MUSNAD AHMED

Search Results(1)

124)

124) طلاق کا بیان

Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7172

۔ (۷۱۷۲)۔عَنْ اَبِیْ ھُرَیْرَۃَ عَنِ النَّبِیِّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم قَالَ:(( اَلْمُخْتَلِعَاتُ وَالْمُنْتَزِعَاتُ ھُنَّ الْمُنَافِقَاتِ))۔ (مسند احمد: ۹۳۴۷)
۔ سیدنا ابوہریرہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے مروی ہے کہ نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: خلع لینے والی اور خاوند سے علیحدگی کا مطالبہ کرنے والی عورتیں منافق ہیں۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7173

۔ (۷۱۷۳)۔عَنْ سَہْلِ بْنِ اَبِیْ حَثْمَۃَ قَالَ: کَانَتْ حَبِیْبَۃُ اِبْنَۃُ سَہْلٍ تَحْتَ ثَابِتِ بْنِ قَیْسِ بْنِ شَمَّاسٍ الْاَنْصَارِیِّ فَکَرِھَتْہُ وَکَانَ رَجُلًا دَمِیْمًا، فَجَائَ تْ اِلیَ النَّبِیِّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم فَقَالَتْ: یَارَسُوْلَ اللّٰہِ! اِنِّیْ لَاَرَاہُ، فَلَوْ لَا مَخَافَۃُ اللّٰہِ عَزَّوَجَلَّ لَبَزَقْتُ فِیْ وَجْہِہِ، فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم : ((اَتُرَدِّیْنَ عَلَیْہِ حَدِیْقَتَہُ الَّتِی اَصْدَقَکَ؟)) قَالَتْ: نَعَمْ، فَاَرْسَلَ اِلَیْہِ فَرَدَّتْ عَلَیْہِ حَدِیْقَتَہُ وَفَرَّقَ بَیْنَہُمَا، قَالَ: فَکَانَ ذٰلِکَ اَوَّلَ خُلْعٍ کَانَ فِی الْاِسْلَامِ۔ (مسند احمد: ۱۶۱۹۳)
۔ سیدنا سہل بن ابی حثمہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے روایت ہے کہ سیدہ حبیبہ بنت سہل ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ ، سیدنا ثابت بن قیس ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ کے نکاح میں تھیں، سیدنا ثابت ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ خوش شکل نہ تھے، اس لیے سیدہ حبیبہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا ، نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے پاس آئیں اور کہا: اے اللہ کے رسول! اگر میرے سامنے اللہ تعالیٰ کا ڈر آڑے نہ آتا ہو تو میں ثابت کودیکھ کر اس کے چہرے پر تھوک دوں، نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: حبیبہ! کیا تو وہ باغ، جو ثابت نے حق مہر کے طور پر دیا تھا، وہ اسے واپس کر دو گی؟ انہوں نے کہا: جی ہاں۔ آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے سیدنا ثابت کے ہاں پیغام بھیجا، وہ آئے، سیدہ حبیبہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا نے ان کو وہ باغ لوٹا دیا اور آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے ان کے درمیان جدائی کروا دی، یہ اسلام میں سب سے پہلا پیش آنے والا خلع تھا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7174

