 'Uqiyah of which is better than what is between heaven and earth. And the Messenger of Allah(ﷺ) said: A man will be raised in status in Paradise and will say: 'Where did this come from?' And it will be said:'From your son's praying for forgiveness for you.' نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «قنطار» بارہ ہزار «اوقیہ» کا ہوتا ہے، اور ہر «اوقیہ» آسمان و زمین کے درمیان پائی جانے والی چیزوں سے بہتر ہے ۔ اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ بھی فرمان ہے: آدمی کا درجہ جنت میں بلند کیا جائے گا، پھر وہ کہتا ہے کہ میرا درجہ کیسے بلند ہو گیا ( حالانکہ ہمیں عمل کا کوئی موقع نہیں رہا ) اس کو جواب دیا جائے گا: تیرے لیے تیری اولاد کے دعا و استغفار کرنے کے سبب سے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3661

حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ عَيَّاشٍ،‏‏‏‏ عَنْ بَحِيرِ بْنِ سَعْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ خَالِدِ بْنِ مَعْدَانَ،‏‏‏‏ عَنْ الْمِقْدَامِ بْنِ مَعْدِ يكَرِبَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ يُوصِيكُمْ بِأُمَّهَاتِكُمْ ثَلَاثًا،‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ يُوصِيكُمْ بِآبَائِكُمْ،‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ يُوصِيكُمْ بِالْأَقْرَبِ فَالْأَقْرَبِ .
Miqdam bin Ma'dikarib, may Allah be pleased with them, narrated that: Allah's Messenger said: Allah enjoins you to treat your mother's kindly -three times- Allah enjoins you to treat your fathers kindly, Allah enjoins you to treat the closest and the next closest kindly. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بیشک اللہ تعالیٰ تم کو اپنی ماؤں کے ساتھ حسن سلوک ( اچھے برتاؤ ) کی وصیت کرتا ہے یہ جملہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تین بار فرمایا بیشک اللہ تعالیٰ تم کو اپنے باپوں کے ساتھ حسن سلوک کی وصیت کرتا ہے، پھر جو تمہارے زیادہ قریب ہوں، پھر ان کے بعد جو قریب ہوں ان کے ساتھ حسن سلوک کی وصیت کرتا ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3662

حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا صَدَقَةُ بْنُ خَالِدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ أَبِي الْعَاتِكَةِ،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيِّ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي أُمَامَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَجُلًا،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ مَا حَقُّ الْوَالِدَيْنِ عَلَى وَلَدِهِمَا؟ قَالَ:‏‏‏‏ هُمَا جَنَّتُكَ وَنَارُكَ .
Abu Umamah narrated that a man said that: O Allah's Messenger(ﷺ), what are the rights of parents over their child? He said: They are your Paradise and your Hell. (Daif) ایک شخص نے عرض کیا: اللہ کے رسول! والدین کا حق ان کی اولاد پر کیا ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: وہی دونوں تیری جنت اور جہنم ہیں ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3663

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي عَبْدِ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الدَّرْدَاءِ،‏‏‏‏ سَمِعَ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ الْوَالِدُ أَوْسَطُ أَبْوَابِ الْجَنَّةِ،‏‏‏‏ فَأَضِعْ ذَلِكَ الْبَابَ أَوِ احْفَظْهُ .
Abu Darda' heard the Prophet (ﷺ) say that: The father is the middle door of Paradise (i.e. the best way to Paradise), so it is up to you whether you take advantage of it or not. انہوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: باپ جنت کا درمیانی دروازہ ہے، چاہے تم اس دروازے کو ضائع کر دو، یا اس کی حفاظت کرو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3664

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ إِدْرِيسَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ أَسِيدِ بْنِ عَلِيِّ بْنِ عُبَيْدٍمَوْلَى بَنِي سَاعِدَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي أُسَيْدٍ مَالِكِ بْنِ رَبِيعَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بَيْنَمَا نَحْنُ عِنْدَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذْ جَاءَهُ رَجُلٌ مِنْ بَنِي سُلَيْمٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ أَبَقِيَ مِنْ بِرِّ أَبَوَيَّ شَيْءٌ أَبَرُّهُمَا بِهِ مِنْ بَعْدِ مَوْتِهِمَا،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ الصَّلَاةُ عَلَيْهِمَا،‏‏‏‏ وَالِاسْتِغْفَارُ لَهُمَا،‏‏‏‏ وَإِيفَاءٌ بِعُهُودِهِمَا مِنْ بَعْدِ مَوْتِهِمَا،‏‏‏‏ وَإِكْرَامُ صَدِيقِهِمَا،‏‏‏‏ وَصِلَةُ الرَّحِمِ الَّتِي لَا تُوصَلُ إِلَّا بِهِمَا .
It was narrated that Abu Usaid, Malik bin Rabi'ah, said: While we were with the Prophet(ﷺ), a man from the Banu Salamah came to him and said: O messenger of Allah, is there anyway of honoring my parents that I can still do for them after they die?' He said: Yes offering the funeral prayer for them, praying for forgiveness for them, fulfilling their promises after their death, honoring their freinds and upholding the ties of kinship which you would not have were it nor for them.' ہم نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس موجود تھے، اتنے میں قبیلہ بنی سلمہ کا ایک شخص حاضر ہوا، اور اس نے عرض کیا: اللہ کے رسول! کیا میرے والدین کی نیکیوں میں سے کوئی نیکی ایسی باقی ہے کہ ان کی وفات کے بعد میں ان کے لیے کر سکوں؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہاں، ان کے لیے دعا اور استغفار کرنا، اور ان کے انتقال کے بعد ان کے وعدوں کو پورا کرنا، اور ان کے دوستوں کی عزت و تکریم کرنا، اور ان رشتوں کو جوڑنا جن کا تعلق انہیں کی وجہ سے ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3665

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ،‏‏‏‏ عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ قَدِمَ نَاسٌ مِنْ الْأَعْرَابِ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالُوا:‏‏‏‏ أَتُقَبِّلُونَ صِبْيَانَكُمْ؟ قَالُوا:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ فَقَالُوا:‏‏‏‏ لَكِنَّا وَاللَّهِ مَا نُقَبِّلُ،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ وَأَمْلِكُ أَنْ كَانَ اللَّهُ قَدْ نَزَعَ مِنْكُمُ الرَّحْمَةَ؟ .
It was narrated that Aisha, said: Some Bedouin people came to the Prophet(ﷺ) and said: 'Do you kiss your children?' He said: 'Yes'. He said: 'But we, by Allah, never kiss (our children)'. The Prophet(ﷺ) said: 'What can I do if Allah has taken away mercy from you?' کچھ اعرابی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوئے، اور کہا: کیا آپ لوگ اپنے بچوں کا بوسہ لیتے ہیں؟ لوگوں نے کہا: ہاں، تو ان اعرابیوں ( خانہ بدوشوں ) نے کہا: لیکن ہم تو اللہ کی قسم! ( اپنے بچوں کا ) بوسہ نہیں لیتے، ( یہ سن کر ) نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مجھے کیا اختیار ہے جب کہ اللہ تعالیٰ نے تمہارے دلوں سے رحمت اور شفقت نکال دی ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3666

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَفَّانُ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وُهَيْبٌ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عُثْمَانَ بْنِ خُثَيْمٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي رَاشِدٍ،‏‏‏‏ عَنْ يَعْلَى الْعَامِرِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ الْحَسَنُ،‏‏‏‏ وَالْحُسَيْنُ يَسْعَيَانِ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَضَمَّهُمَا إِلَيْهِ،‏‏‏‏ وَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ الْوَلَدَ مَبْخَلَةٌ مَجْبَنَةٌ .
It was narrated from Ya'la Al -Amir that he said: Hasan and Hussain came running to the Prophet (ﷺ) and he embraced them and said: 'Children make a man a miser and a coward.' حسن اور حسین ( رضی اللہ عنہما ) دونوں دوڑتے ہوئے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان دونوں کو اپنے سینے سے چمٹا لیا، اور فرمایا: یقیناً اولاد بزدلی اور بخیلی کا سبب ہوتی ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3667

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا زَيْدُ بْنُ الْحُبَابِ،‏‏‏‏ عَنْ مُوسَى بْنِ عُلَيٍّ،‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبِي يَذْكُرُ،‏‏‏‏ عَنْ سُرَاقَةَ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَلَا أَدُلُّكُمْ عَلَى أَفْضَلِ الصَّدَقَةِ؟ ابْنَتُكَ مَرْدُودَةً إِلَيْكَ لَيْسَ لَهَا كَاسِبٌ غَيْرُكَ .
It was narrated from Suraqah bin Malik that the Prophet(ﷺ) said: Shall I not tell you of the best charity? A daughter who comes back to you and has no other breadwinner apart from you. (Daif) نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کیا میں تم کو افضل صدقہ نہ بتا دوں؟ اپنی بیٹی کو صدقہ دو، جو تمہارے پاس آ گئی ہو ۱؎، اور تمہارے علاوہ اس کا کوئی کمانے والا بھی نہ ہو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3668

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ مِسْعَرٍ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي سَعْدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْصَعْصَعَةَ عَمِّ الْأَحْنَفِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ دَخَلَتْ عَلَى عَائِشَةَ امْرَأَةٌ مَعَهَا ابْنَتَانِ لَهَا،‏‏‏‏ فَأَعْطَتْهَا ثَلَاثَ تَمَرَاتٍ،‏‏‏‏ فَأَعْطَتْ كُلَّ وَاحِدَةٍ مِنْهُمَا تَمْرَةً،‏‏‏‏ ثُمَّ صَدَعَتِ الْبَاقِيَةَ بَيْنَهُمَا،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ فَأَتَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَحَدَّثَتْهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا عَجَبُكِ،‏‏‏‏ لَقَدْ دَخَلَتْ بِهِ الْجَنَّةَ .
It was narrated that Sa'sa'ah the paternal uncle of Ahnaf, said: A woman entered upon Aisha with her two daughters, and she gave her three dates. (The woman) gave each of her daughters a date, then she split the last one between them. She (Aisha) said: 'Then the Prophet(ﷺ) came and I told him about that.' He said:' Why are you surprised? She will enter Paradise because of that.' ایک عورت اپنی دو بیٹیوں کو ساتھ لے کر ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا کی خدمت میں آئی، تو انہوں نے اس کو تین کھجوریں دیں، اس عورت نے ایک ایک کھجور دونوں کو دی، اور تیسری کھجور کے دو ٹکڑے کر کے دونوں کے درمیان تقسیم کر دی، عائشہ رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ اس کے بعد نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائے تو میں نے آپ سے اس کا ذکر کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمہیں تعجب کیوں ہے؟ وہ تو اس کام کی وجہ سے جنت میں داخل ہو گئی ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3669

حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ الْحَسَنِ الْمَرْوَزِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ الْمُبَارَكِ،‏‏‏‏ عَنْ حَرْمَلَةَ بْنِ عِمْرَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا عُشَانَةَ الْمُعَافِرِيَّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عُقْبَةَ بْنَ عَامِرٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ مَنْ كَانَ لَهُ ثَلَاثُ بَنَاتٍ فَصَبَرَ عَلَيْهِنَّ،‏‏‏‏ وَأَطْعَمَهُنَّ،‏‏‏‏ وَسَقَاهُنَّ،‏‏‏‏ وَكَسَاهُنَّ مِنْ جِدَتِهِ،‏‏‏‏ كُنَّ لَهُ حِجَابًا مِنَ النَّارِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ .
Uqbah bin Amir said, I heard the Messenger of Allah(ﷺ) say: Whoever has three daughters and is patient towards them, and feeds them, gives them to drink, and clothes them from his wealth; they will be a shield for him from the Fire on the Day of Resurrection.' میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: جس کے پاس تین لڑکیاں ہوں، اور وہ ان کے ہونے پر صبر کرے، ان کو اپنی کمائی سے کھلائے پلائے اور پہنائے، تو وہ اس شخص کے لیے قیامت کے دن جہنم سے آڑ ہوں گی ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3670

حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ الْمُبَارَكِ،‏‏‏‏ عَنْ فِطْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَا مِنْ رَجُلٍ تُدْرِكُ لَهُ ابْنَتَانِ،‏‏‏‏ فَيُحْسِنُ إِلَيْهِمَا مَا صَحِبَتَاهُ أَوْ صَحِبَهُمَا،‏‏‏‏ إِلَّا أَدْخَلَتَاهُ الْجَنَّةَ .
It was narrated from Ibn Abbas that the Messenger of Allah(ﷺ) said: There is no man whose two daughters reach the age of puberty and he treats them kindly for the time they are together, but they will gain him admittance to Paradise. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس شخص کے پاس دو لڑکیاں ہوں اور وہ ان کے ساتھ حسن سلوک ( اچھا برتاؤ ) کرے جب تک کہ وہ دونوں اس کے ساتھ رہیں، یا وہ ان دونوں کے ساتھ رہے تو وہ دونوں لڑکیاں اسے جنت میں پہنچائیں گی ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3671

