256 Results For Hadith (Sunan Nisai) Book (The Book of Financial Transactions)
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4454

أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ أَبُو قُدَامَةَ السَّرْخَسِيُّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُفْيَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَنْصُورٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُمَارَةَ بْنِ عُمَيْرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمَّتِهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ أَطْيَبَ مَا أَكَلَ الرَّجُلُ مِنْ كَسْبِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ وَلَدَ الرَّجُلِ مِنْ كَسْبِهِ .
It was narrated that 'Aishah said: The Messenger of Allah said: The best (most Pure) food that a man eats is that which he has earned himself, and a man's child (and his child's wealth) is part of his earnings (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سب سے پاکیزہ کھانا وہ ہے جو آدمی اپنی ( محنت کی ) کمائی سے کھائے، اور آدمی کی اولاد اس کی کمائی ہے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4455

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَعْمَشُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُمَارَةَ بْنِ عُمَيْرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمَّةٍ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ أَوْلَادَكُمْ مِنْ أَطْيَبِ كَسْبِكُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَكُلُوا مِنْ كَسْبِ أَوْلَادِكُمْ .
It was narrated from 'Aishah that the Prophet said: Your children are part of the best of your earnings, so eat from what your children earn.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تمہاری اولاد سب سے پاکیزہ کمائی ہے، لہٰذا تم اپنی اولاد کی کمائی میں سے کھاؤ“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4456

أَخْبَرَنَا يُوسُفُ بْنُ عِيسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا الْفَضْلُ بْنُ مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا الْأَعْمَشُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَسْوَدِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ أَطْيَبَ مَا أَكَلَ الرَّجُلُ مِنْ كَسْبِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَوَلَدُهُ مِنْ كَسْبِهِ .
It was narrated that 'Aishah said: The Messenger of Allah said: 'The best (most pure) food that a man eats is that which he has earned himself, and his child (and his child's wealth) is part of his earning,
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سب سے پاکیزہ کھانا وہ ہے جو آدمی اپنی کمائی سے کھائے اور اس کی اولاد بھی اس کی کمائی ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4457

أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَفْصِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ النَّيْسَابُورِيُّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ طَهْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُمَرَ بْنِ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَعْمَشِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَسْوَدِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ أَطْيَبَ مَا أَكَلَ الرَّجُلُ مِنْ كَسْبِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ وَلَدَهُ مِنْ كَسْبِهِ .
It was narrated that 'Aishah said: The Messenger of Allah said: 'The best (most pure) food that a man eats is that which he has earned himself, and his child (and his child's wealth) is part of his earning.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سب سے پاکیزہ کھانا وہ ہے جو آدمی اپنی کمائی سے کھائے اور اس کی اولاد بھی اس کی کمائی ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4458

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى الصَّنْعَانِيُّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ وَهُوَ ابْنُ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عَوْنٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الشَّعْبِيِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ النُّعْمَانَ بْنَ بَشِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَوَاللَّهِ لَا أَسْمَعُ بَعْدَهُ أَحَدًا، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ إِنَّ الْحَلَالَ بَيِّنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ الْحَرَامَ بَيِّنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ بَيْنَ ذَلِكَ أُمُورًا مُشْتَبِهَاتٍ ، ‏‏‏‏‏‏وَرُبَّمَا قَالَ:‏‏‏‏ وَإِنَّ بَيْنَ ذَلِكَ أُمُورًا مُشْتَبِهَةً ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَسَأَضْرِبُ لَكُمْ فِي ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏مَثَلًا إِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ حَمَى حِمًى، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ حِمَى اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ مَا حَرَّمَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّهُ مَنْ يَرْتَعُ حَوْلَ الْحِمَى يُوشِكُ أَنْ يُخَالِطَ الْحِمَى ، ‏‏‏‏‏‏وَرُبَّمَا قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّهُ مَنْ يَرْعَى حَوْلَ الْحِمَى يُوشِكُ أَنْ يُرْتِعَ فِيهِ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ مَنْ يُخَالِطُ الرِّيبَةَ يُوشِكُ أَنْ يَجْسُرَ .
An-Nu'man bin Bashir said: I heard the Messenger of Allah say: That which is lawful is plain and that which is unlawful is plain, and between them are matters which are not as clear. I will strike a parable for you about that: indeed Allah, the Mighty and Sublime, has established a sanctuary, and the sanctuary of Allah is that which He has forbidden. Whoever approaches the sanctuary is bound to transgress upon it, Or he said: 'Whoever grazes around the sanctuary will soon transgress upon it, and whoever indulges in matters that are not clear, he will soon transgress beyond the limits,
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا ( اللہ کی قسم، میں آپ سے سن لینے کے بعد کسی سے نہیں سنوں گا ) آپ فرما رہے تھے: ”حلال واضح ہے اور حرام واضح ہے، ان دونوں کے بیچ کچھ شبہ والی چیزیں ہیں“ ( یا آپ نے «مشتبہات» کے بجائے «مشتبھۃً» کہا ۱؎ ) - اور فرمایا: ”میں تم سے اس سلسلے میں ایک مثال بیان کرتا ہوں: اللہ تعالیٰ نے ایک چراگاہ بنائی تو اللہ کی چراگاہ یہ محرمات ہیں، جو جانور بھی اس چراگاہ کے پاس چرے گا قریب ہے کہ وہ اس میں داخل ہو جائے“ یا یوں فرمایا: ”جو بھی اس چراگاہ کے جانور پاس چرائے گا قریب ہے کہ وہ جانور اس میں سے میں چر لے۔ اور جو مشکوک کام کرے تو قریب ہے کہ وہ ( حرام کام کرنے کی ) جرات کر بیٹھے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4459

حَدَّثَنَا الْقَاسِمُ بْنُ زَكَرِيَّا بْنِ دِينَارٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ الْحَفَرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُفْيَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْمَقْبُرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يَأْتِي عَلَى النَّاسِ زَمَانٌ مَا يُبَالِي الرَّجُلُ مِنْ أَيْنَ أَصَابَ الْمَالَ مِنْ حَلَالٍ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ حَرَامٍ .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: 'There will come a time when a man will not care where his wealth comes from, whether (the source is) Halal or Haram.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”لوگوں پر ایک ایسا زمانہ آئے گا کہ آدمی کو اس بات کی فکر و پروا نہ ہو گی کہ اسے مال کہاں سے ملا، حلال طریقے سے یا حرام طریقے سے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4460

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عَدِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ دَاوُدَ بْنِ أَبِي هِنْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي خَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ يَأْتِي عَلَى النَّاسِ زَمَانٌ يَأْكُلُونَ الرِّبَا، ‏‏‏‏‏‏فَمَنْ لَمْ يَأْكُلْهُ أَصَابَهُ مِنْ غُبَارِهِ .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: There will come a time when there will be no one left who does not consume Riba, and whoever does not consume it will nevertheless be affected by residue. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”لوگوں پر ایک ایسا زمانہ آئے گا کہ وہ سود کھائیں گے اور جس نے اسے نہیں کھایا، اس پر بھی اس کا غبار پڑ کر رہے گا“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4461

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا وَهْبُ بْنُ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يُونُسَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ تَغْلِبَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ مِنْ أَشْرَاطِ السَّاعَةِ، ‏‏‏‏‏‏أَنْ يَفْشُوَ الْمَالُ، ‏‏‏‏‏‏وَيَكْثُرَ، ‏‏‏‏‏‏وَتَفْشُوَ التِّجَارَةُ، ‏‏‏‏‏‏وَيَظْهَرَ الْعِلْمُ، ‏‏‏‏‏‏وَيَبِيعَ الرَّجُلُ الْبَيْعَ، ‏‏‏‏‏‏فَيَقُولَ:‏‏‏‏ لَا حَتَّى أَسْتَأْمِرَ تَاجِرَ بَنِي فُلَانٍ، ‏‏‏‏‏‏وَيُلْتَمَسَ فِي الْحَيِّ الْعَظِيمِ الْكَاتِبُ فَلَا يُوجَدُ .
It was narrated that 'Amr bin Taghilb said: The Messenger of Allah said: 'One of the portents of the Hour will be that wealth becomes widespread and abundant, and trade will become widespread, but knowledge will disappear. A man will try to sell something and will say: No, not until I consult the merchant of banu so and so: and People will look throughout a vast area for a scribe and will not find one. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”قیامت کی نشانیوں میں سے ایک نشانی یہ ہے کہ مال و دولت کا پھیلاؤ ہو جائے گا اور بہت زیادہ ہو جائے گا، تجارت کو ترقی ہو گی، علم اٹھ جائے گا ۱؎، ایک شخص مال بیچے گا، پھر کہے گا: نہیں، جب تک میں فلاں گھرانے کے سوداگر سے مشورہ نہ کر لوں، اور ایک بڑی آبادی میں کاتبوں کی تلاش ہو گی لیکن وہ نہیں ملیں گے“ ۲؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4462

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي قَتَادَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حَكِيمِ بْنِ حِزَامٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ، ‏‏‏‏‏‏مَا لَمْ يَفْتَرِقَا، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ صَدَقَا وَبَيَّنَا بُورِكَ فِي بَيْعِهِمَا، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ كَذَبَا، ‏‏‏‏‏‏وَكَتَمَا مُحِقَ بَرَكَةُ بَيْعِهِمَا .
It was narrated that Hakim bin Hizam said: The Messenger of Allah said: 'The two parties to a transaction have the choice so long as they have not separated. If they are honest and open, their transaction will be blessed, but if they tell lies and conceal anything, the blessing of their transaction will be lost.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کو جدا ہونے تک ( مال کے بیچنے اور نہ بیچنے کے بارے میں ) اختیار حاصل ہے، اگر سچ بولیں گے اور ( عیب و ہنر کو ) صاف صاف بیان کر دیں گے تو ان کی خرید و فروخت میں برکت ہو گی، اور اگر جھوٹ بولیں گے اور عیب کو چھپائیں گے تو ان کی خرید و فروخت کی برکت جاتی رہے گی“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4463