۔ (۷۱۷۴)۔عَنْ یَحْیَی بْنِ سَعِیدٍ عَنْ عَمْرَۃَ بِنْتِ عَبْدِ الرَّحْمٰنِ بْنِ سَعْدِ بْنِ زُرَارَۃَ الْأَنْصَارِیَّۃِ أَنَّہَا أَخْبَرَتْہُ عَنْ حَبِیبَۃَ بِنْتِ سَہْلٍ الْأَنْصَارِیَّۃِ قَالَتْ إِنَّہَا کَانَتْ تَحْتَ ثَابِتِ بْنِ قَیْسِ بْنِ شَمَّاسٍ وَأَنَّ النَّبِیَّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ خَرَجَ إِلَی الصُّبْحِ فَوَجَدَ حَبِیبَۃَ بِنْتَ سَہْلٍ عَلٰی بَابِہِ بِالْغَلَسِ فَقَالَ النَّبِیُّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ((مَنْ ہٰذِہِ؟)) قَالَتْ: أَنَا حَبِیبَۃُ بِنْتُ سَہْلٍ فَقَالَ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ((مَا لَکِ؟)) قَالَتْ: لَا أَنَا وَلَا ثَابِتُ بْنُ قَیْسٍ لِزَوْجِہَا، فَلَمَّا جَائَ ثَابِتٌ قَالَ لَہُ النَّبِیُّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ: ((ہٰذِہِ حَبِیبَۃُ بِنْتُ سَہْلٍ قَدْ ذَکَرَتْ مَا شَائَ اللّٰہُ أَنْ تَذْکُرَ۔)) قَالَتْ حَبِیبَۃُ: یَا رَسُولَ اللّٰہِ! کُلُّ مَا أَعْطَانِی عِنْدِی، فَقَالَ النَّبِیُّ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ لِثَابِتٍ: ((خُذْ مِنْہَا۔)) فَأَخَذَ مِنْہَا وَجَلَسَتْ فِی أَہْلِہَا۔ (مسند احمد: ۲۷۹۹۰)
۔ سیدہ حبیبہ بنت سہل انصاریہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے مروی ہے، وہ ثابت بن قیس ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ کے نکاح میں تھیں، جب نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نمازِ فجر کے لیے باہر تشریف لائے تو حبیبہ کو اپنے دروازے پر پایا، جبکہ ابھی تک اندھیرا تھا، آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: یہ کون ہے؟ انھوں نے کہا: جی میں حبیبہ بنت سہل ہوں، آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: تمہیں کیا ہو گیا ہے، خیر تو ہے؟ انھوں نے کہا:میں اور میرا خاوند ثابت، بس اب اکٹھے نہیں رہ سکتے، یہ سن کر آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے سیدنا ثابت کو بلایا، وہ آئے تو آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے ان سے فرمایا: یہ حبیبہ بنت سہل ہے، اس نے مجھے اپنی دلی کیفیت بتائی ہے، یہ تمہارے پاس نہیں رہنا چاہتی۔ اتنے میں سیدہ حبیبہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا نے کہا: اے اللہ کے رسول! ثابت نے جو کچھ مجھے دیا ہے، وہ میرے پاس موجود ہے،نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے سیدنا ثابت ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے کہا: یہ اپنا مال لے لو۔ پس انھوں نے اس سے مال لے لیا اور وہ اپنے گھر والوں کے پاس چلی گئیں۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7175

۔ (۷۱۷۵)۔عَنْ زُرَارَۃَ بْنِ أَوْفٰی عَنْ سَعْدِ بْنِ ہِشَامٍ أَنَّہُ طَلَّقَ امْرَأَتَہُ ثُمَّ ارْتَحَلَ إِلَی الْمَدِینَۃِ لِیَبِیعَ عَقَارًا لَہُ بِہَا وَیَجْعَلَہُ فِی السِّلَاحِ وَالْکُرَاعِ ثُمَّ یُجَاہِدَ الرُّومَ حَتّٰی یَمُوتَ فَلَقِیَ رَہْطًا مِنْ قَوْمِہِ فَحَدَّثُوہُ أَنَّ رَہْطًا مِنْ قَوْمِہِ سِتَّۃً أَرَادُوا ذٰلِکَ عَلٰی عَہْدِ رَسُولِ اللّٰہِ صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ فَقَالَ: ((أَلَیْسَ لَکُمْ فِیَّ أُسْوَۃٌ حَسَنَۃٌ۔)) فَنَہَاہُمْ عَنْ ذٰلِکَ فَأَشْہَدَہُمْ عَلٰی رَجْعَتِہَا ثُمَّ رَجَعَ إِلَیْنَا فَأَخْبَرَنَا أَنَّہُ أَتَی ابْنَ عَبَّاسٍ فَسَأَلَہُ عَنْ الْوَتْرِ فَذَکَرَ حَدِیْثًا طَوِیْلا جِدًّا۔ (مسند احمد: ۲۴۷۷۳)
۔ سیدنا سعد بن ہشام ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے روایت ہے کہ انھوں نے اپنی بیوی کو طلاق دی، پھر مدینہ کی جانب سفر کیا تاکہ وہاں موجود اپنی جاگیر کو فروخت کریں اور اسے ہتھیار اورگھوڑے خریدنے پر صرف کریں اور رومیوں کے خلاف جنگ کرتے ہوئے شہید ہو جائیں، اس دوران ان کی ملاقات اپنے قبیلہ کے کچھ لوگوں کے ساتھ ہوئی، انہوں نے بتایا کہ نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے زمانہ میں چھ افراد نے اسی طرح کا عزم ظاہر کیا تھا، لیکن آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے ان سے فرمایا تھا کہ کیا تمہارے لیے میرے اندر عمدہ نمونہ نہیں ہے؟ پھر آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے انہیں ایسا کرنے سے روک دیا، یہ سن کر سیدنا سعد نے انہیں گواہ بنا کر کہا کہ اس نے اپنی بیوی سے رجوع کیا، پھر وہ ہماری طرف آئے اور ہمیں بتایا کہ وہ سیدنا ابن عباس ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ کے پاس گئے اور ان سے وتر کے متعلق سوال کیا، پھر طویل حدیث بیان کی۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7176