حَدَّثَنَا الْعَبَّاسُ بْنُ الْوَلِيدِ الدِّمَشْقِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ عَيَّاشٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عُمَارَةَ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي الْحَارِثُ بْنُ النُّعْمَانِ،‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ يُحَدِّثُ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَكْرِمُوا أَوْلَادَكُمْ،‏‏‏‏ وَأَحْسِنُوا أَدَبَهُمْ .
Anas bin Malik narrated that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Be kind to your children, and perfect their manners. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تم لوگ اپنی اولاد کے ساتھ حسن سلوک کرو، اور انہیں بہترین ادب سکھاؤ ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3672

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ سَمِعَ نَافِعَ بْنَ جُبَيْرٍ يُخْبِرُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي شُرَيْحٍ الْخُزَاعِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَنْ كَانَ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ،‏‏‏‏ فَلْيُحْسِنْ إِلَى جَارِهِ،‏‏‏‏ وَمَنْ كَانَ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ،‏‏‏‏ فَلْيُكْرِمْ ضَيْفَهُ،‏‏‏‏ وَمَنْ كَانَ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ،‏‏‏‏ فَلْيَقُلْ خَيْرًا أَوْ لِيَسْكُتْ .
It was narrated from Abu Shuraih Al-Khuzai that the Prophet(ﷺ) said: Whoever believes in the Last Day, let him treat his neighbour well. Whoever believes in Allah and Last Day, let him honor his guest. Whoever believes in Allah and the Last Day, let him say something good or else remain silent نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتا ہو اسے چاہیئے کہ وہ اپنے پڑوسی کے ساتھ نیک سلوک کرے، اور جو شخص اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتا ہو اسے چاہیئے کہ وہ اپنے مہمان کا احترام اور اس کی خاطرداری کرے، اور جو شخص اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتا ہو اسے چاہیئے کہ اچھی بات کہے یا خاموش رہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3673

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ،‏‏‏‏ وَعَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ . ح وحَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَااللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ جَمِيعًا،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي بَكْرِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عَمْرِو بْنِ حَزْمٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَا زَالَ جِبْرِيلُ يُوصِينِي بِالْجَارِ،‏‏‏‏ حَتَّى ظَنَنْتُ أَنَّهُ سَيُوَرِّثُهُ .
Aisha narrated that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Jibra'il kept enjoining good treatment of neighbours untol I thought that he would make neigbours heirs. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مجھے جبرائیل علیہ السلام برابر پڑوس کے ساتھ نیک سلوک کرنے کی وصیت کرتے رہے، یہاں تک کہ مجھے یہ خیال ہونے لگا کہ وہ پڑوسی کو وارث بنا دیں گے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3674

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يُونُسُ بْنُ أَبِي إِسْحَاق،‏‏‏‏ عَنْ مُجَاهِدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَا زَالَ جِبْرَائِيلُ يُوصِينِي بِالْجَارِ،‏‏‏‏ حَتَّى ظَنَنْتُ أَنَّهُ سَيُوَرِّثُهُ .
It was narrated from Abu Hurayrah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Jibra'il kept enjoining good treatment of neighbours until I thought he would make neighbours heirs. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جبرائیل برابر پڑوسی کے بارے میں وصیت و تلقین کرتے رہے، یہاں تک کہ مجھے یہ خیال ہونے لگا کہ وہ ہمسایہ کو وارث بنا دیں گے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3675

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَجْلَانَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي شُرَيْحٍ الْخُزَاعِيِّ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَنْ كَانَ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ،‏‏‏‏ فَلْيُكْرِمْ ضَيْفَهُ،‏‏‏‏ وَجَائِزَتُهُ يَوْمٌ وَلَيْلَةٌ،‏‏‏‏ وَلَا يَحِلُّ لَهُ أَنْ يَثْوِيَ عِنْدَ صَاحِبِهِ،‏‏‏‏ حَتَّى يُحْرِجَهُ الضِّيَافَةُ ثَلَاثَةُ أَيَّامٍ،‏‏‏‏ وَمَا أَنْفَقَ عَلَيْهِ بَعْدَ ثَلَاثَةِ أَيَّامٍ فَهُوَ صَدَقَةٌ .
It was narrated from Abu Shuraih Al-Khuza'i that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Whoever believes in the Last Day, let him honor his guest, and grant him reward for a day and a night. And it is not permissible for him to stay so long that he causes annoyance to his host. Hospitality is for three days, and whatever he spends on him after three days is charity. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص اللہ اور آخرت کے دن پر ایمان رکھتا ہو وہ اپنے مہمان کی عزت و تکریم کرے، اور یہ واجبی مہمان نوازی ایک دن اور ایک رات کی ہے، مہمان کے لیے یہ جائز نہیں کہ وہ اپنے میزبان کے یہاں اتنا ٹھہرے کہ اسے حرج میں ڈال دے، مہمان داری ( ضیافت ) تین دن تک ہے اور تین دن کے بعد میزبان جو اس پر خرچ کرے گا وہ صدقہ ہو گا ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3676

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رُمْحٍ،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا اللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْخَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ عُقْبَةَ بْنِ عَامِرٍ،‏‏‏‏ أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْنَا لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّكَ تَبْعَثُنَا فَنَنْزِلُ بِقَوْمٍ،‏‏‏‏ فَلَا يَقْرُونَا فَمَا تَرَى فِي ذَلِكَ،‏‏‏‏ قَالَ لَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنْ نَزَلْتُمْ بِقَوْمٍ،‏‏‏‏ فَأَمَرُوا لَكُمْ بِمَا يَنْبَغِي لِلضَّيْفِ فَاقْبَلُوا،‏‏‏‏ وَإِنْ لَمْ يَفْعَلُوا،‏‏‏‏ فَخُذُوا مِنْهُمْ حَقَّ الضَّيْفِ الَّذِي يَنْبَغِي لَهُمْ .
It was narrated that Uqbah bin Amir said: We said to the Messenger of Allah(ﷺ): ' You send us and we stay with people who do not show us any hospitality. WHat do you think of that?' The MEssenger of Allah (ﷺ) said: 'If you stay with people and they give you what a guest deserves, then accept it. If they do not do that , then take from them what they should have offered, which a guest is entitled to.' ہم نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا: آپ ہم کو لوگوں کے پاس بھیجتے ہیں، اور ہم ان کے پاس اترتے ہیں تو وہ ہماری مہمان نوازی نہیں کرتے، ایسی صورت میں آپ کیا فرماتے ہیں؟ تو آپ صلیاللہ علیہ وسلم نے ہم سے فرمایا: جب تم کسی قوم کے پاس اترو اور وہ تمہارے لیے ان چیزوں کے لینے کا حکم دیں جو مہمان کو درکار ہوتی ہیں، تو انہیں لے لو، اور اگر نہ دیں تو اپنی مہمان نوازی کا حق جو ان کے لیے مناسب ہو ان سے وصول کر لو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3677

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ الشَّعْبِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ الْمِقْدَامِ أَبِي كَرِيمَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَيْلَةُ الضَّيْفِ وَاجِبَةٌ،‏‏‏‏ فَإِنْ أَصْبَحَ بِفِنَائِهِ فَهُوَ دَيْنٌ عَلَيْهِ،‏‏‏‏ فَإِنْ شَاءَ اقْتَضَى وَإِنْ شَاءَ تَرَكَ .
It was narrated that Miqdam Abu Karimah said: The Messenger of Allah(ﷺ) said: ' Putting up a guest for one night is obligatory. If you find a guest at your door in the morning, then this (hospitality) is (like) a debt that you (the host) owe him. If he (the guest) wants, he may request it, and if he wants, he may leave it' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اگر کسی کے یہاں رات کو کوئی مہمان آئے تو اس رات اس مہمان کی ضیافت کرنی واجب ہے، اور اگر وہ صبح تک میزبان کے مکان پر رہے تو یہ مہمان نوازی میزبان کے اوپر مہمان کا ایک قرض ہے، اب مہمان کی مرضی ہے چاہے اپنا قرض وصول کرے، چاہے چھوڑ دے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3678

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ الْقَطَّانُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَجْلَانَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْأَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ إِنِّي أُحَرِّجُ حَقَّ الضَّعِيفَيْنِ،‏‏‏‏ الْيَتِيمِ وَالْمَرْأَةِ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: O Allah, bear witness that I have issued a warning concerning (failure to fulfill) the rights of the two weak ones: Orphans and women.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اے اللہ! میں دو کمزوروں ایک یتیم اور ایک عورت کا حق مارنے کو حرام قرار دیتا ہوں ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3679

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ آدَمَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ الْمُبَارَكِ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَبِي عَتَّابٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ خَيْرُ بَيْتٍ فِي الْمُسْلِمِينَ،‏‏‏‏ بَيْتٌ فِيهِ يَتِيمٌ يُحْسَنُ إِلَيْهِ،‏‏‏‏ وَشَرُّ بَيْتٍ فِي الْمُسْلِمِينَ،‏‏‏‏ بَيْتٌ فِيهِ يَتِيمٌ يُسَاءُ إِلَيْهِ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: The best house among the Muslims is a house in which there is an orphan who is treated well. And the worst house among the Muslims is a house in which there is an orphan who is treated badly. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مسلمانوں میں سب سے بہتر گھر وہ ہے جس میں کوئی یتیم ( پرورش پاتا ) ہو، اور اس کے ساتھ نیک سلوک کیا جاتا ہو، اور سب سے بدترین گھر وہ ہے جس میں یتیم کے ساتھ برا سلوک کیا جاتا ہو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3680

حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْكَلْبِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ إِبْرَاهِيمَ الْأَنْصَارِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي رَبَاحٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنْ عَالَ ثَلَاثَةً مِنَ الْأَيْتَامِ،‏‏‏‏ كَانَ كَمَنْ قَامَ لَيْلَهُ،‏‏‏‏ وَصَامَ نَهَارَهُ،‏‏‏‏ وَغَدَا وَرَاحَ شَاهِرًا سَيْفَهُ فِي سَبِيلِ اللَّهِ،‏‏‏‏ وَكُنْتُ أَنَا وَهُوَ فِي الْجَنَّةِ أَخَوَيْنِ كَهَاتَيْنِ أُخْتَانِ ،‏‏‏‏ وَأَلْصَقَ إِصْبَعَيْهِ السَّبَّابَةَ وَالْوُسْطَى.
It was narrated from `Abdullah bin `Abbas that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Whoever raises three orphans, is like the one who spends his nights in prayer and fasts during the day, and goes out morning and evening drawing his sword in the cause of Allah. In Paradise, he and I will be brothers like these two sisters,'and he held up his forefinger and middle finger together. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس شخص نے تین یتیموں کی پرورش کی تو وہ ایسا ہی ہے جیسے وہ رات میں تہجد پڑھتا رہا، دن میں روزے رکھتا رہا، اور صبح و شام تلوار لے کر جہاد کرتا رہا، میں اور وہ شخص جنت میں اس طرح بھائی بھائی ہو کر رہیں گے جیسے یہ دونوں بہنیں ہیں، اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے درمیانی اور شہادت کی انگلی کو ملایا ( اور دکھایا ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3681

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ وَعَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ أَبَانَ بْنِ صَمْعَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْوَازِعِ الرَّاسِبِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي بَرْزَةَ الْأَسْلَمِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ دُلَّنِي عَلَى عَمَلٍ أَنْتَفِعُ بِهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ اعْزِلِ الْأَذَى عَنْ طَرِيقِ الْمُسْلِمِينَ .
It was narrated that Abu Barzah Al-Aslami said: O Messenger of Allah! Tell me of an action by which I may benefit.' He said: 'Remove harmful things from the path of the Muslims.' میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! مجھے کوئی ایسا عمل بتائیے جس سے میں فائدہ اٹھاؤں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: مسلمانوں کے راستہ سے تکلیف دہ چیز کو ہٹا دیا کرو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3682

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ عَلَى الطَّرِيقِ غُصْنُ شَجَرَةٍ يُؤْذِي النَّاسَ،‏‏‏‏ فَأَمَاطَهَا رَجُلٌ،‏‏‏‏ فَأُدْخِلَ الْجَنَّةَ .
It was narrated from Abu Hurayrah that the Prophet(ﷺ) said: There was a branch of a tree that annoyed the people. A man removed it, so he was admitted to Paradise. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: راستے میں ایک درخت کی شاخ ( ٹہنی ) پڑی ہوئی تھی جس سے لوگوں کو تکلیف ہوتی تھی، ایک شخص نے اسے ہٹا دیا ( تاکہ مسافروں اور گزرنے والوں کو تکلیف نہ ہو ) اسی وجہ سے وہ جنت میں داخل کر دیا گیا ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3683