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَلِيِّ بْنِ مُدْرِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي زُرْعَةَ بْنِ عَمْرِو بْنِ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَرَشَةَ بْنِ الْحُرِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي ذَرٍّ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ ثَلَاثَةٌ لَا يُكَلِّمُهُمُ اللَّهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يَنْظُرُ إِلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يُزَكِّيهِمْ، ‏‏‏‏‏‏وَلَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ ، ‏‏‏‏‏‏فَقَرَأَهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو ذَرٍّ:‏‏‏‏ خَابُوا، ‏‏‏‏‏‏وَخَسِرُوا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الْمُسْبِلُ إِزَارَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمُنَفِّقُ سِلْعَتَهُ بِالْحَلِفِ الْكَاذِبِ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمَنَّانُ عَطَاءَهُ .
It was narrated from Abu Dharr that the Prophet said: There are three to whom Allah will not speak on the Day of Resurrection, or will He look at them, or sanctify them, and theirs will be a painful torment: Abu Dharr said: May they be lost and doomed: He said: The one who drags his Izar (below the ankles) the one who sells his product by means of false oaths, and the one who reminds others (Al-Mannan) of what he has given to them
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تین لوگ ہیں جن سے اللہ تعالیٰ قیامت کے دن نہ بات چیت کرے گا، اور نہ ان کی طرف دیکھے گا اور نہ ہی انہیں گناہوں سے پاک کرے گا اور ان کے لیے درد ناک عذاب ہو گا“، پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے آیت پڑھی ۱؎ تو ابوذر رضی اللہ عنہ نے کہا: وہ لوگ ناکام ہو گئے اور خسارے میں پڑ گئے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اپنے تہبند کو ٹخنے سے نیچے لٹکانے والا ۲؎، جھوٹی قسم کھا کر اپنے سامان کو بیچنے والا، دے کر باربار احسان جتانے والا“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4464

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي سُلَيْمَانُ الْأَعْمَشُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ مُسْهِرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَرَشَةَ بْنِ الْحُرِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي ذَرٍّ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ ثَلَاثَةٌ لَا يَنْظُرُ اللَّهُ إِلَيْهِمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يُزَكِّيهِمْ، ‏‏‏‏‏‏وَلَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ، ‏‏‏‏‏‏الَّذِي لَا يُعْطِي شَيْئًا إِلَّا مَنَّهُ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمُسْبِلُ إِزَارَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَالْمُنَفِّقُ سِلْعَتَهُ بِالْكَذِبِ .
It was narrated from Abu Dharr that the Prophet said: There are three at whom Allah will not look on the Day of Resurrection, nor will He sanctify them, and theirs will be a painful torment: the one who does not give anything but he reminds (the recipient of his gift), the one who drags his Izar (below the ankles), and the one who sells his product by means of false oaths. (Sahih )
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تین لوگ ہیں جن کی طرف اللہ تعالیٰ قیامت کے دن نہیں دیکھے گا، اور نہ انہیں گناہوں سے پاک کرے گا، اور ان کے لیے درد ناک عذاب ہے: وہ شخص جو کوئی بھی چیز دیتا ہے تو احسان جتاتا ہے، جو غرور اور گھمنڈ سے تہبند لٹکاتا ہے اور جو جھوٹ بول کر اپنا سامان بیچتا ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4465

أَخْبَرَنَا هَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي الْوَلِيدُ يَعْنِي ابْنَ كَثِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَعْبَدِ بْنِ كَعْبِ بْنِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي قَتَادَةَ الْأَنْصَارِيِّ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ سَمِعَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ إِيَّاكُمْ وَكَثْرَةَ الْحَلِفِ فِي الْبَيْعِ فَإِنَّهُ يُنَفِّقُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ يَمْحَقُ .
It was narrated from Abu Qatadah Al-Ansari that he heard the Messenger of Allah say: Beware of taking oaths a great deal when selling, for it may help you to make a sale but it destroys the blessing.
انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: ”تم لوگ خرید و فروخت میں کثرت سے قسم کھانے سے بچو، اس لیے کہ ( قسم کھانے سے ) سامان تو بک جاتا ہے، لیکن برکت ختم جاتی رہتی ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4466

أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ السَّرْحِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ وَهْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يُونُسَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ شِهَابٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْحَلِفُ مَنْفَقَةٌ لِلسِّلْعَةِ، ‏‏‏‏‏‏مَمْحَقَةٌ لِلْكَسْبِ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet said: Taking oaths may help you to make a sale but it takes (blessing) away from the earnings (Sahih )
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”قسم کھانے سے سامان بک تو جاتا ہے، لیکن کمائی ( کی برکت ) ختم ہو جاتی ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4467

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا جَرِيرٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْأَعْمَشِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي صَالِحٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ ثَلَاثَةٌ لَا يُكَلِّمُهُمُ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يَنْظُرُ إِلَيْهِمْ يَوْمَ الْقِيَامَةِ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا يُزَكِّيهِمْ، ‏‏‏‏‏‏وَلَهُمْ عَذَابٌ أَلِيمٌ، ‏‏‏‏‏‏رَجُلٌ عَلَى فَضْلِ مَاءٍ بِالطَّرِيقِ يَمْنَعُ ابْنَ السَّبِيلِ مِنْهُ، ‏‏‏‏‏‏وَرَجُلٌ بَايَعَ إِمَامًا لِدُنْيَا إِنْ أَعْطَاهُ مَا يُرِيدُ وَفَّى لَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ لَمْ يُعْطِهِ لَمْ يَفِ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَرَجُلٌ سَاوَمَ رَجُلًا عَلَى سِلْعَةٍ بَعْدَ الْعَصْرِ فَحَلَفَ لَهُ بِاللَّهِ لَقَدْ أُعْطِيَ بِهَا كَذَا وَكَذَا فَصَدَّقَهُ الْآخَرُ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah said: There are three to whom Allah will not speak on the Day of Resurrection, or will He look at them, or sanctify them and theirs will be a painful torment: A man who has surplus water when traveling but he withholds it form a wayfarer; a man who swears allegiance to an imam for worldly gains, and if he gives him what he wants he is loyal to him but if he does not give him anything he is not loyal to him: and a man who sells a man his product after 'Asr, swerving by Allah that he bought it for such and such a price, and the other believes him.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تین لوگ ہیں قیامت کے دن اللہ ان کی طرف نہیں دیکھے گا اور نہ انہیں گناہوں سے پاک کرے گا، ان کے لیے درد ناک عذاب ہے: ایک شخص وہ ہے جو راستے میں فاضل پانی کا مالک ہو اور مسافر کو دینے سے منع کرے، ایک وہ شخص جو دنیا کی خاطر کسی امام ( خلیفہ ) کے ہاتھ پر بیعت کرے، اگر وہ اس کا مطالبہ پورا کر دے تو عہد بیعت کو پورا کرے اور مطالبہ پورا نہ کرے تو عہد بیعت کو پورا نہ کرے، ایک وہ شخص جو عصر بعد کسی شخص سے کسی سامان پر مول تول کرے اور اس کے لیے اللہ کی قسم کھائے کہ یہ اتنے اتنے میں لیا گیا تھا تو دوسرا ( یعنی خریدنے والا ) اسے سچا جانے ( حالانکہ اس نے اس سے کم قیمت میں خریدی تھی ) ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4468

أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ قُدَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ جَرِيرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَنْصُورٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي وَائِلٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ قَيْسِ بْنِ أَبِي غَرَزَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا بِالْمَدِينَةِ نَبِيعُ الْأَوْسَاقَ وَنَبْتَاعُهَا، ‏‏‏‏‏‏وَنُسَمِّي أَنْفُسَنَا السَّمَاسِرَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَيُسَمِّينَا النَّاسُ، ‏‏‏‏‏‏فَخَرَجَ إِلَيْنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَسَمَّانَا بِاسْمٍ هُوَ خَيْرٌ لَنَا مِنَ الَّذِي سَمَّيْنَا بِهِ أَنْفُسَنَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا مَعْشَرَ التُّجَّارِ، ‏‏‏‏‏‏إِنَّهُ يَشْهَدُ بَيْعَكُمُ الْحَلِفُ، ‏‏‏‏‏‏وَاللَّغْوُ، ‏‏‏‏‏‏فَشُوبُوهُ بِالصَّدَقَةِ .
It was narrated that Qays bin Abi Gharazah said: We used to trade in the markets of Al-Madinah and we used to call ourselves as-Samasir (brokers) and the people called us that, but the Messenger of Allah came out to s and called us by a name that was better than what we called ourselves. He said: O merchants (Tujjar)! Selling involves (false) oaths and idle talk, so mix some charity with it, (Sahih )
ہم مدینے میں ( غلوں سے بھرے ) وسق خریدتے اور بیچتے تھے، اور ہم اپنا نام «سمسار» ( دلال ) رکھتے تھے، لوگ بھی ہمیں اسی نام سے پکارتے تھے، ایک دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے پاس نکل کر آئے اور ہمارا ایسا نام رکھا جو ہمارے رکھے ہوئے نام سے بہتر تھا، اور فرمایا: ”اے تاجروں کی جماعت! تمہاری خرید و فروخت میں قسم اور لغو باتیں آ جاتی ہیں، لہٰذا تم اس میں صدقہ کو ملا دیا کرو“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4469

‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا أَبُو الْأَشْعَثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدٌ وَهُوَ ابْنُ أَبِي عَرُوبَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ قَتَادَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ صَالِحٍ أَبِي الْخَلِيلِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حَكِيمِ بْنِ حِزَامٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ، ‏‏‏‏‏‏مَا لَمْ يَفْتَرِقَا، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ بَيَّنَا وَصَدَقَا بُورِكَ لَهُمَا فِي بَيْعِهِمَا، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ كَذَبَا وَكَتَمَا، ‏‏‏‏‏‏مُحِقَ بَرَكَةُ بَيْعِهِمَا .
It was narrated that Hakim bin Hizam said: The Messenger of Allah said: The two parties to a transaction have the choice so long as they have not separated. If they are honest and open, their transaction will be blessed, but if they tell lies and conceal anything the blessing of their transaction will be lost.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”خریدنے اور بیچنے والے جب تک جدا نہ ہو جائیں دونوں کو اختیار رہتا ہے ۱؎، اگر وہ عیب بیان کر دیں اور سچ بولیں تو ان کی خرید و فروخت میں برکت ہو گی، اور اگر وہ جھوٹ بولیں اور عیب چھپائیں تو ان کی بیع کی برکت ختم ہو جاتی ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4470

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ وَاللَّفْظُ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ الْقَاسِمِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مَالِكٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْمُتَبَايِعَانِ كُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا بِالْخِيَارِ عَلَى صَاحِبِهِ، ‏‏‏‏‏‏مَا لَمْ يَفْتَرِقَا، ‏‏‏‏‏‏إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Malik, from Nafi from'Abdullah bin 'Umar that the Messenger of Allah said: The two parties to a transaction both have the choice so long as they both chosen to conclude the transaction. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”خریدنے اور بیچنے والا جب تک الگ الگ نہ ہو جائیں دونوں کو اپنے ساتھی پر اختیار رہتا ہے، سوائے اس بیع کے جس میں اختیار کی شرط ہو“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4471

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي نَافِعٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ، ‏‏‏‏‏‏مَا لَمْ يَفْتَرِقَا، ‏‏‏‏‏‏أَوْ يَكُونَ خِيَارًا .
It was narrated from Yahaya, from 'Ubaidullah who said: Nafi narrated to me from Ibn 'Umar, tht the Messenger of Allah said: 'the two parties to a transaction both have the choice so long as they have not separated, or they have chosen. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”خرید و فروخت کرنے والوں کو اس وقت تک اختیار رہتا ہے جب تک وہ الگ الگ نہ ہوں، یا پھر اختیار کی شرط ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4472

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَلِيٍّ الْمَرْوَزِيُّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحْرِزٌ بُنُ الْوَضَّاحُ،‏‏‏‏ عَنْ إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْمُتَبَايِعَانِ بِالْخِيَارِ مَا لَمْ يَفْتَرِقَا،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَكُونَ الْبَيْعُ كَانَ عَنْ خِيَارٍ،‏‏‏‏ فَإِنْ كَانَ الْبَيْعُ عَنْ خِيَارٍ فَقَدْ وَجَبَ الْبَيْعُ .
it was narrated from Ismail, from Nafi, that Ibn 'Umar said: The Messenger of Allah said: 'The two parties to a transaction both have the choice so long as they have not separated, unless they have both chosen to conclude they transaction. If they have both chosen to conclude the transaction, then the transaction is binding. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”خرید و فروخت کرنے والوں کو اس وقت تک اختیار رہتا ہے جب تک وہ الگ نہ ہوں، سوائے اس کے کہ بیع اختیار کی شرط کے ساتھ ہوئی ہو، لہٰذا اگر بیع اختیار کی شرط کے ساتھ ہوئی ہے تو بیع ہو جاتی ہے“ ( البتہ اختیار باقی رہتا ہے ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4473

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ مَيْمُونٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَمْلَى عَلَيَّ نَافِعٌ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا تَبَايَعَ الْبَيِّعَانِ فَكُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا بِالْخِيَارِ مِنْ بَيْعِهِ مَا لَمْ يَفْتَرِقَا،‏‏‏‏ أَوْ يَكُونَ بَيْعُهُمَا عَنْ خِيَارٍ،‏‏‏‏ فَإِنْ كَانَ عَنْ خِيَارٍ فَقَدْ وَجَبَ الْبَيْعُ .
It was narrated from Ibn Juraij: Nafi dictated to me, from Ibn 'Umar who said: The Messenger of Allah said: 'the two parties to a transaction both have the choice so long as they have not separated, unless they have both chosen to conclude the transaction. If they have both chosen to conclude the transaction, then the transactions binding. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جب دو آدمی بیع کریں تو ان میں سے ہر ایک کو اپنی بیع کا اس وقت تک اختیار رہتا ہے جب تک وہ دونوں الگ تھلگ نہ ہوں، یا پھر ان کی بیع میں اختیار کی شرط ہو، تو اگر بیع میں شرط اختیار ہو تو بیع ہو جاتی ہے ( لیکن حق اختیار باقی رہتا ہے ) “۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4474

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعيِدٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ مَا لَمْ يَفْتَرِقَا،‏‏‏‏ أَوْ يَقُولَ أَحَدُهُمَا لِلْآخَرِ اخْتَرْ .
It was a narrated from Ayyub, from Nafi from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah said: The Messenger of Allah said: The two parties to a transaction both have the choice who long as they have not separated or one of them says to the other: 'Decide! ' (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیع کرنے والے دونوں کو اس وقت تک اختیار رہتا ہے جب تک وہ الگ تھلگ نہ ہوں، یا پھر ان میں سے ایک دوسرے سے کہے کہ اختیار کی شرط کر لو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4475

أَخْبَرَنَا زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا أَيُّوبُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ حَتَّى يَفْتَرِقَا،‏‏‏‏ أَوْ يَكُونَ بَيْعَ خِيَارٍ ،‏‏‏‏ وَرُبَّمَا قَالَ نَافِعٌ:‏‏‏‏ أَوْ يَقُولَ:‏‏‏‏ أَحَدُهُمَا لِلْآخَرِ اخْتَرْ .
It was narrated from Ayyub, from Nafi from Ibn 'Umar, who said: The Messenger of Allah said: 'The two parties to a transaction both have the choice so long as they have not separated or chosen to conclude the transaction. Or perhaps Nafi said: Or one of them has said to the other: 'Decide! (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیع کرنے والے دونوں کو اختیار رہتا ہے جب تک الگ تھلگ نہ ہوں، یا پھر وہ اختیاری خرید و فروخت ہو“۔ نافع کی بعض روایتوں میں یوں ہے «‏أو يقول أحدهما للآخر اختر» ”یا ان میں سے ایک دوسرے سے یہ کہے: بیع میں اختیار کی شرط کرو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4476

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ حَتَّى يَفْتَرِقَا،‏‏‏‏ أَوْ يَكُونَ بَيْعَ خِيَارٍ ،‏‏‏‏ وَرُبَّمَا قَالَ نَافِعٌ:‏‏‏‏ أَوْ يَقُولَ أَحَدُهُمَا لِلْآخَرِ اخْتَرْ .
It was narrated from Al-Laith from Nafi from Ibn 'Umar who said: The Messenger of Allah said: 'The two parties to a transaction both have the choice so long as they have not separated or they have chosen to conclude the transaction.' Or perhaps Nafi said: Or one of them has said to the other: 'Decide! (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیع کرنے والے دونوں اختیار کے ساتھ رہتے ہیں یہاں تک کہ وہ الگ تھلگ ہو جائیں، یا بیع خیار ( اختیاری بیع ) کے ساتھ ہو“۔ کبھی کبھی نافع نے یوں کہا: ” «أو يقول أحدهما للآخر اختر» یا یہ کہ ان میں سے ایک دوسرے سے کہے: بیع بالخیار کرو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4477

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ إِذَا تَبَايَعَ الرَّجُلَانِ فَكُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا بِالْخِيَارِ حَتَّى يَفْتَرِقَا ،‏‏‏‏ وَقَالَ مَرَّةً أُخْرَى:‏‏‏‏ مَا لَمْ يَتَفَرَّقَا وَكَانَا جَمِيعًا أَوْ يُخَيِّرَ أَحَدُهُمَا الْآخَرَ،‏‏‏‏ فَإِنْ خَيَّرَ أَحَدُهُمَا الْآخَرَ فَتَبَايَعَا عَلَى ذَلِكَ فَقَدْ وَجَبَ الْبَيْعُ،‏‏‏‏ فَإِنْ تَفَرَّقَا بَعْدَ أَنْ تَبَايَعَا وَلَمْ يَتْرُكْ وَاحِدٌ مِنْهُمَا الْبَيْعَ فَقَدْ وَجَبَ الْبَيْعُ .
It was narrated from Al-Laith, from Nafi, from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah said: When two men enter into a transaction, each of them has the choice until they separate. On one occasion he said: So long as they have not separated and one has not told the other to decide. If one tells the other to decide and they agree upon something, then the transaction is binding. If they separate after entering into a transaction and neither of them has canceled the transaction, then the transaction is binding. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جب دو آدمی آپس میں خریدیں اور بیچیں تو ان میں سے ہر ایک کو اس وقت تک اختیار ہوتا ہے جب تک وہ جدا نہ ہوں، اور ایک دوسری بار نافع نے ( «حتى يفترقا» کے بجائے ) «ما لم يتفرقا» کہا، حالانکہ وہ دونوں ایک جگہ تھے، یا یہ کہ ان میں سے ایک دوسرے کو اختیار دیدے، لہٰذا اگر ان میں سے ایک دوسرے کو اختیار دیدے اور وہ دونوں اس ( شرط خیار ) پر بیع کر لیں تو بیع ہو جائے گی، اب اگر وہ دونوں بیع کرنے کے بعد جدا ہو جائیں اور ان میں سے کسی ایک نے بیع ترک نہ کی تو بیع ہو جائے گی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4478