۔ (۷۱۷۶)۔عَنِ ابْنِ عُمَرَ قَالَ: سُئِلَ النَّبِیُّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم عَنِ الرَّجُلِ یُطَلِّقُ اِمْرَاَتَہُ ثَلَاثًا فَیَتَزَوَّجُہَا آخَرُ فَیُغْلِقُ الْبَابَ وَیُرْخِی السِّتْرَ ثُمَّ یُطَلِّقُہَا قَبْلَ اَنْ یَدْخُلَ بِھَا ھَلْ تَحِلُّ لِلْاَوَّلِ؟ قَالَ: ((لَا حَتّٰی یَذُوْقَ الْعُسَیْلَۃَ))۔ (مسند احمد: ۴۷۷۶)
۔ سیدنا عبداللہ بن عمر ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے مروی ہے نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم سے اس آدمی کے بارے میں دریافت کیا گیا، جس نے اپنی بیوی کو تین طلاقیں دے دی ہوں، پھر کسی دوسرے شخص نے اس سے شادی کر کے دروازہ بند کیا ہو اور پردہ لٹکا لیا ہو (یعنی خلوت میں لے گیا ہو)،لیکن پھربغیر جماع کیے اسے طلاق دے دے، تو کیا یہ عورت پہلے خاوند کے لیے حلال ہو سکتی ہے؟ آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: نہیں، اس وقت تک حلال نہیں ہو سکتی، جب تک دوسرا شوہر اس سے جماع کرکے لطف اندوز نہ ہو لے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7177

۔ (۷۱۷۷)۔عَنْ عائشۃ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا قَالَتْ: سُئِلَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم (قَالَ اَبِیْ: وَلَمْ یَرْفَعْہُ یَعْلٰی) عَنْ رَجُلٍ طَلَّقَ اِمْرَاَتَہُ فَتَزَوَّجَتْ زَوْجًا غَیْرَہُ فَدَخَلَ بِہَا ثُمَّ طَلَّقَہَا قَبْلَ اَنْ یُوَافِعَہَا اَتَحِلُّ لِزَوْجِہَا الْاَوَّلِ؟ قَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم : ((لَا تَحِلُّ لِلْاَوَّلِ حَتّٰی یَذُوْقَ الْآخَرُ عُسَیْلَتَہَا وَتَذُوْقَ عُسَیْلَتَہُ))۔ (مسند احمد: ۲۴۶۵۰)
۔ سیدہ عائشہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا بیان کرتی ہیں کہ نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم سے ایسے شخص کے بارے میں پوچھا گیا،جس نے اپنی بیوی کو (تین) طلاقیں دے دیں، پھر اس عورت نے کسی دوسرے شخص سے شادی کرلی، پھر وہ اس کے پاس تو گیا لیکن جماع کرنے سے پہلے اسے طلاق دے دی، اب کیا وہ پہلے شوہر سے دوبارہ نکاح کر سکتی ہے؟ آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: وہ عورت تب تک پہلے شوہر سے نکاح نہیں کر سکتی، جب تک دوسرا شوہر اور وہ باہمی طور پرجنسی تعلق سے لطف اندوز نہ ہو لیں۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7178

۔ (۷۱۷۸)۔وَعَنْ اَنَسِ بْنِ مَالِکٍ بِنَحْوِہِ (وَفِیْہِ) فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم : ((لَا، حَتّٰی یَکُوْنَ الْآخَرُ ذَاقَ مِنْ عُسَیْلَتِہَا وَذَاقَتْ مِنْ عُسَیْلَتِہِ))۔ (مسند احمد: ۱۴۰۶۹)
۔ سیدنا انس بن مالک ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ نے بھی اسی قسم کی حدیث بیان کی ہے، البتہ اس میں ہے: نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: نہیں! جب تک وہ دونوں ایک دوسرے سے جنسی تعلق قائم کر کے لطف اندوز نہ ہو لیں۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7179