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا هِشَامُ بْنُ حَسَّانَ،‏‏‏‏ عَنْ وَاصِلٍ مَوْلَى أَبِي عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْيَحْيَى بْنِ عُقَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ يَعْمَرَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي ذَرٍّ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ عُرِضَتْ عَلَيَّ أُمَّتِي بِأَعْمَالِهَا حَسَنِهَا وَسَيِّئِهَا،‏‏‏‏ فَرَأَيْتُ فِي مَحَاسِنِ أَعْمَالِهَا الْأَذَى يُنَحَّى عَنِ الطَّرِيقِ،‏‏‏‏ وَرَأَيْتُ فِي سَيِّئِ أَعْمَالِهَا النُّخَاعَةَ فِي الْمَسْجِدِ لَا تُدْفَنُ .
It was narrated from Abu Dharr that the Prophet(ﷺ) said: My nation was shown to me with their good deeds and bad deeds. Among their good deeds I saw a harmful thing being removed from the road. And among their bad deeds I saw sputum in the mosque that had not been removed. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میری امت کے اچھے اور برے اعمال میرے سامنے پیش کیے گئے، تو میں نے ان میں سب سے بہتر عمل راستے سے تکلیف دہ چیز کے ہٹانے، اور سب سے برا عمل مسجد میں تھوکنے، اور اس پر مٹی نہ ڈالنے کو پایا ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3684

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ هِشَامٍ صَاحِبِ الدَّسْتُوَائِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيَّبِ،‏‏‏‏ عَنْ سَعْدِ بْنِ عُبَادَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَيُّ الصَّدَقَةِ أَفْضَلُ؟ قَالَ:‏‏‏‏ سَقْيُ الْمَاءِ .
It was narrated that Sad bin Ubadah said: I said: 'O Messenger of Allah, what charity is best?' He said: 'Giving water to drink.' میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! کون سا صدقہ افضل ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: پانی پلانا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3685

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ وَعَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ الرَّقَاشِيِّ،‏‏‏‏ عَنْأَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يَصُفُّ النَّاسُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ صُفُوفًا،‏‏‏‏ وَقَالَ ابْنُ نُمَيْرٍ:‏‏‏‏ أَهْلُ الْجَنَّةِ،‏‏‏‏ فَيَمُرُّ الرَّجُلُ مِنْ أَهْلِ النَّارِ عَلَى الرَّجُلِ،‏‏‏‏ فَيَقُولُ:‏‏‏‏ يَا فُلَانُ،‏‏‏‏ أَمَا تَذْكُرُ يَوْمَ اسْتَسْقَيْتَ فَسَقَيْتُكَ شَرْبَةً،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَيَشْفَعُ لَهُ،‏‏‏‏ وَيَمُرُّ الرَّجُلُ،‏‏‏‏ فَيَقُولُ:‏‏‏‏ أَمَا تَذْكُرُ يَوْمَ نَاوَلْتُكَ طَهُورًا،‏‏‏‏ فَيَشْفَعُ لَهُ ،‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ نُمَيْرٍ:‏‏‏‏ وَيَقُولُ:‏‏‏‏ يَا فُلَانُ،‏‏‏‏ أَمَا تَذْكُرُ يَوْمَ بَعَثْتَنِي فِي حَاجَةِ كَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ فَذَهَبْتُ لَكَ فَيَشْفَعُ لَهُ .
It was narrated from Anas bin Malik that the Messenger of Allah(ﷺ) said: On the Day of Resurrection, people will be lined up in rows, (one of the narrators) Ibn NUmair said: i.e., the people of Paradise, and a man from among the people of Hell will pass by a man (from the people of Paradise) and say: 'O so and so! Do you not remember the day when you asked for water and I gave you water to drink? So he will intercede for him. And another man will come and say: Do you not remember the day when I gave you water with which to purify yourself? and he will intercede for him. (In his narration, one of the narrators) Ibn NUmair said: And he will remember the day when you sent me to do such and such for you, and I went and did it for you?' and he will intercede for him. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: قیامت کے دن لوگوں کی صف بندی ہو گی ( ابن نمیر کی روایت میں ہے کہ اہل جنت کی صف بندی ہو گی ) پھر ایک جہنمی ایک جنتی کے پاس گزرے گا اور اس سے کہے گا: اے فلاں! تمہیں یاد نہیں کہ ایک دن تم نے پانی مانگا تھا اور میں نے تم کو ایک گھونٹ پانی پلایا تھا؟ ( وہ کہے گا: ہاں، یاد ہے ) وہ جنتی اس بات پر اس کی سفارش کرے گا، پھر دوسرا جہنمی ادھر سے گزرے گا، اور اہل جنت میں سے ایک شخص سے کہے گا: تمہیں یاد نہیں کہ میں نے ایک دن تمہیں طہارت و وضو کے لیے پانی دیا تھا؟ تو وہ بھی اس کی سفارش کرے گا۔ ابن نمیر نے اپنی روایت میں بیان کیا کہ وہ شخص کہے گا: اے فلاں! تمہیں یاد نہیں کہ تم نے مجھے فلاں اور فلاں کام کے لیے بھیجا تھا، اور میں نے اسے پورا کیا تھا؟ تو وہ اس بات پر اس کی سفارش کرے گا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3686

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ إِسْحَاق،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ مَالِكِ بْنِ جُعْشُمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ عَمِّهِ سُرَاقَةَ بْنِ جُعْشُمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ ضَالَّةِ الْإِبِلِ تَغْشَى حِيَاضِي قَدْ لُطْتُهَا لِإِبِلِي،‏‏‏‏ فَهَلْ لِي مِنْ أَجْرٍ إِنْ سَقَيْتُهَا؟ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ فِي كُلِّ ذَاتِ كَبِدٍ حَرَّى أَجْرٌ .
It was narrated that Suraqah bin Ju'shum said: I asked the Messenger of Allah(ﷺ) about a lost camel that comes to my cisterns that I have prepared for my own camels - will I be rewarded if I give it some water to drink? He said: Yes, in every living being there is reward.' میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے گمشدہ اونٹوں کے متعلق پوچھا کہ وہ میرے حوض پر آتے ہیں جس کو میں نے اپنے اونٹوں کے لیے تیار کیا ہے، اگر میں ان اونٹوں کو پانی پینے دوں تو کیا اس کا بھی اجر مجھے ملے گا؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ہاں! ہر کلیجہ والے جانور کے جس کو پیاس لگتی ہے، پانی پلانے میں ثواب ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3687

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ تَمِيمِ بْنِ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ هِلَالٍ الْعَبْسِيِّ،‏‏‏‏ عَنْجَرِيرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْبَجَلِيِّ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنْ يُحْرَمْ الرِّفْقَ يُحْرَمْ الْخَيْرَ .
It was narrated from Jarir bin Abdullah Al-Bajali that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Whoever is deprived of gentleness, he is deprived of goodness. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص نرمی ( کی خصلت ) سے محروم کر دیا جاتا ہے، وہ ہر بھلائی سے محروم کر دیا جاتا ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3688

حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ حَفْصٍ الْأُبُلِّيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ عَيَّاشٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ رَفِيقٌ يُحِبُّ الرِّفْقَ،‏‏‏‏ وَيُعْطِي عَلَيْهِ مَا لَا يُعْطِي عَلَى الْعُنْفِ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Allah is Gentle and loves gentleness, and He grants reward for it that He does not grant for harshness. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بیشک اللہ تعالیٰ مہربان ہے، اور مہربانی اور نرمی کرنے کو پسند فرماتا ہے، اور نرمی پر وہ ثواب دیتا ہے جو سختی پر نہیں دیتا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3689

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مُصْعَبٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَوْزَاعِيِّ . ح حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَوْزَاعِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عُرْوَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ رَفِيقٌ يُحِبُّ الرِّفْقَ فِي الْأَمْرِ كُلِّهِ .
It was narrated from Aishah that the Prophet(ﷺ) said: Allah is Gentle and loves gentleness in all things. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بیشک اللہ نرمی کرنے والا ہے اور سارے کاموں میں نرمی کو پسند کرتا ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3690

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَعْمَشُ،‏‏‏‏ عَنْ الْمَعْرُورِ بْنِ سُوَيْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي ذَرٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِخْوَانُكُمْ جَعَلَهُمُ اللَّهُ تَحْتَ أَيْدِيكُمْ،‏‏‏‏ فَأَطْعِمُوهُمْ مِمَّا تَأْكُلُونَ،‏‏‏‏ وَأَلْبِسُوهُمْ مِمَّا تَلْبَسُونَ،‏‏‏‏ وَلَا تُكَلِّفُوهُمْ مَا يَغْلِبُهُمْ،‏‏‏‏ فَإِنْ كَلَّفْتُمُوهُمْ فَأَعِينُوهُمْ .
It was narrated that Abu Dhar said: The Messenger of Allah said: '(Slaves are) your brothers whom Allah has put under your control, so feed them with the same food that you eat, clothe them with the same clothes you wear, and do not burden them with so much that htey are overwhelmed; if you do burden them, then help them. رسول اللہ صلی اللہعلیہ وسلم نے فرمایا: ( حقیقت میں لونڈی اور غلام ) تمہارے بھائی ہیں، جنہیں اللہ تعالیٰ نے تمہارے ماتحت کیا ہے، اس لیے جو تم کھاتے ہو وہ انہیں بھی کھلاؤ، اور جو تم پہنتے ہو وہ انہیں بھی پہناؤ، اور انہیں ایسے کام کی تکلیف نہ دو جو ان کی قوت و طاقت سے باہر ہو، اور اگر کبھی ایسا کام ان پر ڈالو تو تم بھی اس میں شریک رہ کر ان کی مدد کرو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3691

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ وَعَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْحَاق بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ مُغِيرَةَ بْنِ مُسْلِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ فَرْقَدٍ السَّبَخِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ مُرَّةَ الطَّيِّبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي بَكْرٍ الصِّدِّيقِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا يَدْخُلُ الْجَنَّةَ سَيِّئُ الْمَلَكَةِ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ أَلَيْسَ أَخْبَرْتَنَا أَنَّ هَذِهِ الْأُمَّةَ أَكْثَرُ الْأُمَمِ مَمْلُوكِينَ وَيَتَامَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ فَأَكْرِمُوهُمْ كَكَرَامَةِ أَوْلَادِكُمْ،‏‏‏‏ وَأَطْعِمُوهُمْ مِمَّا تَأْكُلُونَ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ فَمَا يَنْفَعُنَا فِي الدُّنْيَا؟ قَالَ:‏‏‏‏ فَرَسٌ تَرْتَبِطُهُ تُقَاتِلُ عَلَيْهِ فِي سَبِيلِ اللَّهِ مَمْلُوكُكَ يَكْفِيكَ،‏‏‏‏ فَإِذَا صَلَّى فَهُوَ أَخُوكَ .
It was narrated from Abu Bakr Siddiq(RA) that the Messenger of Allah(ﷺ) said: No person who mistreats his slave will enter Paradise. They said: O Messenger of Allah, did you not tell us that this nation will have more slaves and orphans than any other nation? He said: Yes, so be as kind to them as you are to your own children, and feed them with the same food that you eat. They said: What will benefit us in this world? He said: A horse that is kept ready for fighting in the cause of Allah, and your slave to take care of you, and if he performs prayer, then he is your brother(in Islam). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بدخلق شخص جو اپنے غلام اور لونڈی کے ساتھ بدخلقی سے پیش آتا ہو، جنت میں داخل نہ ہو گا ، لوگوں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! کیا آپ نے ہمیں نہیں بتایا کہ اس امت کے اکثر افراد غلام اور یتیم ہوں گے؟ ۱؎ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کیوں نہیں؟ لیکن تم ان کی ایسی ہی عزت و تکریم کرو جیسی اپنی اولاد کی کرتے ہو، اور ان کو وہی کھلاؤ جو تم خود کھاتے ہو ، پھر لوگوں نے عرض کیا: ہمارے لیے دنیا میں کون سی چیز نفع بخش ہو گی؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:: گھوڑا جسے تم جہاد کے لیے باندھ کر رکھتے ہو، پھر اس پر اللہ کی راہ میں جنگ کرتے ہو ( اس کی جگہ ) تمہارا غلام تمہارے لیے کافی ہے، اور جب نماز پڑھے تو وہ تمہارا بھائی ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3692