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ يَحْيَى بْنَ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ نَافِعًا يُحَدِّثُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ الْمُتَبَايِعَيْنِ بِالْخِيَارِ فِي بَيْعِهِمَا مَا لَمْ يَفْتَرِقَا،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَكُونَ الْبَيْعُ خِيَارًا ،‏‏‏‏ قَالَ نَافِعٌ:‏‏‏‏ فَكَانَ عَبْدُ اللَّهِ إِذَا اشْتَرَى شَيْئًا يُعْجِبُهُ فَارَقَ صَاحِبَهُ.
It was narrated from Yahya bin Sa 'eed who said: I heard Nafi narrating from Ibn 'Umar, form the Messenger of Allah 'the two parties to a transaction both have the choice so long as they have not separated unless they have chosen to conclude the transaction. Nafi said: ''When 'Abdullah bought something he like, he would leave straightaway.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”خرید و فروخت کرنے والے دونوں اپنی بیع کے سلسلے میں اس وقت تک اختیار کے ساتھ رہتے ہیں جب تک وہ جدا نہ ہوں، سوائے اس کے کہ وہ بیع خیار ( اختیاری خرید و فروخت ) ہو“۔ نافع کہتے ہیں: چنانچہ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما جب کوئی ایسی چیز خریدتے جو دل کو بھا گئی ہو تو صاحب معاملہ سے ( فوراً ) جدا ہو جاتے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4479

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا نَافِعٌ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْمُتَبَايِعَانِ لَا بَيْعَ بَيْنَهُمَا حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Yahya bin Sa 'eed , who said: Nafi narrated to us from Ibn 'Umar, who said: 'The Messenger of Allah said: There is no transaction between the two parties until they separate, unless they have chosen to conclude the transaction. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”خرید و فروخت کرنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک وہ جدا نہ ہو جائیں، سوائے بیع خیار کے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4480

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كُلُّ بَيِّعَيْنِ لَا بَيْعَ بَيْنَهُمَا حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Ismail from 'Abdullah bin Dinar, from Ibn 'Umar, who said: The Messenger of Allah said: 'When two people meet to engage in trade, the transaction between them is not binding until they separate, unless they have chosen to conclude the transaction.,'
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک وہ جدا نہ ہو جائیں، سوائے بیع خیار کے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4481

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الْحَكَمِ،‏‏‏‏ عَنْ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ اللَّيْثِ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْهَادِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ:‏‏‏‏ كُلُّ بَيِّعَيْنِ فَلَا بَيْعَ بَيْنَهُمَا حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Ibn Al-Had, from 'Abdullah bin Dinar, from 'Abdullah bin 'Umar, that he heard the Messenger of Allah (ﷺ) say: When two people meet to engage in trade, the transaction between them is not binding until they separate, unless they have chosen to conclude the transaction.
انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک وہ جدا نہ ہو جائیں، سوائے بیع خیار کے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4482

أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَخْلَدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كُلُّ بَيِّعَيْنِ لَا بَيْعَ بَيْنَهُمَا حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Sufyan, from 'Amr bin Dinar, from Ibn 'Umar, who said: the Messenger of Allah said: When two people meet to engage in trade, the transaction between them is not binding until they separate, unless they have chosen to concluded the transaction.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک وہ دونوں جدا نہ ہو جائیں، سوائے بیع خیار کے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4483

أَخْبَرَنَا الرَّبِيعُ بْنُ سُلَيْمَانَ بْنِ دَاوُدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْحَاق بْنُ بَكْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ:‏‏‏‏ كُلُّ بَيِّعَيْنِ لَا بَيْعَ بَيْنَهُمَا حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Yazid bin 'Abdullah, from 'Abdullah bin dinar, from ibn 'Umar that he heard the Messenger of Allah say: When two people meet to engage in trade the transaction between them is not binding until they separate, unless they have chosen to conclude the transaction.
انہوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک دونوں جدا نہ ہو جائیں، سوائے بیع خیار کے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4484

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ بَهْزِ بْنِ أَسَدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كُلُّ بَيِّعَيْنِ فَلَا بَيْعَ بَيْنَهُمَا حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا بَيْعَ الْخِيَارِ .
It was narrated from Shu'ban who said: Abdullah bin Dinr narrated to us, from Ibn'Umar, who said; The Messenger of Allah said; When two people meet to engage in trade, the transaction between them is not binding until they separate, unless they have chosen to conclude the transaction.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کے درمیان اس وقت تک بیع پوری نہیں ہوتی جب تک وہ جدا نہ ہو جائیں، سوائے بیع خیار کے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4485

It was narrated from Sufyan, from 'Abdullah bin Dinar, from Ibn 'Umar, from the Prophet who said: Two traders have the choice as long as they have not separated, or, they have chosen to conclude the transaction.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کو اختیار رہتا ہے جب تک کہ وہ جدا نہ ہو جائیں، إلا یہ کہ وہ بیع خیار ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4486

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُعَاذُ بْنُ هِشَامٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْ سَمُرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ نَبِيَّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ حَتَّى يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ أَوْ يَأْخُذَ كُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا مِنَ الْبَيْعِ مَا هَوِيَ،‏‏‏‏ وَيَتَخَايَرَانِ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ .
It was narrated from Al_Hasan, from Samurah, that the Prophet of Allah said: Two trades have the choice as long as until they reach a deal that suits both of them and they confirm it three times.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کو اختیار رہتا ہے جب تک کہ وہ جدا نہ ہوں یا ان میں سے ہر ایک بیع کو اپنی مرضی کے مطابق لے اور وہ تین بار اختیار لیں“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4487

أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ إِسْمَاعِيل بْنِ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا هَمَّامٌ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْ سَمُرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْبَيِّعَانِ بِالْخِيَارِ مَا لَمْ يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ وَيَأْخُذْ أَحَدُهُمَا مَا رَضِيَ مِنْ صَاحِبِهِ أَوْ هَوِيَ .
It was narrated from Al- Hasan from Samurah, who said: The Messenger of Allah said; Two traders have the choice as long as they have not separated, or until they reach a deal that suits both of th4em or that is satisfactory (to both)
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بیچنے اور خریدنے والے دونوں کو اختیار ہوتا ہے جب تک کہ وہ جدا نہ ہوں اور ان میں سے ایک اپنے ساتھی سے راضی نہ ہو جائے، یا خواہش پوری نہ کر لے ( یعنی بیع خیار تک ) “۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4488

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَجْلَانَ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الْمُتَبَايِعَانِ بِالْخِيَارِ مَا لَمْ يَتَفَرَّقَا،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَكُونَ صَفْقَةَ خِيَارٍ،‏‏‏‏ وَلَا يَحِلُّ لَهُ أَنْ يُفَارِقَ صَاحِبَهُ خَشْيَةَ أَنْ يَسْتَقِيلَهُ .
It was narrated from 'Amr bin Shu'aib, from his father , form his grandfather, that the Prophet said: The two parties to a transaction have the choicer so long as they have not separated, unless they reach an agreement before parting, and it is not permissible to hasten to leave for fear that the other party may change his mind.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: خریدنے اور بیچنے والے دونوں کو اس وقت تک اختیار رہتا ہے جب تک وہ جدا نہ ہوں، سوائے اس کے کہ وہ بیع خیار ہو، اور ( کسی فریق کے لیے ) یہ حلال نہیں کہ وہ اپنے صاحب معاملہ سے اس اندیشے سے جدا ہو کہ کہیں وہ بیع فسخ کر دے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4489

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَجُلًا ذَكَرَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ يُخْدَعُ فِي الْبَيْعِ،‏‏‏‏ فَقَالَ لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا بِعْتَ فَقُلْ:‏‏‏‏ لَا خِلَابَةَ ،‏‏‏‏ فَكَانَ الرَّجُلُ إِذَا بَاعَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ لَا خِلَابَةَ.
It was narrated from Ibn 'Umar that: a man told the Messenger of Allah that he was always being cheated. The Messenger of Allah said to him: When you make a deal, say: There is no intention of cheating So, whenever the man engages in a deal he says, 'There is no intention of cheating. (Sahih )
ایک شخص نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ذکر کیا کہ وہ بیع میں دھوکہ کھا جاتا ہے تو آپ نے اس سے فرمایا: ”جب تم بیچو تو کہہ دیا کرو: فریب اور دھوکہ دھڑی نہ ہو، چنانچہ وہ شخص جب کوئی چیز بیچتا تو کہتا: دھوکہ دھڑی نہیں“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4490

أَخْبَرَنَا يُوسُفُ بْنُ حَمَّادٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَجُلًا كَانَ فِي عُقْدَتِهِ ضَعْفٌ كَانَ يُبَايِعُ،‏‏‏‏ وَأَنَّ أَهْلَهُ أَتَوْا النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالُوا:‏‏‏‏ يَا نَبِيَّ اللَّهِ،‏‏‏‏ احْجُرْ عَلَيْهِ،‏‏‏‏ فَدَعَاهُ نَبِيُّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَنَهَاهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا نَبِيَّ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنِّي لَا أَصْبِرُ عَنِ الْبَيْعِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ إِذَا بِعْتَ فَقُلْ:‏‏‏‏ لَا خِلَابَةَ .
It was narrated from Anas that: there was a man whose mental faculties were lacking, and he used to buy and sell. His family came to the Prophet and said: O Prophet of Allah stop him. So the Prophet of Allah called him, and told him not to do that. He said: O Prophet of Allah, I cannot bear to be away from business, He said If you engaged in a deal then say: 'There is no intention to deceive. ' (Sahih )
ایک شخص کم عقلی کا شکار تھا اور تجارت کرتا تھا، اس کے گھر والوں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آ کر کہا: اللہ کے نبی! آپ اسے تجارت کرنے سے روک دیجئیے، تو آپ نے اسے بلایا اور اسے اس سے روکا، اس نے کہا: اللہ کے نبی! میں تجارت سے باز نہیں آ سکتا، تو آپ نے فرمایا: ”جب بیچو تو کہو: فریب و دھوکہ نہیں“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4491

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَعْمَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبُو كَثِيرٍ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِذَا بَاعَ أَحَدُكُمُ الشَّاةَ أَوِ اللَّقْحَةَ،‏‏‏‏ فَلَا يُحَفِّلْهَا .
Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: 'If any one of you sells a sheep or a milch- camel, let him not refrain from milking it.'' (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تم میں سے کوئی جب بکری یا اونٹنی بیچے تو اس کے تھن میں دودھ روک کر نہ رکھے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4492