۔ (۷۱۷۹)۔عَنْ عُبَیْدِ اللّٰہِ بْنِ الْعَبَّاسِ قَالَ: جَائَ تِ الْغُمَیْصَائُ اَوِ الرُّمَیْصَائُ اِلٰی رَسُوْلِ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم تَشْکُوْ زَوْجَہَا وَ تَزْعَمُ اَنَّہُ لَا یَصِلُ اِلَیْہَا فَمَا کَانَ اِلَّا یَسِیْرًا حَتّٰی جَائَ زَوْجُہَا فَزَعَمَ اَنَّہَا کَاذِبَۃٌ وَلٰکِنَّہَا تُرِیْدُ اَنْ تَرْجِعَ اِلٰی زَوْجِہَا الْاَوَّلِ، فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم : ((لَیْسَ لَکِ ذٰلِکِ حَتّٰی یَذُوْقَ عُسَیْلَتَکِ رَجُلٌ غَیْرُہُ))۔ (مسند احمد: ۱۸۳۷)
۔ سیدنا عبید اللہ بن عباس ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے روایت ہے کہ غمیصاء یا رمیصاء نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے پاس آئی اور اپنے خاوند کی شکایت کی اور اس نے یہ تاثر بھی دیا کہ اس کا خاوند اس تک پہنچ نہیں پاتا (یعنی اس میں جماع کی صلاحیت نہیں ہے) ،تھوڑی دیر تک اس کا خاوند بھی آ گیا اور اس نے بتایا کہ یہ غلط بیانی سے کام لے رہی ہے، اس کا مقصد یہ ہے کہ یہ کسی طرح پہلے خاوند کے پاس چلی جائے، نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے اس عورت سے فرمایا: اس کی تجھے اس وقت تک اجازت نہیں، جب تک دوسرا مرد تجھ سے بذریعہ نکاح لطف اندوز نہ ہو جائے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7180

۔ (۷۱۸۰)۔عَنْ عَائِشَۃَ اِنَّ النَّبِیَّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم قَالَ: ((اَلْعُسَیْلَۃُ ھِیَ الْجِمَاعُ))۔ (مسند احمد: ۲۴۸۳۵)
۔ سیدہ عائشہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا سے مروی ہے کہ نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: اَلْعُسَیْلَۃ سے مراد جماع ہے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7181

۔ (۷۱۸۱)۔وَعَنْہَا اَیْضًا قَالَتْ: دَخَلَتِ امْرَاَۃُ رِفَاعَۃَ الْقُرَظِیِّ وَاَنَا وَاَبُوْ بَکْرٍ عِنْدَ النَّبِیِّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم فَقَالَتْ: اِنَّ رِفَاعَۃَ طَلَّقَنِیَ الْبَتَّۃَ وَاِنَّ عَبْدَ الرَّحْمٰنِ بْنَ الزُّبَیْرِ تَزَوَّجَنِیَ وَاِنَّمَا عِنْدَہُ مِثْلُ ھُدْبَتِیْ، وَاَخَذَتْ ھُدْبَۃً مِنْ جِلْبَابِہَا، وَخَالِدُ بْنُ سَعِیْدٍ بِالْبَابِ لَمْ یُوْذَنْ لَہُ، فَقَالَ: یَا اَبَا بَکْرٍ! اَلَا تَنْہٰی ھٰذِہِ عَمَّا تَجْہُرُ بِہِ بَیْنَ یَدَیْ رَسُوْلِ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم فَمَا زَادَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم عَلَی التَّبَسُّمِ، فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم : ((کَاَنَّکِ تُرِیْدِیْنَ اَنْ تَرْجِعِیْ اِلٰی رِفَاعَۃَ؟ لَا، حَتّٰی تَذُوْقِیٰ عُسَیْلَتَہُ وَیَذُوْقَ عُسَیْلَتَکِ))۔ (مسند احمد: ۲۴۵۵۹)
۔ سیدہ عائشہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا سے روایت ہے کہ سیدنا رفاعہ قرظی ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ کی بیوی آئی، جبکہ میں اور سیدنا ابوبکر ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ بھی نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے پاس بیٹھے تھے، وہ کہنے لگی کہ رفاعہ نے مجھے طلاق بتّہ دے دی ہے اور سیدنا عبد الرحمن بن زبیر ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے میری شادی ہو گئی ہے، لیکن اس کا خاص عضو تو میرے اس کپڑے کے جھالر کی طرح ہے، پھر اس نے اپنی چادر کا جھالر پکڑ کر وضاحت کی، اُدھر سیدنا خالد بن سعید ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ دروازے پر کھڑے تھے، انہیں ابھی اندر آنے کی اجازت نہیں ملی تھی، انھوں نے باہر سے ہی کہا: اے ابوبکر! تم اس خاتون کو منع کیوں نہیں کرتے، یہ کس طرح کھلے انداز میں رسول اللہ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کے سامنے اس قسم کی باتیں کر رہی ہے، اس پر نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے بس زیر لب مسکرا دیا اور کچھ نہ کہا، پھر آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: کیا تیرا ارادہ یہ ہے کہ تو دوبارہ رفاعہ کے پاس چلی جائے، نہیں، بالکل نہیں، تو اس وقت تک نہیں جا سکتی، جب تک کہ تو اس خاوند سے مزہ نہ اٹھا لے اور وہ تجھ سے لطف اندوز نہ ہو لے۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7182