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ وَابْنُ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ،‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ،‏‏‏‏ لَا تَدْخُلُوا الْجَنَّةَ حَتَّى تُؤْمِنُوا،‏‏‏‏ وَلَا تُؤْمِنُوا حَتَّى تَحَابُّوا،‏‏‏‏ أَوَلَا أَدُلُّكُمْ عَلَى شَيْءٍ إِذَا فَعَلْتُمُوهُ تَحَابَبْتُمْ،‏‏‏‏ أَفْشُوا السَّلَامَ بَيْنَكُمْ .
It was narrated from Abu Hurairah(RA) that the Messenger of Allah(ﷺ) said: By the One in Whose Hand is my soul, you will not enter Paradise until you believe, and you will not believe until you love one another. Shall I not tell you of something which, if you do it, you will love one another? Spread (the greeting of) peace among yourselves.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے، تم جنت میں داخل نہیں ہو سکتے جب تک کہ تم مومن نہ بن جاؤ، اور اس وقت تک مومن نہیں ہو سکتے ہو جب تک کہ آپس میں محبت نہ کرنے لگو، کیا میں تمہیں وہ چیز نہ بتاؤں کہ اگر تم اسے کرنے لگو تو تم میں باہمی محبت پیدا ہو جائے ( وہ یہ کہ ) آپس میں سلام کو عام کرو اور پھیلاؤ ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3693

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ عَيَّاشٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي أُمَامَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَمَرَنَا نَبِيُّنَا صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نُفْشِيَ السَّلَامَ .
It was narrated that Abu Umamah said: Our Prophet(ﷺ) commanded us to spread (the greeting of) peace. ہمارے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں حکم دیا ہے کہ ہم سلام کو عام کریں اور پھیلائیں ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3694

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ اعْبُدُوا الرَّحْمَنَ،‏‏‏‏ وَأَفْشُوا السَّلَامَ .
It was narrated from Abdullah bin 'Amr that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Worship the Most Merciful and spread (the greeting of) peace.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: رحمن کی عبادت کرو، اور سلام کو عام کرو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3695

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ عُمَرَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ أَبِي سَعِيدٍ الْمَقْبُرِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَجُلًا دَخَلَ الْمَسْجِدَ،‏‏‏‏ وَرَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ جَالِسٌ فِي نَاحِيَةِ الْمَسْجِدِ،‏‏‏‏ فَصَلّ ثُمَّ جَاءَ فَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ وَعَلَيْكَ السَّلَامُ .
It was narrated from Abu Hurairah that: a man entered the masjid, and the Messenger of Allah(ﷺ) was sitting in a corner of the mosque. He prayed, then he came and greeted him with Salam(peace), and he said: 'Wa 'alaikassalm. ایک شخص مسجد نبوی میں داخل ہوا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس وقت مسجد کے ایک گوشے میں بیٹھے ہوئے تھے تو اس نے نماز پڑھی، پھر آپ کے پاس آ کر سلام کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «وعلیک السلام» ( اور تم پر بھی سلامتی ہو ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3696

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحِيمِ بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ زَكَرِيَّا،‏‏‏‏ عَنْ الشَّعْبِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ،‏‏‏‏ أَنَّعَائِشَةَ حَدَّثَتْهُ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ لَهَا:‏‏‏‏ إِنَّ جِبْرَائِيلَ يَقْرَأُ عَلَيْكِ السَّلَامَ ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ وَعَلَيْهِ السَّلَامُ وَرَحْمَةُ اللَّهِ.
It was narrated from Abu Salamah that 'Aishah told him that the Messenger of Allah(ﷺ) said to her: Jibrail send (greetings of) Salam to you. She said: Wa 'alahisalam wa rahmatullah (and upon him be peace and mercy of Allah). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا: جبرائیل علیہ السلام تمہیں سلام کہتے ہیں ( یہ سن کر ) انہوں نے جواب میں کہا: «وعليه السلام ورحمة الله» ( اور ان پر بھی سلامتی اور اللہ کی رحمت ہو ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3697

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ بِشْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَال رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا سَلَّمَ عَلَيْكُمْ أَحَدٌ مِنْ أَهْلِ الْكِتَابِ،‏‏‏‏ فَقُولُوا وَعَلَيْكُمْ .
It was narrated that Anas bin Malik said the Messenger of Allah(ﷺ) said : When any of the People of the Book greets you with Salam (peace), then say, Wa 'alaikum(and also upon you). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب اہل کتاب ( یہود و نصاریٰ ) میں سے کوئی تمہیں سلام کرے تو تم ( جواب میں صرف ) «وعليكم» کہو ( یعنی تم پر بھی تمہاری نیت کے مطابق ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3698

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ مُسْلِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَسْرُوقٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ أَنَّهُ أَتَى النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَاسٌ مِنْ الْيَهُودِ،‏‏‏‏ فَقَالُوا:‏‏‏‏ السَّامُ عَلَيْكَ يَا أَبَا الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ وَعَلَيْكُمْ .
It was narrated from Aishah that some of the Jews came to the Prophet(ﷺ) and said: Assam o alaika (death be upon you), O Abul-Qasim! He said: Wa 'alayikum (and also upon you). نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس کچھ یہودی آئے، اور کہا: «السام عليك يا أبا القاسم» اے ابوالقاسم تم پر موت ہو ، تو آپ نے ( جواب میں صرف ) فرمایا: «وعليكم» اور تم پر بھی ہو۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3699

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِسْحَاق،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَرْثَدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْيَزَنِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي عَبْدِ الرَّحْمَنِ الْجُهَنِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنِّي رَاكِبٌ غَدًا إِلَى الْيَهُودِ،‏‏‏‏ فَلَا تَبْدَءُوهُمْ بِالسَّلَامِ،‏‏‏‏ فَإِذَا سَلَّمُوا عَلَيْكُمْ،‏‏‏‏ فَقُولُوا وَعَلَيْكُمْ .
It was narrated from Abu 'Abdur-Rahman Al Juhani that the Messenger of Allah(ﷺ) said: I am riding to the Jews tomorrow. Do not initiate the greeting with them, and if they greet you, then say: Wa 'alaikum (and also upon you) . رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں کل سوار ہو کر یہودیوں کے پاس جاؤں گا، تو تم خود انہیں پہلے سلام نہ کرنا، اور جب وہ تمہیں سلام کریں تو تم جواب میں «وعليكم» کہو ( یعنی تم پر بھی تمہاری نیت کے مطابق ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3700

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو خَالِدٍ الْأَحْمَرُ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَتَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَنَحْنُ صِبْيَانٌ،‏‏‏‏ فَسَلَّمَ عَلَيْنَا .
It was narrated that Anas said: The Messenger of Allah(ﷺ) came to us, and we were young boys, and he greeted us with (the greeting of) peace . رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے پاس تشریف لائے، ( اس وقت ) ہم بچے تھے تو آپ نے ہمیں سلام کیا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3701

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي حُسَيْنٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعَهُ مِنْ شَهْرِ بْنِ حَوْشَبٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ أَخْبَرَتْهُأَسْمَاءُ بِنْتُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ مَرَّ عَلَيْنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي نِسْوَةٍ،‏‏‏‏ فَسَلَّمَ عَلَيْنَا
Asma bint Yazid said: The Messenger of Allah(ﷺ) passed by us, among (a group of) women, and he greeted us with (the greeting of) peace. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہم عورتوں کے پاس گزرے تو آپ نے ہمیں سلام کیا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3702

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ جَرِيرِ بْنِ حَازِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ حَنْظَلَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ السَّدُوسِيِّ،‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْنَا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَيَنْحَنِي بَعْضُنَا لِبَعْضٍ؟ قَالَ:‏‏‏‏ لَا ،‏‏‏‏ قُلْنَا:‏‏‏‏ أَيُعَانِقُ بَعْضُنَا بَعْضًا؟ قَالَ:‏‏‏‏ لَا وَلَكِنْ تَصَافَحُوا .
It was narrated that Anas bin Malik said: O Messenger of Allah! Should we bow to one another? He said: No. We said: Should we embrace one another? He said: No, but shake hands with one another. ہم نے عرض کیا: اللہ کے رسول! کیا ( ملاقات کے وقت ) ہم ایک دوسرے سے جھک کر ملیں؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نہیں ، پھر ہم نے عرض کیا: کیا ہم ایک دوسرے سے معانقہ کریں ( گلے ملیں ) ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: نہیں، بلکہ مصافحہ کیا کرو ( ہاتھ سے ہاتھ ملاؤ ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3703

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو خَالِدٍ الْأَحْمَرُ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ نُمَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَجْلَحِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي إِسْحَاق،‏‏‏‏ عَنْالْبَرَاءِ بْنِ عَازِبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَال رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَا مِنْ مُسْلِمَيْنِ يَلْتَقِيَانِ فَيَتَصَافَحَانِ،‏‏‏‏ إِلَّا غُفِرَ لَهُمَا قَبْلَ أَنْ يَتَفَرَّقَا .
It was narrated from Bara bin Azib that the Messenger of Allah(ﷺ) said: There are no two Muslims who meet and shake hands, but they will be forgiven before they part. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب دو مسلمان آپس میں ایک دوسرے سے ملتے اور مصافحہ کرتے ( ہاتھ ملاتے ) ہیں، تو ان کے جدا ہونے سے پہلے ان کی مغفرت کر دی جاتی ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3704

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ أَبِي زِيَادٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي لَيْلَى،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَبَّلْنَا يَدَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ .
It was narrated that Ibn Umar said: We kissed the hand of the Prophet(ﷺ). ہم نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ہاتھ چوما۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3705

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ إِدْرِيسَ،‏‏‏‏ وَغُنْدَرٌ،‏‏‏‏ وَأَبُو أُسَامَةَ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ مُرَّةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ صَفْوَانَ بْنِ عَسَّالٍ،‏‏‏‏ أَنَّ قَوْمًا مِنْ الْيَهُودِ قَبَّلُوا يَدَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَرِجْلَيْهِ .
It was narrated from Safwan bin 'Assal that: Some people among the Jews kissed the hands and feet of the Prophet(ﷺ). یہود کے کچھ لوگوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ہاتھ اور پاؤں چومے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3706

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا دَاوُدُ بْنُ أَبِي هِنْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي نَضْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّ أَبَا مُوسَى اسْتَأْذَنَ عَلَى عُمَرَ ثَلَاثًا،‏‏‏‏ فَلَمْ يُؤْذَنْ لَهُ فَانْصَرَفَ،‏‏‏‏ فَأَرْسَلَ إِلَيْهِ عُمَرُ مَا رَدَّكَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ اسْتَأْذَنْتُ الِاسْتِئْذَانَ الَّذِي أَمَرَنَا بِهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ثَلَاثًا،‏‏‏‏ فَإِنْ أُذِنَ لَنَا دَخَلْنَا،‏‏‏‏ وَإِنْ لَمْ يُؤْذَنْ لَنَا رَجَعْنَا ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَتَأْتِيَنِّي عَلَى هَذَا بِبَيِّنَةٍ أَوْ لَأَفْعَلَنَّ،‏‏‏‏ فَأَتَى مَجْلِسَ قَوْمِهِ فَنَاشَدَهُمْ،‏‏‏‏ فَشَهِدُوا لَهُ فَخَلَّى سَبِيلَهُ.
It was narrated from Abu Saeed Khudri that Abu Musa asked permission to enter upon 'Umar three times, and he did not give him permission, so he went away.'Umar sent word to him saying: Why did you go back? He said: I asked permission to enter three times, as the Messenger of Allah(ﷺ) enjoined upon us, then if we are given permission we should enter, otherwise we should go back. He said: You should bring me proof of that, or else! Then he came to a gathering of his people and asked them to swear by Allah concerning that, and they did so, so he let him go. ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ نے تین مرتبہ عمر رضی اللہ عنہ سے ( اندر آنے کی ) اجازت طلب کی لیکن انہیں اجازت نہیں دی گئی، تو وہ لوٹ گئے، عمر رضی اللہ عنہ نے ان کے پیچھے ایک آدمی بھیجا اور بلا کر پوچھا کہ آپ واپس کیوں چلے گئے تھے؟ تو انہوں نے کہا کہ ہم نے ویسے ہی تین مرتبہ اجازت طلب کی جیسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں حکم دیا ہے، اگر ہمیں تین دفعہ میں اجازت دے دی جائے تو اندر چلے جائیں ورنہ لوٹ جائیں، تب انہوں نے کہا: آپ اس حدیث پر گواہ لائیں ورنہ میں آپ کے ساتھ ایسا ایسا کروں گا یعنی سزا دوں گا، تو ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ اپنی قوم کی مجلس میں آئے، اور ان کو قسم دی ( کہ اگر کسی نے یہ تین مرتبہ اجازت طلب کرنے والی حدیث سنی ہو تو میرے ساتھ اس کی گواہی دے ) ان لوگوں نے ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ کے ساتھ جا کر گواہی دی تب عمر رضی اللہ عنہ نے ان کو چھوڑا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3707