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزِّنَادِ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْرَجِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَلَقَّوْا الرُّكْبَانَ لِلْبَيْعِ،‏‏‏‏ وَلَا تُصَرُّوا الْإِبِلَ وَالْغَنَمَ،‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ مِنْ ذَلِكَ شَيْئًا فَهُوَ بِخَيْرِ النَّظَرَيْنِ،‏‏‏‏ فَإِنْ شَاءَ أَمْسَكَهَا،‏‏‏‏ وَإِنْ شَاءَ أَنْ يَرُدَّهَا رَدَّهَا وَمَعَهَا صَاعُ تَمْرٍ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet said: Do not go out to meet the riders, and do not bind the udders of camels and seep. Whoever has boughty anything in that manner has two choices: If he whishes he may keep it, or if he wants to return it he may return it, along with a Sa of dates. (Sahih )
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”آگے جا کر تجارتی قافلے سے مت ملو ۱؎ اور اونٹنیوں اور بکریوں کو ان کے تھنوں میں دودھ روک کر نہ رکھو ۲؎، اگر کسی نے ایسا جانور خرید لیا تو اسے اختیار ہے چاہے تو اسے رکھ لے اور چاہے تو اسے لوٹا دے اور ( لوٹاتے وقت ) اس کے ساتھ ایک صاع کھجور دیدے“ ۳؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4493

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْحَارِثِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي دَاوُدُ بْنُ قَيْسٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ مَنِ اشْتَرَى مُصَرَّاةً فَإِنْ رَضِيَهَا إِذَا حَلَبَهَا فَلْيُمْسِكْهَا،‏‏‏‏ وَإِنْ كَرِهَهَا فَلْيَرُدَّهَا وَمَعَهَا صَاعٌ مِنْ تَمْرٍ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah said: whoever buys a Musarraha, if he is please with it when he milks it, he may keep it, and if he is not please with it, he may return it, along with a Sa of daters ' (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے کوئی ایسا جانور خریدا جس کا دودھ اس کے تھن میں روک رکھا گیا ہو تو جب اسے دو ہے اور اس پر راضی ہو جائے تو چاہیئے کہ اسے روک لے اور اگر اسے وہ ناپسند ہو تو اسے لوٹا دے اور اس کے ساتھ ایک صاع کھجور بھی دیدے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4494

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ أَبُو الْقَاسِمِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ مُحَفَّلَةً أَوْ مُصَرَّاةً،‏‏‏‏ فَهُوَ بِالْخِيَارِ ثَلَاثَةَ أَيَّامٍ،‏‏‏‏ إِنْ شَاءَ أَنْ يُمْسِكَهَا أَمْسَكَهَا،‏‏‏‏ وَإِنْ شَاءَ أَنْ يَرُدَّهَا رَدَّهَا وَصَاعًا مِنْ تَمْرٍ لَا سَمْرَاءَ .
Abu Hurairah said: Abu Al- Qasim said: Whoever buys a Musarrah, he has the choice (of annulling the deal) for three days. If the wishes ti keep it, he may keep it, and if he wishes to return it, he may return it, along with a Sa of daters, not wheat. (Sahih )
ابوالقاسم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے کوئی «محفلہ» یا «مصراۃ» ( دودھ تھن میں روکے ہوئے جانور کو ) خریدا تو اسے تین دن تک اختیار ہے، اگر وہ اسے روکے رکھنا چاہے تو روک لے اور اگر لوٹانا چاہے تو اسے لوٹا دے اور اس کے ساتھ ایک صاع کھجور بھی دے، گیہوں کا دینا ضروری نہیں“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4495

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عِيسَى بْنُ يُونُسَ،‏‏‏‏ وَوَكِيعٌ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي ذِئْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَخْلَدِ بْنِ خُفَافٍ،‏‏‏‏ عَنْ عُرْوَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ قَضَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنَّ الْخَرَاجَ بِالضَّمَانِ .
It was narrated that 'Aishsh said: The Messenger of Allah ruled that what a slave earns belongs to his guarantor.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فیصلہ کیا کہ «خراج» ( نفع ) مال کی ضمانت سے جڑا ہوا ہے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4496

أَخْبَرَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ تَمِيمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي شُعْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ عَدِيِّ بْنِ ثَابِتٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي حَازِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ التَّلَقِّي،‏‏‏‏ وَأَنْ يَبِيعَ مُهَاجِرٌ لِلْأَعْرَابِيِّ،‏‏‏‏ وَعَنِ التَّصْرِيَةِ،‏‏‏‏ وَالنَّجْشِ،‏‏‏‏ وَأَنْ يَسْتَامَ الرَّجُلُ عَلَى سَوْمِ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَأَنْ تَسْأَلَ الْمَرْأَةُ طَلَاقَ أُخْتِهَا .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah forbade meeting (the traders on the way) a Muhajhir selling for a Bedouin, keeping the milk in the udder of an animal (so as to increase its price), artificially inflating prices, a man to urge the cancellation of sale already agreed upon and a woman to ask that her sister (in faith) be divorced.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے باہر نکل کر سامان خریدنے سے، مہاجر ( شہری ) کو دیہاتی کا مال بیچنے سے ۱؎، جانوروں کے تھن میں قیمت بڑھانے کے مقصد سے دودھ چھوڑنے سے، خود خریدنا مقصود نہ ہو لیکن دوسرے کو ٹھگانے کے لیے بڑھ بڑھ کر قیمت لگانے سے اور اپنے بھائی کے مول پر بھاؤ بڑھانے سے اور اپنی سوکن ۲؎ کے لیے طلاق کا مطالبہ کرنے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4497

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ الزِّبْرِقَانِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يُونُسُ بْنُ عُبَيْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسٍ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى أَنْ يَبِيعَ حَاضِرٌ لِبَادٍ،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ أَبَاهُ أَوْ أَخَاهُ .
It was narrated from Anas that: the Prophet forbade a town-dweller to sell for a desert- dweller, even if he was his father or brother. (Sahih )
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا کہ شہری دیہاتی کا سامان بیچے، گرچہ وہ اس کا باپ یا بھائی ہی کیوں نہ ہو۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4498

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي سَالِمُ بْنُ نُوحٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا يُونُسُ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سِيرِينَ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نُهِينَا أَنْ يَبِيعَ حَاضِرٌ لِبَادٍ،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ أَخَاهُ أَوْ أَبَاهُ .
It was narrated that Anas bin Malik said: It was forbidden to us for a town-dweller to sell for a desert-dweller, even if he was his father or brother. (Sahih )
ہمیں اس بات سے روکا گیا کہ کوئی شہری کسی دیہاتی کا سامان بیچے، گرچہ وہ اس کا بھائی یا باپ ہی کیوں نہ ہو۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4499

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عَوْنٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نُهِينَا أَنْ يَبِيعَ حَاضِرٌ لِبَادٍ .
It was narrated that Anas said: It was forbidden to us for a town-dweller to sell for a desert-dweller. (Sahih )
ہمیں اس بات سے روکا گیا کہ کوئی شہری کسی دیہاتی کا سامان بیچے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4500

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرًا،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا يَبِيعُ حَاضِرٌ لِبَادٍ،‏‏‏‏ دَعُوا النَّاسَ يَرْزُقُ اللَّهُ بَعْضَهُمْ مِنْ بَعْضٍ .
Jabir said: The Messenger of Allah said: 'A town-dweller should not sell for a direst-dweller. Leave the people alone and let Allah provide for them from one another. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کوئی شہری کسی دیہاتی کا سامان نہ بیچے، لوگوں کو چھوڑ دو، اللہ تعالیٰ ان میں سے بعض کو بعض کے ذریعہ رزق ( روزی ) فراہم کرتا ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4501

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزِّنَادِ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْرَجِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَلَقَّوْا الرُّكْبَانَ لِلْبَيْعِ،‏‏‏‏ وَلَا يَبِعْ بَعْضُكُمْ عَلَى بَيْعِ بَعْضٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَنَاجَشُوا،‏‏‏‏ وَلَا يَبِيعُ حَاضِرٌ لِبَادٍ .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah said: Do not go out to meet the riders, and do not urge someone to cancel a sale he has already agreed upon os as to sell him your own goods, do not artificially inflate prices, and let not a town-dweller sell for a desert-dweller. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تجارتی قافلے سے ( مال ) خریدنے کے لیے باہر نکل کر نہ ملو، اور تم میں سے کوئی دوسرے کی بیع پر بیع نہ کرے، نہ بھاؤ پر بھاؤ بڑھانے کا کام کرو اور نہ شہری دیہاتی کا سامان بیچے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4502

أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الْحَكَمِ بْنِ أَعْيَنَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعَيْبُ بْنُ اللَّيْثِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ كَثِيرِ بْنِ فَرْقَدٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنَّهُ نَهَى عَنِ النَّجْشِ وَالتَّلَقِّي،‏‏‏‏ وَأَنْ يَبِيعَ حَاضِرٌ لِبَادٍ .
It was narrated from 'Abdullah that: the Messenger of Allah forbade artificially inflating prices, meeting traders on the way, and for a town-dweller to sell for a desert-dweller. (Sahih )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بھاؤ پر بھاؤ بڑھانے سے، شہری کا باہر جا کر دیہاتی سے مال لینے سے اور اس بات سے منع فرمایا کہ شہری دیہاتی کا سامان بیچے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4503

أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ التَّلَقِّي .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Messenger of Allah forbade meeting traders on the way.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تجارتی قافلے سے آگے جا کر ملنے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4504