۔ (۷۱۸۲)۔عَنْ عَطَائِ نِالْخُرَاسَانِیِّ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ نَحْوَہُ وَزَادَ: ثُمَّ جَائَ تْہُ بَعْدُ فَاَخْبَرَتْہُ اَنْ قَدْ مَسَّہَا فَمَنَعَھَا اَنْ تَرْجِعَ اِلٰی زَوْجِہَا الْاَوَّلِ، وَقَالَ: ((اَللّٰہُمَّ اِنْ کَانَ اِیْمَانُہُ اَنْ یُحِلَّہَا لِرِفَاعَۃَ فَلَا یَتِمُّ لَہُ نِکَاحُھَا مَرَّۃً اُخْرٰی۔)) ثُمَّ اَتَتْ اَبَا بَکْرٍ وَعُمَرَ فِیْ خِلَافَتِہِمَا فَمَنَعَاھَا کِلَاھُمَا۔ (مسند احمد: ۳۴۴۱)
۔ سیدنا عبداللہ بن عباس ‌رضی ‌اللہ ‌عنہ سے بھی اسی قسم کی حدیث مروی ہے، البتہ اس میں یہ الفاظ زائد ہیں: پھر وہ عورت دوبارہ نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم کی خدمت میں آئی اور کہنے لگی کہ اس کا شوہر اس سے جماع کرچکاہے، لیکن پھر بھی آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے اسے پہلے شوہر کی طرف لوٹنے سے منع کر دیا، اور آپ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے دعا کی: اے اللہ! اگراس عورت کا ارادہ یہی ہے کہ وہ رفاعہ کے لئے اسے حلال کرے تو اس کا دوبارہ نکاح پو را نہ ہو۔ بعدازاں وہ عورت سیدنا ابوبکر صدیق اور سیدنا عمر بن خطاب ‌رضی ‌اللہ ‌عنہما کے دور خلافت میں ان کے پا س (اسی غرض) سے آئی تو ان دونوں نے بھی اسے منع کردیا۔
Share Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 7183

۔ (۷۱۸۳)۔عَنْ عائشۃ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا قَالَتْ: طَلَّقَ رَجُلٌ اِمْرَاَتَہُ فَتَزَوَّجَتْ زَوْجًا غَیْرَہُ فَدَخَلَ بِہَا، وَکَانَ مَعَہُ مِثْلُ الْھُدْبَۃِ فَلَمْ یَقْرُبْہَا اِلَّا ھبَّۃً وَاحِدَۃً لَمْ یَصِلْ مِنْہَا اِلٰی شَیْئٍ، فَذَکَرَتْ ذَالِکِ لِلنَّبِیِّ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم فَقَالَتْ: اَحِلُّ لِزَوْجِی الْاَوَّلِ؟ فَقَالَ رَسُوْلُ اللّٰہِ ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم : ((لا تَحِلِّیْ لِزَوْجِکِ الْاَوَّلِ حَتّٰی یَذُوْقَ الْاٰخَرُ عُسَیْلَتَکِ وَتَذُوْقِیْ عُسَیْلَتَہُ))۔ (مسند احمد: ۲۶۴۴۵)
۔ سیدہ عائشہ ‌رضی ‌اللہ ‌عنہا سے روایت ہے کہ ایک آدمی نے اپنی بیوی کو (تین) طلاقیں دیں، اس نے دوسرے خاوند سے شادی کر لی، وہ اس کے پاس آیا، لیکن اس کا عضو خاص کپڑے کی جھالر کی مانند تھا، وہ اس کے قریب صرف ایک مرتبہ ہی آیا تھا اور اس بار بھی جماع نہ ہو سکا، اس عورت نے نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم سے اس چیز کا ذکر کیا اور کہا: کیا میں پہلے خاوند کے حق میں حلال ہوں، نبی کریم ‌صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا: تو اپنے پہلے خاوند کے لیے حلال نہیں ہو سکتی، تاوقتیکہ دوسرا خاوند تجھ سے لذت اندوز نہ ہو جائے اور تو اس سے لذت اندوز نہ ہو جائے۔

آیت نمبر