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحِيمِ بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ وَاصِلِ بْنِ السَّائِبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَوْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي أَيُّوبَ الْأَنْصَارِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْنَا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ هَذَا السَّلَامُ،‏‏‏‏ فَمَا الِاسْتِئنَاسُ؟ قَالَ:‏‏‏‏ يَتَكَلَّمُ الرَّجُلُ تَسْبِيحَةً،‏‏‏‏ وَتَكْبِيرَةً،‏‏‏‏ وَتَحْمِيدَةً،‏‏‏‏ وَيَتَنَحْنَحُ،‏‏‏‏ وَيُؤْذِنُ أَهْلَ الْبَيْتِ .
It was narrated that Abu Ayyub Ansari said: We said: 'O Messenger of Allah(ﷺ), (we know) this (greeting of) Salam, but what does seeking permission to enter mean?' He said: 'It means a man saying SubhanAllah, and Allahu Akbar and Al Hamdulillah, and clearing his throat, announcing his arrival to the people in the house. ہم نے عرض کیا: اللہ کے رسول! سلام تو ہمیں معلوم ہے، لیکن «استئذان» کیا ہے؟ ( یعنی ہم اجازت کیسے طلب کریں ) آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «استئذان» یہ ہے کہ آدمی تسبیح، تکبیر اور تحمید ( یعنی «سبحان الله، الله أكبر، الحمد لله» کہہ کر یا کھنکار کر ) سے گھر والوں کو خبردار کرے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3708

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ عَيَّاشٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُغِيرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَارِثِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ نُجَيٍّ،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ لِي مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مُدْخَلَانِ،‏‏‏‏ مُدْخَلٌ بِاللَّيْلِ،‏‏‏‏ وَمُدْخَلٌ بِالنَّهَارِ،‏‏‏‏ فَكُنْتُ إِذَا أَتَيْتُهُ وَهُوَ يُصَلِّي،‏‏‏‏ يَتَنَحْنَحُ لِي .
It was narrated that Ali said: I had two times of visiting the Messenger of Allah(ﷺ), at night and during the day. If I came to him when he was praying, he would clear his throat (to let me know he was praying). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس جانے کے لیے میرے دو وقت مقرر تھے: ایک رات میں، ایک دن میں، تو میں جب آتا اور آپ نماز کی حالت میں ہوتے تو آپ میرے لیے کھنکار دیتے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3709

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْمُنْكَدِرِ،‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ اسْتَأْذَنْتُ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا؟ ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ أَنَا،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَا أَنَا .
It was narrated that Jabir said: I asked the Prophet(ﷺ) for permission to enter, and he said: 'Who is that?' I said: 'Me'. The Prophet(ﷺ) said Me, me?! میں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے ( اندر آنے کی ) اجازت طلب کی تو آپ نے ( مکان کے اندر سے ) پوچھا: کون ہو ؟ میں نے عرض کیا: میں ، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میں، میں کیا؟ ( نام لو ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3710

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عِيسَى بْنُ يُونُسَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُسْلِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ سَابِطٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ كَيْفَ أَصْبَحْتَ يَا رَسُولَ اللَّهِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ بِخَيْرٍ،‏‏‏‏ مِنْ رَجُلٍ لَمْ يُصْبِحْ صَائِمًا،‏‏‏‏ وَلَمْ يَعُدْ سَقِيمًا .
It was narrated that Jabir said: I said: 'How are you this morning, O Messenger of Allah?' He said: 'I am better than one who did not get up fasting, and who did not visit and sick.' میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! آپ نے صبح کیسے کی؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے نہ آج روزہ رکھا، نہ بیمار کی عیادت ( مزاج پرسی ) کی خیریت سے ہوں ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3711

حَدَّثَنَا أَبُو إِسْحَاق الْهَرَوِيُّ إِبْرَاهِيمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ حَاتِمٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ عُثْمَانَ بْنِ إِسْحَاق بْنِ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنِي جَدِّي أَبُو أُمِّي مَالِكُ بْنُ حَمْزَةَ بْنِ أَبِي أُسَيْدٍ السَّاعِدِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ أَبِي أُسَيْدٍ السَّاعِدِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَال رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لِلْعَبَّاسِ بْنِ عَبْدِ الْمُطَّلِبِ:‏‏‏‏ وَدَخَلَ عَلَيْهِمْ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ السَّلَامُ عَلَيْكُمْ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ وَعَلَيْكَ السَّلَامُ وَرَحْمَةُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَيْفَ أَصْبَحْتُمْ؟ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ بِخَيْرٍ نَحْمَدُ اللَّهَ،‏‏‏‏ فَكَيْفَ أَصْبَحْتَ بِأَبِينَا وَأُمِّنَا يَا رَسُولَ اللَّهِ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أَصْبَحْتُ بِخَيْرٍ أَحْمَدُ اللَّهَ .
It was narrated that Abu Usaid Sa'idi said: The Messenger of Allah(ﷺ) said to Abbas ibn Abdul Muttalib, when he entered upon them: Assalamu alaikum'. They said: 'Wa alaikas salamu wa ahmatullahi wa barakatuhu.' He said: 'How are you this morning?' They said: ' Well, praise is to Allah. And how are you this morning, may our fathers and mothers be ransomed for you, O Messenger of Allah?!' He said: 'I am well, praise is to Allah.' (Daif) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب عباس بن عبدالمطلب رضی اللہ عنہ کے یہاں تشریف لے گئے تو فرمایا: «السلام عليكم» انہوں نے ( جواب میں ) «وعليك السلام ورحمة الله وبركاته» کہا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «كيف أصبحتم» آپ نے صبح کیسے کی ؟ جواب دیا: «بخير نحمد الله» خیریت سے کی اس پر ہم اللہ کا شکر ادا کرتے ہیں، لیکن آپ نے کیسے کی؟ ہمارے ماں باپ آپ پر قربان ہوں، اللہ کے رسول! آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: «الحمد لله» میں نے بھی خیریت کے ساتھ صبح کی ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3712

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا سَعِيدُ بْنُ مَسْلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَجْلَانَ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا أَتَاكُمْ كَرِيمُ قَوْمٍ،‏‏‏‏ فَأَكْرِمُوهُ .
It was narrated from Ibn Umar that the Messenger of Allah(ﷺ) said: If there comes to you a man who is respected among his own people, then honor him. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تمہارے پاس کسی قوم کا کوئی معزز آدمی آئے تو تم اس کا احترام کرو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3713

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ هَارُونَ،‏‏‏‏ عَنْ سُلَيْمَانَ التَّيْمِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ عَطَسَ رَجُلَانِ عِنْدَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَشَمَّتَ أَحَدَهُمَا أَوْ سَمَّتَ وَلَمْ يُشَمِّتِ الْآخَرَ،‏‏‏‏ فَقِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَطَسَ عِنْدَكَ رَجُلَانِ،‏‏‏‏ فَشَمَّتَّ أَحَدَهُمَا وَلَمْ تُشَمِّتِ الْآخَرَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ هَذَا حَمِدَ اللَّهَ،‏‏‏‏ وَإِنَّ هَذَا لَمْ يَحْمَدِ اللَّهَ .
It was narrated that Anas bin Malik said: Two men sneezed in he presence of the Prophet(ﷺ) and he replied (said: YarhamukAllah; may Allah have mercy on you') to one and not to the other. It was said: 'O Messenger of Allah(ﷺ), two men sneezed in your presence and you replied to one and not to the other?' He said: 'This one praised Allah(said Al-Hamdulillah fter sneezing) but that one did not.' نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے دو آدمیوں نے چھینکا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک کے جواب میں «يرحمك الله» اللہ تم پر رحم کرے کہا، اور دوسرے کو جواب نہیں دیا، تو عرض کیا گیا: اللہ کے رسول! آپ کے سامنے دو آدمیوں نے چھینکا، آپ نے ایک کو جواب دیا دوسرے کو نہیں دیا، اس کا سبب کیا ہے؟ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ایک نے ( چھینکنے کے بعد ) «الحمد لله» کہا، اور دوسرے نے نہیں کہا ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3714

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ عِكْرِمَةَ بْنِ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ عَنْ إِيَاسِ بْنِ سَلَمَةَ بْنِ الْأَكْوَعِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يُشَمَّتُ الْعَاطِسُ ثَلَاثًا فَمَا زَادَ، ‏‏‏‏‏‏فَهُوَ مَزْكُومٌ .
It was narrated from Ilyas bin Salamah bin Akwa' that his father said: The Messenger of Allah(ﷺ) said: 'The one who sneezes may be responded to three times; if he sneezes more than that, he has a cold.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: چھینکنے والے کو تین مرتبہ جواب دیا جائے، جو اس سے زیادہ چھینکے تو اسے زکام ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3715

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُسْهِرٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي لَيْلَى،‏‏‏‏ عَنْ عِيسَى بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي لَيْلَى،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا عَطَسَ أَحَدُكُمْ،‏‏‏‏ فَلْيَقُلْ:‏‏‏‏ الْحَمْدُ لِلَّهِ،‏‏‏‏ وَلْيَرُدَّ عَلَيْهِ مَنْ حَوْلَهُ يَرْحَمُكَ اللَّهُ،‏‏‏‏ وَلْيَرُدَّ عَلَيْهِمْ يَهْدِيكُمُ اللَّهُ وَيُصْلِحُ بَالَكُمْ .
It was narrated from Ali that the Messenger of Allah(ﷺ) said: If anyone of you sneezes, let him say: Alhamdulillah (praise be to Allah). Those around him should respond by saying: Yarhamkullah (may Allah have mercy on you). And he should respond by saying: Yahdikum Allah wa yuslaha balakum (may Allah Guide you and set right your state). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کسی کو چھینک آئے تو «الحمد لله» کہے، اس کے پاس موجود لوگ«يرحمك الله» کہیں، پھر چھینکنے والا ان کو جواب دے «يهديكم الله ويصلح بالكم» اللہ تمہیں ہدایت دے، اور تمہاری حالت درست کرے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3716

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي يَحْيَى الطَّوِيلِ رَجُلٌ مِنْ أَهْلُ الْكُوفَةِ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدٍ الْعَمِّيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ إِذَا لَقِيَ الرَّجُلَ فَكَلَّمَهُ،‏‏‏‏ لَمْ يَصْرِفْ وَجْهَهُ عَنْهُ حَتَّى يَكُونَ هُوَ الَّذِي يَنْصَرِفُ،‏‏‏‏ وَإِذَا صَافَحَهُ لَمْ يَنْزِعْ يَدَهُ مِنْ يَدِهِ حَتَّى يَكُونَ هُوَ الَّذِي يَنْزِعُهَا،‏‏‏‏ وَلَمْ يُرَ مُتَقَدِّمًا بِرُكْبَتَيْهِ جَلِيسًا لَهُ قَطُّ .
It was narrated that Anas bin Malik said: Whenever the Prophet(ﷺ) met a man, he would speak to him, and would not tun away until he (the other man) was the one who turned away. And if he shook hands with him, he would not withdraw his hand until he (the other man) withdrew his hand. And he was never seen sitting with his knees ahead of the knees of the one who was sitting next to him. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی جب کسی شخص سے ملاقات ہوتی اور آپ اس سے بات کرتے تو اس وقت تک منہ نہ پھیرتے جب تک وہ خود نہ پھیر لیتا، اور جب آپ کسی سے مصافحہ کرتے تو اس وقت تک ہاتھ نہ چھوڑتے جب تک کہ وہ خود نہ چھوڑ دیتا، اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے کسی ساتھی کے سامنے کبھی پاؤں نہیں پھیلایا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3717

حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ رَافِعٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا جَرِيرٌ،‏‏‏‏ عَنْ سُهَيْلِ بْنِ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِذَا قَامَ أَحَدُكُمْ عَنْ مَجْلِسِهِ ثُمَّ رَجَعَ،‏‏‏‏ فَهُوَ أَحَقُّ بِهِ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet(ﷺ) said: When one of you gets up from his spot, then comes back, he has more right to it. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کوئی شخص اپنی جگہ سے اٹھ کر چلا جائے، پھر واپس آئے تو وہ اپنی جگہ ( پر بیٹھنے ) کا زیادہ حقدار ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3718

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ مِينَاءَ،‏‏‏‏ عَنْ جُودَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنِ اعْتَذَرَ إِلَى أَخِيهِ بِمَعْذِرَةٍ فَلَمْ يَقْبَلْهَا،‏‏‏‏ كَانَ عَلَيْهِ مِثْلُ خَطِيئَةِ صَاحِبِ مَكْسٍ ،‏‏‏‏
It was narrated from Jawdan that the Messenger of Allah(ﷺ) said: If a man makes an excuse to his bother and he does not accept it, he will bear a burden of sin like that of the tax-collector. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جو شخص اپنے بھائی سے معذرت کرے، اور پھر وہ اسے قبول نہ کرے تو اسے اتنا ہی گناہ ہو گا جتنا محصول ( ٹیکس ) وصول کرنے والے کو اس کی خطا پر ہوتا ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3719