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا مَعْمَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يُتَلَقَّى الرُّكْبَانُ،‏‏‏‏ وَأَنْ يَبِيعَ حَاضِرٌ لِبَادٍ ،‏‏‏‏ قُلْتُ لِابْنِ عَبَّاسٍ:‏‏‏‏ مَا قَوْلُهُ حَاضِرٌ لِبَادٍ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَكُونُ لَهُ سِمْسَارٌ.
It was narrate from Ibn Tawus, from his father, that Ibn 'Abbas said; The Messenger of Allah forbade meeting the riders, and for a town-dweller. I said to Ibn 'Abbas: What does a town-dweller (selling) for a desert-dweller mean? he said: He should not act as a broker for him,
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا کہ کوئی آگے جا کر تجارتی قافلے سے ملے، اور کوئی شہری کسی دیہاتی کا سامان بیچے، ( راوی طاؤس کہتے ہیں: ) میں نے ابن عباس سے کہا: اس قول ”کوئی شہری دیہاتی کا سامان نہ بیچے“ کا کیا مطلب ہے؟ انہوں نے کہا: یعنی شہری دلال نہ بنے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4505

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجُ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا هِشَامُ بْنُ حَسَّانَ الْقُرْدُوسِيُّ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ ابْنَ سِيرِينَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا تَلَقَّوْا الْجَلْبَ،‏‏‏‏ فَمَنْ تَلَقَّاهُ فَاشْتَرَى مِنْهُ،‏‏‏‏ فَإِذَا أَتَى سَيِّدُهُ السُّوقَ فَهُوَ بِالْخِيَارِ .
Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: 'Do and whoever meets any of them and buys from him the vendor has the choice of annulling the transaction when he comes to the marketplace. '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”آگے جا کر تجارتی قافلے سے نہ ملو، جو اس سے جا کر ملا اور اس سے کوئی چیز خرید لی، جب اس کا مالک بازار آئے تو اسے اختیار ہو گا“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4506

حَدَّثَنَا مُجَاهِدُ بْنُ مُوسَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ عَنْ مَعْمَرٍ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا يَبِيعَنَّ حَاضِرٌ لِبَادٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَنَاجَشُوا،‏‏‏‏ وَلَا يُسَاوِمْ الرَّجُلُ عَلَى سَوْمِ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَلَا يَخْطُبْ عَلَى خِطْبَةِ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَلَا تَسْأَلِ الْمَرْأَةُ طَلَاقَ أُخْتِهَا لِتَكْتَفِئَ مَا فِي إِنَائِهَا وَلِتُنْكَحَ،‏‏‏‏ فَإِنَّمَا لَهَا مَا كَتَبَ اللَّهُ لَهَا .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: No town-dweller should sell for a desert-dweller, do not artificially inflate prices, no man should urge a seller to cancel a sale already agreed upon with another buy so as to by the goods himself, no one should make a proposal over the proposal of his brother and no woman should make a proposal over the proposal of his brother and no woman should ask for her sister in faith) to be divorced so as to turn over what is in her vessel Deprived her of her share of maintenance) and so that she may get married in her place: she will have what Allah has decreed or her.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کوئی شہری کسی دیہاتی کا مال ہرگز نہ بیچے، اور نہ بھاؤ پر بھاؤ بڑھانے کا کام کرو، اور نہ آدمی اپنے ( مسلمان ) بھائی کے بھاؤ پر بھاؤ لگائے، اور نہ ( مسلمان ) بھائی کی شادی کے پیغام پر پیغام بھیجے اور نہ عورت اپنی سوکن کی طلاق کا مطالبہ کرے تاکہ جو اس کے برتن میں ہے اسے بھی اپنے لیے انڈیل لے ( یعنی جو اس کی قسمت میں تھا وہ اسے مل جائے ) بلکہ ( بلا مطالبہ و شرط ) نکاح کرے، کیونکہ اسے وہی ملے گا جو اس کی قسمت میں اللہ تعالیٰ نے لکھا ہے“
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4507

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ وَاللَّيْثُ،‏‏‏‏ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَبِيعُ أَحَدُكُمْ عَلَى بَيْعِ أَخِيهِ .
It was narrated from Ibn 'Umar that the Prophet said: No one of you should urge someone to cancel a sale he has already agreed upon with his brother so as to sell him his own goods.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تم میں سے کوئی اپنے ( مسلمان ) بھائی کی بیع پر بیع نہ کرے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4508

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَبِيعُ الرَّجُلُ عَلَى بَيْعِ أَخِيهِ حَتَّى يَبْتَاعَ،‏‏‏‏ أَوْ يَذَرَ .
It was narrated from Ibn 'Umar that the Messenger of Allah said: Do not urge someone to cancel a sale he has already agreed upon so as to sell him your own goods, unless he bys or changes his mind.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”آدمی اپنے بھائی کی بیع پر بیع نہ کرے یہاں تک کہ وہ اسے خرید لے یا چھوڑ دے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4509

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ النَّجْشِ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Prophet forbade artificially inflating prices.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرضی بھاؤ پر بھاؤ بڑھانے سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4510

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَسَعِيدُ بْنُ الْمُسَيِّبِ،‏‏‏‏ أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ:‏‏‏‏ لَا يَبِيعُ الرَّجُلُ عَلَى بَيْعِ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَلَا يَبِيعُ حَاضِرٌ لِبَادٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَنَاجَشُوا،‏‏‏‏ وَلَا يَزِيدُ الرَّجُلُ عَلَى بَيْعِ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَلَا تَسْأَلِ الْمَرْأَةُ طَلَاقَ الْأُخْرَى لِتَكْتَفِئَ مَا فِي إِنَائِهَا .
It was narrated that Abu Hurairah said: I heard the messenger of Allah say: No man should urge anyone to cancel a sale he has already agreed upon with his brother so as to sell him his own goods; no town-dweller should sell for a desert-dweller; do not artificially inflate prices; no man should outbid his brother; and no woman should ask for her sister (in faith) to be divorced so as to turn over what is in her vessel (deprive her of her share of maintenance),
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے سنا: ”آدمی اپنے ( کسی مسلمان ) بھائی کی بیع پر بیع نہ کرے، اور نہ کوئی شہری کسی دیہاتی کا سامان بیچے، اور نہ بھاؤ پر بھاؤ بڑھانے کا کام کرے، اور نہ آدمی اپنے بھائی کی بیع پر اضافہ کرے ( کہ میں اس سامان کا تو اتنا اتنا مزید دوں گا ) اور نہ کوئی عورت سوکن کی طلاق کا مطالبہ کرے تاکہ جو اس کے برتن میں ہے اسے اپنے برتن میں انڈیل لے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4511

حَدَّثَنِي مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَعْمَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَبِيعُ حَاضِرٌ لِبَادٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَنَاجَشُوا،‏‏‏‏ وَلَا يَزِيدُ الرَّجُلُ عَلَى بَيْعِ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَلَا تَسْأَلِ الْمَرْأَةُ طَلَاقَ أُخْتِهَا لِتَسْتَكْفِئَ بِهِ مَا فِي صَحْفَتِهَا .
It was narrated from Abu Hurairah that the Prophet said: No tow-dweller should sell for desert-dweller, no man should outbid his brother; and no woman should ask for her sister (in faith) to be divorced so as to turn over what is in her bowl (deprive her of her share of maintenance)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کوئی شہری کسی دیہاتی کا سامان نہ بیچے، اور نہ کوئی فرضی بھاؤ پر بھاؤ بڑھانے کا کام کرے، اور نہ آدمی اپنے بھائی کی بیع پر اضافہ کرے، اور نہ عورت اپنی سوکن کی طلاق کا مطالبہ کرے تاکہ جو اس کے برتن میں ہے اسے اپنے میں انڈیل لے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4512

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ،‏‏‏‏ وَعِيسَى بْنُ يُونُسَ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَخْضَرُ بْنُ عَجْلَانَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي بَكْرٍ الْحَنَفِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ بَاعَ قَدَحًا وَحِلْسًا فِيمَنْ يَزِيدُ .
It was narrated from Anas bin Malik that: the Messenger of Allah sold a drinking bowl and a blanket (for a horse of camel) to the highest bidder '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک پیالا اور ایک کمبل نیلام کیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4513

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ يَحْيَى بْنِ حَبَّانَ،‏‏‏‏ وَأَبِي الزِّنَادِ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْرَجِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُلَامَسَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةِ .
It was narrated from Abu Hurairah that: the Messenger of Allah forbade Mulamash and Munabadha.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ملامسہ اور منابذہ سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4514

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ يَعْقُوبَ بْنِ إِسْحَاق،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يُوسُفَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ عُقَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عَامِرُ بْنُ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُلَامَسَةِ لَمْسِ الثَّوْبِ لَا يَنْظُرُ إِلَيْهِ،‏‏‏‏ وَعَنِ الْمُنَابَذَةِ وَهِيَ طَرْحُ الرَّجُلِ ثَوْبَهُ إِلَى الرَّجُلِ بِالْبَيْعِ قَبْلَ أَنْ يُقَلِّبَهُ أَوْ يَنْظُرَ إِلَيْهِ .
It was narrated from Abu Sa' eed Al- Khudri that: the Messenger of Allah forbade Mulamasah, which means touching a garment without looking at it, and Munabadha, which is where one man sells his garment to another man, by throwing it to him, without him checking it or looking at it.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع ملامسہ سے منع فرمایا، اور وہ یہ ہے کہ آدمی کپڑے کو چھو لے اسے اندر سے دیکھے بغیر ( اور بیع ہو جائے ) اور منابذہ سے منع فرمایا، اور منابذہ یہ ہے کہ آدمی اپنا کپڑا دوسرے کی طرف بیع کے ساتھ پھینکے اس سے پہلے کہ وہ اسے الٹ پلٹ کر دیکھے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4515

أَخْبَرَنَا يُونُسُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ وَهْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي يُونُسُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَامِرِ بْنِ سَعْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْمُلَامَسَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةِ فِي الْبَيْعِ .
It was narrated that Abu Sa'eed al-Khudri said: The Messenger of Allah forbade two kinds of transactions: Mulamash and Munabddhah
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع ملامسہ اور منابذہ سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4516

أَخْبَرَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ حُرَيْثٍ الْمَرْوَزِيُّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعَتَيْنِ عَنِ الْمُلَامَسَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةِ .
It was narrated that Abu Sa'eed Al-Khudri said: The messenger of Allah forbade two kinds of transactions: Mulamash and Mumabadha.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے دو قسم کی بیع ملامسہ اور منابذہ سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4517

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُصَفَّى بْنِ بَهْلُولٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ حَرْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّبَيْدِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ سَعِيدًا،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْمُلَامَسَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُلَامَسَةُ:‏‏‏‏ أَنْ يَتَبَايَعَ الرَّجُلَانِ بِالثَّوْبَيْنِ تَحْتَ اللَّيْلِ يَلْمِسُ كُلُّ رَجُلٍ مِنْهُمَا ثَوْبَ صَاحِبِهِ بِيَدِهِ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةُ:‏‏‏‏ أَنْ يَنْبِذَ الرَّجُلُ إِلَى الرَّجُلِ الثَّوْبَ وَيَنْبِذَ الْآخَرُ إِلَيْهِ الثَّوْبَ فَيَتَبَايَعَا عَلَى ذَلِكَ .
Abu Hurairah said: The Messenger of Allah forbade Munabadhah and Mulamash. Mulamasah is when two men trade garments with each other under cover of night, each man touching the garment of the other with his hand> and Munabadhah is when one man throws a garment to another and the other throws a garment to him, and they trade them with each other in that manner.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع منابذہ اور ملامسہ سے منع فرمایا، ملامسہ یہ ہے کہ دو آدمی رات کو دو کپڑوں کی بیع کریں، ہر ایک دوسرے کا کپڑا چھو لے۔ منابذہ یہ ہے کہ ایک آدمی دوسرے آدمی کی طرف کپڑا پھینکے اور دوسرا اس کی طرف کپڑا پھینکے اور اسی بنیاد پر بیع کر لیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4518

أَخْبَرَنَا أَبُو دَاوُدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ أَنَّ عَامِرَ بْنَ سَعْدٍ أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ أَنَّ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِيَّ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْمُلَامَسَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُلَامَسَةُ:‏‏‏‏ لَمْسُ الثَّوْبِ لَا يَنْظُرُ إِلَيْهِ،‏‏‏‏ وَعَنِ الْمُنَابَذَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةُ:‏‏‏‏ طَرْحُ الرَّجُلِ ثَوْبَهُ إِلَى الرَّجُلِ قَبْلَ أَنْ يُقَلِّبَهُ .
It was narrated that Abu Sa 'eed A-Khudri said: The essenger of Allah forbade Mulamasah. And Mulamash means touching a garment without looking at it; (and he forbade) Munabadhah means when a throws his garment to another man without him checking it.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ملامسہ سے منع فرمایا۔ اور ملامسہ یہ ہے کہ کپڑے کو چھولے اس کی طرف دیکھے نہیں، اور منابذہ سے منع فرمایا، منابذہ یہ ہے کہ آدمی کپڑا دوسرے آدمی کی طرف پھینکے اور وہ اسے الٹ کر نہ دیکھے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4519

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَعْمَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ لُبْسَتَيْنِ،‏‏‏‏ وَعَنْ بَيْعَتَيْنِ،‏‏‏‏ أَمَّا الْبَيْعَتَانِ:‏‏‏‏ فَالْمُلَامَسَةُ وَالْمُنَابَذَةُ،‏‏‏‏ وَالْمُنَابَذَةُ:‏‏‏‏ أَنْ يَقُولَ:‏‏‏‏ إِذَا نَبَذْتُ هَذَا الثَّوْبَ فَقَدْ وَجَبَ يَعْنِي الْبَيْعَ،‏‏‏‏ وَالْمُلَامَسَةُ:‏‏‏‏ أَنْ يَمَسَّهُ بِيَدِهِ وَلَا يَنْشُرَهُ وَلَا يُقَلِّبَهُ إِذَا مَسَّهُ فَقَدْ وَجَبَ الْبَيْعُ .
It was narrated that Abu Sa'eed Al-Khudri said: The Messenger of Allah forbade two kinds of garments and two kinds of transactions. As for the two kinds of transactions, they are Mulamash and Munabadhaha. Munabadha is when a man says, 'I throw this garment, and the transaction becomes binding, and Mulamasah is when a man touches it with his had, without spreading it out and checking it, and once he touches it, the transaction becomes binding.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے دو قسم کے لباس اور دو قسم کی بیع سے منع فرمایا ہے، رہی دو قسم کی بیع تو وہ ملامسہ اور منابذہ ہیں۔ منابذہ یہ ہے کہ وہ کہے: جب میں اس کپڑے کو پھینکوں تو بیع واجب ہو گئی، اور ملامسہ یہ ہے کہ وہ اسے اپنے ہاتھ سے چھولے اور جب چھولے تو اسے پھیلائے نہیں اور نہ اسے الٹ پلٹ کرے تو بیع واجب ہو گئی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4520

أَخْبَرَنَا هَارُونُ بْنُ زَيْدِ بْنِ أَبِي الزَّرْقَاءِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبِي،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا جَعْفَرُ بْنُ بُرْقَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بَلَغَنِي عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ لُبْسَتَيْنِ،‏‏‏‏ وَنَهَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعَتَيْنِ،‏‏‏‏ عَنِ الْمُنَابَذَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُلَامَسَةِ،‏‏‏‏ وَهِيَ بُيُوعٌ كَانُوا يَتَبَايَعُونَ بِهَا فِي الْجَاهِلِيَّةِ .
It was narrated from Salim that his father said: The Messenger of Allah forbade two kinds of garments, and he forbade two kinds of transactions for us: Munabadhah and Mulamasah, which are kinds of transactions which were common during the Jahiliyyah.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے دو قسم کے لباس سے منع فرمایا، اور ہمیں دو قسم کی بیع منابذہ اور ملامسہ سے روکا، اور یہ دونوں ایسی بیع ہیں جنہیں زمانہ جاہلیت میں لوگ کرتے تھے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4521

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عُبَيْدَ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ خُبَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ حَفْصِ بْنِ عَاصِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنَّهُ نَهَى عَنْ بَيْعَتَيْنِ،‏‏‏‏ أَمَّا الْبَيْعَتَانِ فَالْمُنَابَذَةُ وَالْمُلَامَسَةُ،‏‏‏‏ وَزَعَمَ أَنَّ الْمُلَامَسَةَ:‏‏‏‏ أَنْ يَقُولَ الرَّجُلُ لِلرَّجُلِ أَبِيعُكَ ثَوْبِي بِثَوْبِكَ وَلَا يَنْظُرُ وَاحِدٌ مِنْهُمَا إِلَى ثَوْبِ الْآخَرِ وَلَكِنْ يَلْمِسُهُ لَمْسًا،‏‏‏‏ وَأَمَّا الْمُنَابَذَةُ:‏‏‏‏ أَنْ يَقُولُ:‏‏‏‏ أَنْبِذُ مَا مَعِي وَتَنْبِذُ مَا مَعَكَ لِيَشْتَرِيَ أَحَدُهُمَا مِنِ الْآخَرِ،‏‏‏‏ وَلَا يَدْرِي كُلُّ وَاحِدٍ مِنْهُمَا كَمْ مَعَ الْآخَرِ وَنَحْوًا مِنْ هَذَا الْوَصْفِ .
It was narrated from Hafs bin 'Asim, from Abu Hurairah that the Prophet forbade two kids of transactions: Munabadhah and Mulamasha. And he said that Mulamasah means when one man says to another: I will sell you my garment for your garment, and neither of them looks at the garment of the others, rather he just touches it. And Munabadhah is when he says: I will throw what I have and you throw what you have, so that they buy from one another, and neither of them knows how much the other has, and so on.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے دو طرح کی بیع سے منع فرمایا، رہی دونوں بیع تو وہ منابذہ اور ملامسہ ہیں اور ملامسہ یہ ہے کہ ایک آدمی دوسرے آدمی سے کہے: میں تمہارے کپڑے سے اپنا کپڑا بیچ رہا ہوں اور ان میں کوئی دوسرے کے کپڑے کو نہ دیکھے بلکہ صرف اسے چھولے، رہی منابذہ تو وہ یہ ہے کہ وہ کہے: جو میرے پاس ہے میں اسے پھینک رہا ہوں اور جو تمہارے پاس ہے اسے تم پھینکو تاکہ ان میں سے ایک دوسرے کی چیز خرید لے حالانکہ ان میں سے کوئی بھی یہ نہیں جانتا کہ دوسرے کے پاس کتنا اور کس قسم کا کپڑا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4522

أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزِّنَادِ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْرَجِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الْحَصَاةِ وَعَنْ بَيْعِ الْغَرَرِ .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah forbade Gharar transaction and Hasah transactions.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کنکری کی بیع اور دھوکے کی بیع سے منع فرمایا ہے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4523

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَبِيعُوا الثَّمَرَ حَتَّى يَبْدُوَ صَلَاحُهُ،‏‏‏‏ نَهَى الْبَائِعَ وَالْمُشْتَرِيَ .
; It was narrated from Ibn 'Uar that the Messenger of Allah said: Do not sell fruits until their condition is known. And he forbade (both) the seller and the purchaser (to engage in such a transaction).
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جب تک پختگی ظاہر نہ ہو جائے پھلوں کی بیع نہ کرو“، آپ نے بیچنے اور خریدنے والے دونوں کو ( اس سے ) منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4524

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الثَّمَرِ حَتَّى يَبْدُوَ صَلَاحُهُ .
It was narrated from Salim, from his father, that: the Messenger of Allah forbade selling fruits until their condition is known.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پختگی ظاہر ہونے سے پہلے پھل بیچنے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4525