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ زَمْعَةَ بْنِ صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ وَهْبِ بْنِ عَبْدِ بْنِ زَمْعَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ . ح حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا زَمْعَةُ بْنُ صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ وَهْبِ بْنِ زَمْعَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ خَرَجَ أَبُو بَكْرٍ فِي تِجَارَةٍ إِلَى بُصْرَى قَبْلَ مَوْتِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِعَامٍ،‏‏‏‏ وَمَعَهُ نُعَيْمَانُ،‏‏‏‏ وَسُوَيْبِطُ بْنُ حَرْمَلَةَ،‏‏‏‏ وَكَانَا شَهِدَا بَدْرًا،‏‏‏‏ وَكَانَ نُعَيْمَانُ عَلَى الزَّادِ،‏‏‏‏ وَكَانَ سُوَيْبِطُ رَجُلًا مَزَّاحًا،‏‏‏‏ فَقَالَ لِنُعَيْمَانَ:‏‏‏‏ أَطْعِمْنِي،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَتَّى يَجِيءَ أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَلَأُغِيظَنَّكَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَمَرُّوا بِقَوْمٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ لَهُمْ سُوَيْبِطٌ:‏‏‏‏ تَشْتَرُونَ مِنِّي عَبْدًا لِي،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّهُ عَبْدٌ لَهُ كَلَامٌ وَهُوَ قَائِلٌ لَكُمْ إِنِّي حُرٌّ،‏‏‏‏ فَإِنْ كُنْتُمْ إِذَا قَالَ لَكُمْ هَذِهِ الْمَقَالَةَ،‏‏‏‏ تَرَكْتُمُوهُ فَلَا تُفْسِدُوا عَلَيَّ عَبْدِي،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ بَلْ نَشْتَرِيهِ مِنْكَ،‏‏‏‏ فَاشْتَرَوْهُ مِنْهُ بِعَشْرِ قَلَائِصَ،‏‏‏‏ ثُمَّ أَتَوْهُ فَوَضَعُوا فِي عُنُقِهِ عِمَامَةً أَوْ حَبْلًا،‏‏‏‏ فَقَالَ نُعَيْمَانُ:‏‏‏‏ إِنَّ هَذَا يَسْتَهْزِئُ بِكُمْ وَإِنِّي حُرٌّ لَسْتُ بِعَبْدٍ،‏‏‏‏ فَقَالُوا:‏‏‏‏ قَدْ أَخْبَرَنَا خَبَرَكَ،‏‏‏‏ فَانْطَلَقُوا بِهِ فَجَاءَ أَبُو بَكْرٍ فَأَخْبَرُوهُ بِذَلِكَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَاتَّبَعَ الْقَوْمَ وَرَدَّ عَلَيْهِمُ الْقَلَائِصَ،‏‏‏‏ وَأَخَذَ نُعَيْمَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَلَمَّا قَدِمُوا عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَخْبَرُوهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَضَحِكَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَصْحَابُهُ مِنْهُ حَوْلًا .
It was narrated that Umm Salamah said: Abu Bakr went out to trade in Busra, one year before the Prophet (ﷺ) died, and with him were Nu`aiman and Suwaibit the sons of Harmalah, who had been present at Badr. Nu`aiman was in charge of the provisions, and Suwaibit was a man who joked a lot. He said to Nu`aiman: 'Feed me'. He said: 'Not until Abu Bakr comes'. He said: 'Then I will have to annoy you'. Then they passed by some people, and Suwaibit said to them: 'Will you buy a slave from me?' They said: 'Yes'. He said 'He is a slave who talks a lot and he will tell you, I am a free man . If you are going to let him go when he says that to you, do not bother buying him.' They said: 'We will buy him from you.' So they bought him from him in return for ten young she-camels, then they brought him and tied a turban or a rope around his neck. Nu`aiman said: 'This man is making fun of you. I am a free man, not a slave.' They said: 'He has already told us about you; and they took him off.' Then Abu Bakr came and he (Suwaibit) told him about that. So he followed those people and returned their camels to them, and took Nu`aiman back. When they came to the Prophet (ﷺ) they told him what had happened, and the Prophet (ﷺ) and his companions laughed about it for a year. ابوبکر رضی اللہ عنہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات سے ایک سال پہلے بصریٰ تجارت کے لیے گئے، ان کے ساتھ نعیمان اور سویبط بن حرملہ ( رضی اللہ عنہما ) بھی تھے، یہ دونوں بدری صحابی ہیں، نعیمان رضی اللہ عنہ کھانے پینے کی چیزوں پر متعین تھے، سویبط رضی اللہ عنہ ایک پر مذاق آدمی تھے، انہوں نے نعیمان رضی اللہ عنہ سے کہا: مجھے کھانا کھلاؤ، نعیمان رضی اللہ عنہ نے کہا: ابوبکر رضی اللہ عنہ کو آنے دیجئیے، سویبط رضی اللہ عنہ نے کہا: میں تمہیں غصہ دلا کر پریشان کروں گا، پھر وہ لوگ ایک قوم کے پاس سے گزرے تو سویبط رضی اللہ عنہ نے اس قوم کے لوگوں سے کہا: تم مجھ سے میرے ایک غلام کو خریدو گے؟ انہوں نے کہا: ہاں، سویبط رضی اللہ عنہ کہنے لگے: وہ ایک باتونی غلام ہے وہ یہی کہتا رہے گا کہ میں آزاد ہوں، تم اس کی باتوں میں آ کر اسے چھوڑ نہ دینا، ورنہ میرا غلام خراب ہو جائے گا، انہوں نے جواب دیا: وہ غلام ہم تم سے خرید لیں گے، الغرض ان لوگوں نے دس اونٹنیوں کے عوض وہ غلام خرید لیا، پھر وہ لوگ نعیمان رضی اللہ عنہ کے پاس آئے، اور ان کی گردن میں عمامہ باندھا یا رسی ڈالی تو نعیمان رضی اللہ عنہ نے کہا: اس نے ( یعنی سویبط نے ) تم سے مذاق کیا ہے، میں تو آزاد ہوں، غلام نہیں ہوں، لوگوں نے کہا: یہ تمہاری عادت ہے، وہ پہلے ہی بتا چکا ہے ( کہ تم باتونی ہو ) ، الغرض وہ انہیں پکڑ کر لے گئے، اتنے میں ابوبکر رضی اللہ عنہ تشریف لائے، تو لوگوں نے انہیں اس واقعے کی اطلاع دی، وہ اس قوم کے پاس گئے اور ان کے اونٹ دے کر نعیمان کو چھڑا لائے، پھر جب یہ لوگ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس ( مدینہ ) آئے تو آپ اور آپ کے صحابہ سال بھر اس واقعے پر ہنستے رہے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3720

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي التَّيَّاحِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَنَسَ بْنَ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُخَالِطُنَا،‏‏‏‏ حَتَّى يَقُول لِأَخٍ لِي صَغِيرٍ:‏‏‏‏ يَا أَبَا عُمَيْرٍ،‏‏‏‏ مَا فَعَلَ النُّغَيْ؟ ،‏‏‏‏ قَالَ وَكِيعٌ:‏‏‏‏ يَعْنِي طَيْرًا كَانَ يَلْعَبُ بِهِ.
It was narrated that Abu Taiyah said: I heard Anas Bin Malik say: The Messenger of Allah (ﷺ) used to mix with us so much that he said to a little brother of mine: O Abu `Umair, what happened to the Nughair (one of the narrators Waki` said that it means a bird that he used to play with). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہم لوگوں سے ( یعنی بچوں سے ) میل جول رکھتے تھے، یہاں تک کہ میرے چھوٹے بھائی سے فرماتے: «يا أبا عمير ما فعل النغير» اے ابوعمیر! تمہارا وہ «نغیر» ( پرندہ ) کیا ہوا؟ وکیع نے کہا «نغیر» سے مراد وہ پرندہ ہے جس سے ابوعمیر کھیلا کرتے تھے
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3721

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِسْحَاق،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ عَنْ نَتْفِ الشَّيْبِ،‏‏‏‏ وَقَالَ:‏‏‏‏ هُوَ نُورُ الْمُؤْمِنِ .
It was narrated from 'Amr bin Sh'uaib from his father, that his grandfather said: The Messenger of Allah(ﷺ) forbade plucking out white hairs and said: 'It is the light of the believer.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سفید بال اکھیڑنے سے منع فرمایا، اور فرمایا کہ وہ مومن کا نور ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3722

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا زَيْدُ بْنُ الْحُبَابِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْمُنِيبِ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ بُرَيْدَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى أَنْ يُقْعَدَ بَيْنَ الظِّلِّ وَالشَّمْسِ .
It was narrated from Ibn Buraidah, from his father, that the Prophet(ﷺ) : forbade sitting between the shade and sun. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے دھوپ اور سایہ کے درمیان میں بیٹھنے سے منع کیا ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3723

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْوَلِيدُ بْنُ مُسْلِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَوْزَاعِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ،‏‏‏‏ عَنْ قَيْسِ بْنِ طِخْفَةَ الْغِفَارِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَصَابَنِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَائِمًا فِي الْمَسْجِدِ عَلَى بَطْنِي،‏‏‏‏ فَرَكَضَنِي بِرِجْلِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ مَا لَكَ وَلِهَذَا النَّوْمِ،‏‏‏‏ هَذِهِ نَوْمَةٌ يَكْرَهُهَا اللَّهُ أَوْ يُبْغِضُهَا اللَّهُ .
It was narrated from Qais bin Tihfah Al-Ghifari that his father said: The Messenger of Allah(ﷺ) found me sleeping in the masjid on my stomach. He nudged me with his foot and said: 'Why are you sleeping like this? This is a kind of sleep that Allah dislikes,' or 'that Allah hates.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے مسجد میں پیٹ کے بل ( اوندھے منہ ) سویا ہوا پایا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے پاؤں سے مجھے ہلا کر فرمایا: تم اس طرح کیوں سو رہے ہو؟ یہ سونا اللہ کو ناپسند ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3724

حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ حُمَيْدِ بْنِ كَاسِبٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ نُعَيْمِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْمُجْمِرِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ طِخْفَةَ الْغِفَارِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي ذَرٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَرَّ بِيَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَا مُضْطَجِعٌ عَلَى بَطْنِي،‏‏‏‏ فَرَكَضَنِي بِرِجْلِهِ،‏‏‏‏ وَقَالَ:‏‏‏‏ يَا جُنَيْدِبُ،‏‏‏‏ إِنَّمَا هَذِهِ ضِجْعَةُ أَهْلِ النَّارِ .
It was narrated that Abu Dharr said: The Prophet(ﷺ) passed by me and I was lying on my stomach. He nudged me with his foot and said: 'O Junaidib! This is how the people of Hell lie.' نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم میرے پاس سے گزرے اس حال میں کہ میں پیٹ کے بل لیٹا ہوا تھا، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے اپنے پیر سے ہلا کر فرمایا: «جنيدب»! ( یہ ابوذر کا نام ہے ) سونے کا یہ انداز تو جہنمیوں کا ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3725

حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ حُمَيْدِ بْنِ كَاسِبٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَلَمَةُ بْنُ رَجَاءٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْوَلِيدِ بْنِ جَمِيلٍ الدِّمَشْقِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ الْقَاسِمَ بْنَ عَبْدِ الرَّحْمَنِ يُحَدِّثُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي أُمَامَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَرَّ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى رَجُلٍ نَائِمٍ فِي الْمَسْجِدِ مُنْبَطِحٍ عَلَى وَجْهِهِ،‏‏‏‏ فَضَرَبَهُ بِرِجْلِهِ،‏‏‏‏ وَقَالَ:‏‏‏‏ قُمْ وَاقْعُدْ،‏‏‏‏ فَإِنَّهَا نَوْمَةٌ جَهَنَّمِيَّةٌ .
It was narrated that Abu Umamah said: The Prophet(ﷺ) passed by a man who was sleeping in the masjid, lying on his face. He struck him with his foot and said: 'Get up' or; 'Sit up, fo this is a hellish kind of sleep.' نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا گزر ایک ایسے شخص کے پاس ہوا جو اوندھے منہ مسجد میں سو رہا تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کو پیر سے ہلا کر فرمایا: اٹھ کر بیٹھو، اس طرح سونا جہنمیوں کا سونا ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3726

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ الْأَخْنَسِ،‏‏‏‏ عَنْ الْوَلِيدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ يُوسُفَ بْنِ مَاهَكَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنِ اقْتَبَسَ عِلْمًا مِنَ النُّجُومِ،‏‏‏‏ اقْتَبَسَ شُعْبَةً مِنَ السِّحْرِ زَادَ مَا زَادَ .
It was narrated from Ibn Abbas that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Whoever learns about the stars, he learns a branch of magic; the more he learns (of the former) the more he learns (of the latter). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس نے علم نجوم میں سے کچھ حاصل کیا، اس نے سحر ( جادو ) کا ایک حصہ حاصل کر لیا، اب جتنا زیادہ حاصل کرے گا گویا اتنا ہی زیادہ جادو حاصل کیا ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3727

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَوْزَاعِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ثَابِتٌ الزُّرَقِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا تُسُبُّوا الرِّيحَ،‏‏‏‏ فَإِنَّهَا مِنْ رَوْحِ اللَّهِ،‏‏‏‏ تَأْتِي بِالرَّحْمَةِ وَالْعَذَابِ،‏‏‏‏ وَلَكِنْ سَلُوا اللَّهَ مِنْ خَيْرِهَا،‏‏‏‏ وَتَعَوَّذُوا بِاللَّهِ مِنْ شَرِّهَا .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Do not curse the wind, for it is from the mercy of Allah, bringing Rahmah (i.e., rain and breezes), or destruction. But ask Allah for its goodness, and seek refuge with Allah from its evil. رسول اللہ صلی اللہعلیہ وسلم نے فرمایا: ہوا کو برا نہ کہو، کیونکہ وہ اللہ تعالیٰ کی رحمت میں سے ہے، وہ رحمت بھی لاتی ہے اور عذاب بھی لاتی ہے، البتہ اللہ تعالیٰ سے اس کی بھلائی کا سوال کرو اور اس کے شر سے اللہ کی پناہ مانگو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3728

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدُ بْنُ مَخْلَدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْعُمَرِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَحَبُّ الْأَسْمَاءِ إِلَى اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ،‏‏‏‏ عَبْدُ اللَّهِ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ الرَّحْمَنِ .
It was narrated from Ibn 'Umar that the Prophet(ﷺ) said: The most beloved of names to Allah are 'Abdullah and 'Abdur-Rahman. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اللہ تعالیٰ کے نزدیک سب سے پسندیدہ نام عبداللہ اور عبدالرحمٰن ہیں ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3729

حَدَّثَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أَحْمَدَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ عَنْ عُمَرَ بْنِ الْخَطَّابِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَئِنْ عِشْتُ إِنْ شَاءَ اللَّهُ،‏‏‏‏ لَأَنْهَيَنَّ أَنْ يُسَمَّى رَبَاحٌ،‏‏‏‏ وَنَجِيحٌ،‏‏‏‏ وَأَفْلَحُ،‏‏‏‏ وَنَافِعٌ،‏‏‏‏ وَيَسَارٌ .
It was narrated from 'Umar ibn Al-Khattab that the Prophet(ﷺ) said: If I live- if Allah wills - I will forbid the names Rabah(profit), Najih(saved), Aflah (Successful), Nafi (beneficial) and Yasar(prosperity). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اگر میں زندہ رہا تو ان شاءاللہ «رباح» ( نفع ) ، «نجیح» ( کامیاب ) ، «افلح» ( کامیاب ) ، «نافع» ( فائدہ دینے والا ) اور «یسار» ( آسانی ) ، نام رکھنے سے منع کر دوں گا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3730

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ الرُّكَيْنِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ سَمُرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنْ نُسَمِّيَ رَقِيقَنَا أَرْبَعَةَ أَسْمَاءٍ،‏‏‏‏ أَفْلَحُ،‏‏‏‏ وَنَافِعٌ،‏‏‏‏ وَرَبَاحٌ،‏‏‏‏ وَيَسَارٌ .
It was narrated that Samurah said: The Messenger of Allah(ﷺ) forbade giving our slaves four names: Aflah (successful), Nafi' (beneficial), Rabah (profit) and Yasar(prosperity). رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں اپنے غلاموں کے چار نام رکھنے سے منع فرمایا ہے: «افلح»، «نافع»، «رباح» اور«یسار» ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3731

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هَاشِمُ بْنُ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو عَقِيلٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُجَالِدُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ الشَّعْبِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ مَسْرُوقٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَقِيتُ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ أَنْتَ؟ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ مَسْرُوقُ بْنُ الْأَجْدَعِ،‏‏‏‏ فَقَالَ عُمَرُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ الْأَجْدَعُ شَيْطَانٌ .
It was narrated that Masruq said: I met 'Umar bin Khattab and he said: 'Who are you?' I said: 'Masruq bin Adja'.' 'Umar said: 'I heard the Messenger of Allah(ﷺ) saying, Ajda' is a devil. میری ملاقات عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ سے ہوئی، تو انہوں نے پوچھا: تم کون ہو؟ میں نے عرض کیا: میں مسروق بن اجدع ہوں، ( یہ سن کر ) عمر رضی اللہ عنہ نے کہا کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے کہ اجدع ایک شیطان ہے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3732

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي مَيْمُونَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا رَافِعٍ يُحَدِّثُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ زَيْنَبَ كَانَ اسْمُهَا بَرَّةَ،‏‏‏‏ فَقِيلَ لَهَا تُزَكِّي نَفْسَهَا،‏‏‏‏ فَسَمَّاهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ زَيْنَبَ .
It was narrated from Abu Hurairah that: Zainab used to be called Barrah (good), and it was said that she was praising herself. So the Messenger of Allah(ﷺ) changed her name to Zainab. زینب کا نام بّرہ تھا ( یعنی نیک بخت اور صالحہ ) لوگوں نے اعتراض کیا کہ یہ اپنی تعریف آپ کرتی ہیں، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کا نام بدل کر زینب رکھ دیا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3733

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ مُوسَى،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ ابْنَةً لِعُمَرَ كَانَ يُقَالُ لَهَا:‏‏‏‏ عَاصِيَةُ، ‏‏‏‏‏‏ فَسَمَّاهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ جَمِيلَةَ .
It was narrated from Ibn Umar that: a daughter of 'Umar was Asiyah(disobedient) then the Messenger of Allah(ﷺ) named her 'Jamilah' (beautiful). عمر رضی اللہ عنہ کی ایک بیٹی کا نام عاصیہ تھا ( یعنی گنہگار، نافرمان ) تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کا نام بدل کر جمیلہ رکھ دیا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3734

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ يَعْلَى أَبُو الْمُحَيَّاةِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ عُمَيْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنِي ابْنُ أَخِي عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سَلَامٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سَلَامٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَدِمْتُ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَلَيْسَ اسْمِي عَبْدَ اللَّهِ بْنَ سَلَامٍ،‏‏‏‏ فَسَمَّانِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ سَلَامٍ .
It was narrated that Abdullah bin Salam said: I came to the Messenger of Allah(ﷺ), and my name was not Abdullah bin Salam. The Messenger of Allah(ﷺ) named me Abdullah bin Salam. جب میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا تو میرا نام اس وقت عبداللہ بن سلام نہ تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہی میرا نام عبداللہ بن سلام رکھا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3735

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ أَبُو الْقَاسِمِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَسَمَّوْا بِاسْمِي،‏‏‏‏ وَلَا تَكَنَّوْا بِكُنْيَتِي .
It was narrated from Muhammad that they heard Abu Hurairah say: Abul Qasim(ﷺ) said: 'Call yourselves by my name but do not call yourselves by my Kunyah. ابوالقاسم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تم لوگ میرے نام پر نام رکھو، لیکن میری کنیت پر کنیت نہ رکھو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3736

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَسَمَّوْا بِاسْمِي،‏‏‏‏ وَلَا تَكَنَّوْا بِكُنْيَتِي .
It was narrated from Jabir that the Messenger of Allah(ﷺ) said: Call yourselves by my name but do not call yourselves by my Kunyah. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تم لوگ میرے نام پر نام رکھو، لیکن میری کنیت پر کنیت نہ رکھو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3737

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ الثَّقَفِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِالْبَقِيعِ،‏‏‏‏ فَنَادَى رَجُلٌ رَجُلًا يَا أَبَا الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ فَالْتَفَتَ إِلَيْهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي لَمْ أَعْنِكَ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَسَمَّوْا بِاسْمِي،‏‏‏‏ وَلَا تَكَنَّوْا بِكُنْيَتِي .
It was narrated that Anas said: The Messenger of Allah(ﷺ) was in Baqi', and a man called out to another man: 'O Abul-Qasim!' The Messenger of Allah(ﷺ) turned to him, and he said: 'I didn't mean you.' The Messenger of Allah(ﷺ) said: 'Call yourselves by my name but do not call yourselves by my Kunyah.' رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مقبرہ بقیع میں تھے کہ ایک شخص نے دوسرے کو آواز دی: اے ابوالقاسم! آپ صلی اللہ علیہ وسلم اس کی جانب متوجہ ہوئے، تو اس نے عرض کیا کہ میں نے آپ کو مخاطب نہیں کیا، تب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تم لوگ میرے نام پر نام رکھو، لیکن میری کنیت پر کنیت نہ رکھو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3738

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي بُكَيْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا زُهَيْرُ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عَقِيلٍ،‏‏‏‏ عَنْ حَمْزَةَ بْنِ صُهَيْبٍ،‏‏‏‏ أَنَّ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ لِصُهَيْبٍ:‏‏‏‏ مَا لَكَ تَكْتَنِي بِأَبِي يَحْيَى وَلَيْسَ لَكَ وَلَدٌ؟ قَالَ:‏‏‏‏ كَنَّانِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِأَبِي يَحْيَى .
It was narrated from Hamzah bin Suhaib that Umar said to Suhaib: Why are you called Abu Yahya when you do not have a son? He said: The Messenger of Allah(ﷺ) gave me the Kunya of Abu Yahya. عمر رضی اللہ عنہ نے صہیب رضی اللہ عنہ سے کہا کہ تم اپنی کنیت ابویحییٰ کیوں رکھتے ہو؟ حالانکہ تمہیں کوئی اولاد نہیں ہے؟ تو انہوں نے جواب دیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے میری کنیت ابویحییٰ رکھی ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3739

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ هِشَامِ بْنِ عُرْوَةَ،‏‏‏‏ عَنْ مَوْلًى لِلزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ أَنَّهَا قَالَتْ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كُلُّ أَزْوَاجِكَ كَنَّيْتَهُ غَيْرِي،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَأَنْتِ أُمُّ عَبْدِ اللَّهِ .
It was narrated from Aisha that she said to the Prophet(ﷺ): All of your wives have a Kunyah except me. He said: You are Umm Abdullah . انہوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا کہ آپ نے اپنی تمام بیویوں کی کنیت رکھی، صرف میں ہی باقی ہوں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تم «ام عبداللہ» ہو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3740

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي التَّيَّاحِ،‏‏‏‏، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَأْتِينَا فَيَقُولُ لِأَخٍ لِي وَكَانَ صَغِيرًا:‏‏‏‏ يَا أَبَا عُمَيْرٍ .
It was narrated that Anas said: The Prophet(ﷺ) used to come to us and say to a brother of mine, who was small: 'O Abu Umair.' . نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے پاس تشریف لائے، تو میرا ایک چھوٹا بھائی تھا، آپ اسے ابوعمیر کہہ کر پکارتے تھے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3741

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ إِدْرِيسَ،‏‏‏‏ عَنْ دَاوُدَ،‏‏‏‏ عَنْ الشَّعْبِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي جَبِيرَةَ بْنِ الضَّحَّاكِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فِينَا نَزَلَتْ مَعْشَرَ الْأَنْصَارِ وَلا تَنَابَزُوا بِالأَلْقَابِ سورة الحجرات آية 11، ‏‏‏‏‏‏ قَدِمَ عَلَيْنَا النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَالرَّجُلُ مِنَّا لَهُ الِاسْمَانِ وَالثَّلَاثَةُ،‏‏‏‏ فَكَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رُبَّمَا دَعَاهُمْ بِبَعْضِ تِلْكَ الْأَسْمَاءِ ،‏‏‏‏ فَيُقَالُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنَّهُ يَغْضَبُ مِنْ هَذَا،‏‏‏‏ فَنَزَلَتْ وَلا تَنَابَزُوا بِالأَلْقَابِ سورة الحجرات آية 11.
It was narrated that Abu Jabirah bin Dahhak said: (Allah's saying) Nor insult one another by nicknames(Surah Al Hujarat 49:11) was revealed concerning us, the Ansar. When the Prophet(ﷺ) came to us, a man among us would have two or three names, and the Prophet(ﷺ) might call him by one of those names, only to be told: O Messenger of Allah(ﷺ), he does not like that name. Then: Nor insult one another by nicknames. was revealed. «ولا تنابزوا بالألقاب» ہم انصار کے بارے میں نازل ہوئی ہے، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب ہمارے پاس ( مدینہ ) تشریف لائے تو ہم میں سے ہر ایک کے دو دو، تین تین نام تھے، بسا اوقات نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم انہیں ان کا کوئی ایک نام لے کر پکارتے، تو آپ سے عرض کیا جاتا: اللہ کے رسول! فلاں شخص فلاں نام سے غصہ ہوتا ہے، تو اس وقت یہ آیت کریمہ نازل ہوئی: «ولا تنابزوا بالألقاب» کسی کو برے القاب سے نہ پکارو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3742

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُجَاهِدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي مَعْمَرٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْمِقْدَادِ بْنِ عَمْرٍو،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَمَرَنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنْ نَحْثُوَ فِي وُجُوهِ الْمَدَّاحِينَ التُّرَابَ .
It was narrated that Miqdad bin 'Amr said: The Messenger of Allah(ﷺ) commanded us to throw dust in the faces of those who praise others. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں تعریف کرنے والوں کے منہ میں مٹی ڈالنے کا حکم دیا ہے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3743

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا غُنْدَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعْدِ بْنِ إِبْرَاهِيمَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ عَوْفٍ،‏‏‏‏ عَنْمَعْبَدٍ الْجُهَنِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ إِيَّاكُمْ وَالتَّمَادُحَ،‏‏‏‏ فَإِنَّهُ الذَّبْحُ .
It was narrated that Muawiyah said: I heard the Messenger of Allah(ﷺ) say: 'Beware of praising one another, for it is slaughtering (one another).' میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: تم آپس میں ایک دوسرے کی منہ پر مدح و تعریف کرنے سے بچو، کیونکہ اس طرح تعریف کرنا گویا ذبح کرنا ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3744

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شَبَابَةُ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ خَالِدٍ الْحَذَّاءِ،‏‏‏‏ عن عكرمة، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي بَكْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَدَحَ رَجُلٌ رَجُلًا عِنْدَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ وَيْحَكَ قَطَعْتَ عُنُقَ صَاحِبِكَ مِرَارًا ،‏‏‏‏ ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ إِنْ كَانَ أَحَدُكُمْ مَادِحًا أَخَاهُ،‏‏‏‏ فَلْيَقُلْ أَحْسِبُهُ،‏‏‏‏ وَلَا أُزَكِّي عَلَى اللَّهِ أَحَدًا .
It was narrated from Abdur-Rahman bin Abu Bakrah that his father said: A man praised another man in the presence of Messenger of Allah(ﷺ). The Messenger of Allah(ﷺ) said: 'Woe to you,you have cut the neck of your companion,'several times. Then he said: 'If anyone of you praises his brother, let him say: I think he is lie this, but I do not sanctify anyone before Allah. ایک شخص نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے ایک آدمی کی تعریف کی تو آپ نے فرمایا: افسوس! تم نے اپنے بھائی کی گردن کاٹ دی ، اس جملہ کو آپ نے کئی بار دہرایا، پھر فرمایا: تم میں سے اگر کوئی آدمی اپنے بھائی کی تعریف کرنا چاہے تو یہ کہے کہ میں ایسا سمجھتا ہوں، لیکن میں اللہ تعالیٰ کے اوپر کسی کو پاک نہیں کہہ سکتا ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3745

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي بُكَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ شَيْبَانَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ عُمَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْمُسْتَشَارُ مُؤْتَمَنٌ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: One who is consulted is entrusted. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس سے مشورہ لیا جائے وہ امانت دار ہے ( لہٰذا وہ ایمانداری سے مشورہ دے ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3746

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَسْوَدُ بْنُ عَامِرٍ،‏‏‏‏ عَنْ شَرِيكٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي عَمْرٍو الشَّيْبَانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْأَبِي مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْمُسْتَشَارُ مُؤْتَمَنٌ .
It was narrated from Abu Mas'ud that the Messenger of Allah(ﷺ) said: One who is consulted is entrusted. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جس سے مشورہ لیا جائے وہ امانت دار ہے ( لہٰذا وہ دیانتداری سے مشورہ دے ) ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3747

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ زَكَرِيَّا بْنِ أَبِي زَائِدَةَ،‏‏‏‏ وَعَلِيُّ بْنُ هَاشِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي لَيْلَى،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْجَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا اسْتَشَارَ أَحَدُكُمْ أَخَاهُ،‏‏‏‏ فَلْيُشِرْ عَلَيْهِ .
It was narrated from Jabir that that the Messenger of Allah(ﷺ) said: If one of you consults his brother, then let him advise him. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کوئی شخص اپنے بھائی سے مشورہ طلب کرے، تو اسے مشورہ دینا چاہیئے ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3748

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدَةُ بْنُ سُلَيْمَانَ . ح وحَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِي يَعْلَى،‏‏‏‏ وَجَعْفَرُ بْنُ عَوْنٍ جَمِيعًا،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ زِيَادِ بْنِ أَنْعُمٍ الْإِفْرِيقِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ رَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَال رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تُفْتَحُ لَكُمْ أَرْضُ الْأَعَاجِمِ،‏‏‏‏ وَسَتَجِدُونَ فِيهَا بُيُوتًا يُقَالُ لَهَا:‏‏‏‏ الْحَمَّامَاتُ،‏‏‏‏ فَلَا يَدْخُلْهَا الرِّجَالُ إِلَّا بِإِزَارٍ،‏‏‏‏ وَامْنَعُوا النِّسَاءَ أَنْ يَدْخُلْنَهَا إِلَّا مَرِيضَةً أَوْ نُفَسَاءَ .
It was narrated that Abdullah bin Amr said: The Messenger of Allah(ﷺ) said: 'You will conquer the lands of the non-Arabs, where you will find houses called Hammamat (bathhouses). Men Should only enter them wearing a waist wrap, and do not let women enter them unless they are sick or bleeding following childbirth. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: تمہارے لیے عجم کے ممالک فتح ہوں گے، تو وہاں تم کچھ ایسے گھر پاؤ گے جنہیں حمامات ( عمومی غسل خانے ) کہا جاتا ہو گا، تو مرد ان میں بغیر تہہ بند کے داخل نہ ہوں، اور عورتوں کو اس میں جانے سے روکو، سوائے اس عورت کے جو بیمار ہو، یا نفاس والی ہو ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3749

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ . ح وحَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ أَبِي شَيْبَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَفَّانُ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ شَدَّادٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي عُذْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ وَكَانَ قَدْ أَدْرَكَ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى الرِّجَالَ وَالنِّسَاءَ مِنَ الْحَمَّامَاتِ،‏‏‏‏ ثُمَّ رَخَّصَ لِلرِّجَالِ أَنْ يَدْخُلُوهَا فِي الْمَيَازِرِ،‏‏‏‏ وَلَمْ يُرَخِّصْ لِلنِّسَاءِ .
It was narrated from Aisha that the Prophet(ﷺ): forbade men and women to enter bathhouses, then he allowed men to enter them wearing a waist wrap, but he did not make the same allowance for women. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ( پہلے ) مردوں اور عورتوں دونوں کو حمام میں جانے سے منع کیا تھا، پھر مردوں کو تہبند پہن کر جانے کی اجازت دی، اور عورتوں کو اجازت نہیں دی ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3750

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمِ بْنِ أَبِي الْجَعْدِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْمَلِيحِ الْهُذَلِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّ نِسْوَةً مِنْ أَهَلْ حِمْصَ اسْتَأْذَنَّ عَلَى عَائِشَةَ،‏‏‏‏ فَقَالَتْ:‏‏‏‏ لَعَلَّكُنَّ مِنَ اللَّوَاتِي يَدْخُلْنَ الْحَمَّامَاتِ،‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ أَيُّمَا امْرَأَةٍ وَضَعَتْ ثِيَابَهَا فِي غَيْرِ بَيْتِ زَوْجِهَا،‏‏‏‏ فَقَدْ هَتَكَتْ سِتْرَ مَا بَيْنَهَا وَبَيْنَ اللَّهِ .
It was narrated from Abu Malih AL-HUdhail that some women from the people of Hims asked permission to enter upon Aisha. She said: Perhaps you are among those (women) who enter bathhouses? I heard the Messenger of Allah(ﷺ) say: 'Any woman who takes off her clothes anywhere but in her husband's house, has torn the screen between her and Allah.' حمص کی کچھ عورتوں نے ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا سے ملاقات کی اجازت طلب کی تو انہوں نے کہا کہ شاید تم ان عورتوں میں سے ہو جو حمام میں جاتی ہیں، میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا ہے کہ جس عورت نے اپنے شوہر کے گھر کے علاوہ کسی اور جگہ اپنے کپڑے اتارے تو اس نے اس پردہ کو پھاڑ ڈالا جو اس کے اور اللہ کے درمیان ہے ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3751

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هَاشِمٍ الرُّمَّانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْحَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كَانَ إِذَا اطَّلَى،‏‏‏‏ بَدَأَ بِعَوْرَتِهِ فَطَلَاهَا بِالنُّورَةِ،‏‏‏‏ وَسَائِرَ جَسَدِهِ أَهْلُهُ .
It was narrated from Umm Salamah that when the Prophet(ﷺ) would apply (it): he began with his private area, coating it with hair removing chemical. And his wife would do the remainder of his body. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جب بال صاف کرنے کا پاؤڈر لگاتے تو پہلے آپ اپنی شرمگاہ پر ملتے، پھر باقی بدن پر آپ کی ازواج مطہرات رضی اللہ عنہن ملتیں۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3752

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنِي إِسْحَاق بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ كَامِلٍ أَبِي الْعَلَاءِ،‏‏‏‏ عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اطَّلَى وَوَلِيَ عَانَتَهُ بِيَدِهِ .
It was narrated from Umm Salamah that: the Prophet(ﷺ) would coat (with hair removing chemical) and remove the pubic hairs with his hand. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی شرمگاہ پر اپنے ہاتھ سے خود بال صاف کرنے کا پاؤڈر لگایا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3753

حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْهِقْلُ بْنُ زِيَادٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَوْزَاعِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَامِرٍ الْأَسْلَمِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَقُصُّ عَلَى النَّاسِ،‏‏‏‏ إِلَّا أَمِيرٌ أَوْ مَأْمُورٌ أَوْ مُرَاءٍ .
It was narrated from Amr bin Shuaib, from his father, from his grandfather, that the Messenger of Allah(ﷺ) said: No one tells the stories to the people (for the purpose of exhortation) except a ruler, one appointed by a ruler, or a show-off. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: لوگوں کو وعظ و نصیحت وہی کرتا ہے جو حاکم ہو، یا وہ شخص جو حاکم کی جانب سے مقرر ہو، یا جو ریا کار ہو ۱؎۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3754

حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ عَنْ الْعُمَرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَمْ يَكُنِ الْقَصَصُ فِي زَمَنِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَلَا زَمَنِ أَبِي بَكْرٍ،‏‏‏‏ وَلَا زَمَنِ عُمَرَ .
It was narrated that Ibn Umar said: Stories (for the purpose of exhortation) were unknown at the time of the Messenger of Allah(ﷺ), the time of Abu Bakr and Umar. یہ قصہ گوئی نہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں تھی، اور نہ ابوبکرو عمر رضی اللہ عنہما کے زمانہ میں۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3755

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْمُبَارَكِ،‏‏‏‏ عَنْ يُونُسَ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرِ بْنُ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْحَارِثِ،‏‏‏‏ عَنْ مَرْوَانَ بْنِ الْحَكَمِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْأَسْوَدِ بْنِ عَبْدِ يَغُوثَ،‏‏‏‏ عَنْ أُبَيِّ بْنِ كَعْبٍ،‏‏‏‏ أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ مِنَ الشِّعْرِ لَحِكْمَةً .
It was narrated from Ubbay bin Ka'b that the Messenger of Allah(ﷺ) said: In some poetry there is wisdom. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: بیشک کچھ شعر حکمت و دانائی پر مبنی ہوتے ہیں ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3756

حَدَّثَنَا أَبُو بَكْرٍ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ،‏‏‏‏ عَنْ زَائِدَةَ،‏‏‏‏ عَنْ سِمَاكٍ،‏‏‏‏ عَنْ عِكْرِمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ أَنَّ ّالنَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ كَانَ يَقُولُ:‏‏‏‏ إِنَّ مِنَ الشِّعْرِ حِكَمًا .
It was narrated from Ibn Abbas that the Prophet(ﷺ) said: In some poetry there is wisdom. نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم فرمایا کرتے تھے: بعض اشعار میں حکمت و دانائی کی باتیں ہوتی ہیں ۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 3757

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ عُمَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَصْدَقُ كَلِمَةٍ قَالَهَا الشَّاعِرُ كَلِمَةُ لَبِيدٍ أَلَا كُلُّ شَيْءٍ مَا خَلَا اللَّهَ بَاطِلُ،‏‏‏‏ وَكَادَ أُمَيَّةُ بْنُ أَبِي الصَّلْتِ أَنْ يُسْلِمَ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah(ﷺ) said: The truest of wods spoken by the poet are the words of Labid: Everything except Allah is false.' And Abu Umayyah bin Abu Salt nearly accepted Islam. رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: سب سے زیادہ سچی بات جو کسی شاعر نے کہی ہے وہ لبید ( شاعر ) کا یہ شعر ہے «ألا كل شيء ما خلا الله باطل» سن لو! اللہ کے علاوہ ساری چیزیں فانی ہیں اور قریب تھا کہ امیہ بن ابی صلت مسلمان ہو جائے ۔