أَخْبَرَنِي يُونُسُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ،‏‏‏‏ وَأَنَا أَسْمَعُ:‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ وَهْبٍ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي يُونُسُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي سَعِيدٌ،‏‏‏‏ وَأَبُو سَلَمَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ أَبَا هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا تَبِيعُوا الثَّمَرَ حَتَّى يَبْدُوَ صَلَاحُهُ،‏‏‏‏ وَلَا تَبْتَاعُوا الثَّمَرَ بِالتَّمْرِ ،‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ شِهَابٍ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي سَالِمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى عَنْ مِثْلِهِ سَوَاءً.
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: 'Do not sell fruits until their condition is known, and do not sell fresh dates (still on the tree) for dried dates. ' Ibn Shihab said: Salim bin 'Abdullah narrated to me, from his father: 'That Allah's Messenger forbade from ... similarly.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”پھل نہ بیچو جب تک اس کی پختگی ظاہر نہ ہو جائے، اور نہ ( کھجور کے ) درخت کے پھل کا اندازہ کر کے ( درخت سے توڑی ہوئی ) کھجوروں کو بیچو“۔ ابن شہاب زہری کہتے ہیں: مجھ سے سالم بن عبداللہ نے اپنے والد عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت کرتے ہوئے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس جیسی صورت سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4526

أَخْبَرَنَا عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَخْلَدُ بْنُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَنْظَلَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ طَاوُسًا،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَامَ فِينَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا تَبِيعُوا الثَّمَرَ حَتَّى يَبْدُوَ صَلَاحُهُ .
Abdullah bin 'Umar said: The Messenger of Allah stood up among us ad said: 'Do not sell fruits until their condition is known.
میں نے عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کو کہتے ہوئے سنا: ہمارے درمیان رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کھڑے ہو کر فرمایا: ”پھل مت بیچو یہاں تک کہ اس کی پختگی ظاہر ہو جائے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4527

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ سَمِعْتُ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنَّهُ نَهَى عَنِ الْمُخَابَرَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُحَاقَلَةِ،‏‏‏‏ وَأَنْ يُبَاعَ الثَّمَرُ حَتَّى يَبْدُوَ صَلَاحُهُ،‏‏‏‏ وَأَنْ لَا يُبَاعَ إِلَّا بِالدَّنَانِيرِ وَالدَّرَاهِمِ،‏‏‏‏ وَرَخَّصَ فِي الْعَرَايَا .
It was narrated from 'Ata: I heard Jabir bin 'Abdullah (narrate) from the Prophet that he forbade Mukhabarah, Muzabanah and Muhaqalah, an (he forbade) selling fruits until their condition is known, an that they should only sold for Dinars and Dirhams, but he granted a concession regarding the sale of Araya:
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مخابرہ، مزابنہ، محاقلہ سے، اور پکنے سے پہلے پھل بیچنے سے منع فرمایا، اور پھلوں کو درہم و دینار کے سوا کسی اور چیز کے بدلے بیچنے سے منع فرمایا، اور بیع عرایا میں رخصت دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4528

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُفَضَّلُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ وَأَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُخَابَرَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُحَاقَلَةِ،‏‏‏‏ وَبَيْعِ الثَّمَرِ حَتَّى يُطْعَمَ،‏‏‏‏ إِلَّا الْعَرَايَا .
It was narrated from Jabir that: the Prophet forbade Mukhabarah, Muzabanah and Muhaqalah, and selling fruits until they were fit to eat, except in the case f 'Aray.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مخابرہ، مزابنہ، محاقلہ اور کھانے کے لائق ہونے سے پہلے درخت پر لگے پھلوں کو بیچنے سے منع فرما، یا سوائے بیع عرایا کے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4529

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هِشَامٌ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ النَّخْلِ حَتَّى يُطْعَمَ .
It was narrated that Jabir said: the Messenger of Allah forbade selling the fruit of date palms until they are fit to eat.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کھجور بیچنے سے منع فرمایا جب تک کہ وہ کھانے کے لائق نہ ہو جائے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4530

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْقَاسِم،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدٍ الطَّوِيلِ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الثِّمَارِ حَتَّى تُزْهِيَ ،‏‏‏‏ قِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ وَمَا تُزْهِيَ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَتَّى تَحْمَرَّ ،‏‏‏‏ وَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَرَأَيْتَ إِنْ مَنَعَ اللَّهُ الثَّمَرَةَ فَبِمَ يَأْخُذُ أَحَدُكُمْ مَالَ أَخِيهِ .
It was narrated from Anas bin Malik that: the Messenger of Allah forbade selling fruits before they ripen. It was said: O Messenger of Allah what does ripen mean? he said: 'when they turn red. And the Messenger of Allah said: What do you think if Allah withholds the fruits (causes it not to ripen), why would any one of you take his brother's wealth?
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پھلوں کو بیچنے سے منع فرمایا یہاں تک کہ وہ خوش رنگ ہو جائیں، عرض کیا گیا: اللہ کے رسول! یہ خوش رنگ ہونا کیا ہے؟ آپ نے فرمایا: ”یہاں تک کہ لال ہو جائیں“ اور فرمایا: ”دیکھو! اگر اللہ تعالیٰ پھلوں کو روک دے ( پکنے سے پہلے گر جائیں ) تو تم میں کوئی اپنے بھائی کا مال کس چیز کے بدلے لے گا“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4531

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرًا،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنْ بِعْتَ مِنْ أَخِيكَ ثَمَرًا فَأَصَابَتْهُ جَائِحَةٌ،‏‏‏‏ فَلَا يَحِلُّ لَكَ أَنْ تَأْخُذَ مِنْهُ شَيْئًا بِمَ تَأْخُذُ مَالَ أَخِيكَ بِغَيْرِ حَقٍّ .
Jabir said: The Messenger of Allah said: If you sell fruits to your brother then the crop fails, it is not permissible for you it takes anything from him. Why would you take the wealth of your brother unlawfully? '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اگر تم نے اپنے ( مسلمان ) بھائی سے پھل بیچے پھر اچانک ان پر کوئی آفت آ گئی تو تمہارے لیے جائز نہیں کہ تم اس سے کچھ لو، آخر تم کس چیز کے بدلے میں ناحق اپنے ( مسلمان ) بھائی کا مال لو گے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4532

أَخْبَرَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ حَمْزَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ثَوْرُ بْنُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ ابْنَ جُرَيْجٍ يُحَدِّثُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ الْمَكِّيِّ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ مَنْ بَاعَ ثَمَرًا فَأَصَابَتْهُ جَائِحَةٌ،‏‏‏‏ فَلَا يَأْخُذْ مِنْ أَخِيهِ،‏‏‏‏ وَذَكَرَ شَيْئًا عَلَى مَا يَأْكُلُ أَحَدُكُمْ مَالَ أَخِيهِ الْمُسْلِمِ .
It was narrated from Jabir bin 'Abdullah that the Messenger of Allah said: Whoever sells fruit then his crop fails, he should not take (anything) from his brother. (And he said something along the lines of) Why would anyone of you consume the wealth of his Muslim brother?
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے پھل بیچے پھر ان پر کوئی آفت آ گئی تو وہ اپنے بھائی سے ( کچھ ) نہ لے، آخر تم کس چیز کے بدلے میں اپنے مسلمان بھائی کا مال کھاؤ گے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4533

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدٍ وَهُوَ الْأَعْرَجُ،‏‏‏‏ عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ عَتِيقٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ:‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَضَعَ الْجَوَائِحَ .
It was narrated from Jabir that: the Prophet annulled transaction in the event of crop faioure.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے آفتوں کا نقصان دلوایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4534

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ بُكَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ عِيَاضِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أُصِيبَ رَجُلٌ فِي عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي ثِمَارٍ ابْتَاعَهَا،‏‏‏‏ فَكَثُرَ دَيْنُهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَصَدَّقُوا عَلَيْهِ ،‏‏‏‏ فَتَصَدَّقَ النَّاسُ عَلَيْهِ،‏‏‏‏ فَلَمْ يَبْلُغْ ذَلِكَ وَفَاءَ دَيْنِهِ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ خُذُوا مَا وَجَدْتُمْ وَلَيْسَ لَكُمْ إِلَّا ذَلِكَ .
it was narrated that Abu Sa' eed Al-Khudri said: At the time of the Messenger of Allah, a ma suffered loss of some fruit that he had purchased, and his debts increased. The Messenger of Allah said: 'give him charity.' So the people gave him charity, but that was not enough to pay of his debts. The Messenger of Allah said: Take what you find but you have no right to or than that.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں ایک شخص کے پھلوں پر جسے اس نے خرید رکھا تھا کوئی آفت آ گئی، چنانچہ اس پر بہت سارا قرض ہو گیا، تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اسے خیرات دو“، تو لوگوں نے اسے خیرات دی، لیکن خیرات اتنی اکٹھا نہ ہوئی جس سے اس کے تمام قرض کی ادائیگی ہو جاتی تو آپ نے ( اس کے قرض خواہوں سے ) کہا: ”جو پا گئے ہو وہ لے لو، اس کے علاوہ اب کچھ اور دینا لینا نہیں ہے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4535

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدٍ الْأَعْرَجِ،‏‏‏‏ عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ عَتِيكٍ،‏‏‏‏ قَالَ قُتَيْبَةُ:‏‏‏‏ عَتِيكٌ بِالْكَافِ وَالصَّوَابُ عَتِيقٌ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الثَّمَرِ سِنِينَ .
It was narrated from Jabir that: the Prophet forbade selling the harvest for a number of years (in advance.)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی سال تک کے لیے پھل بیچنے سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4536

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الثَّمَرِ بِالتَّمْرِ . (حديث مرفوع) (حديث موقوف) وقَالَ وقَالَ ابْنُ عُمَرَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي الْعَرَايَا .
It was narrated from Salim, from his father, that: the Prophet forbade selling fresh dates still on the tree for dried dates. Ibn 'Umar said: Azid bin Thabit narrated to me, that Allah's Messenger permitted that in the case o 'Ayaya '
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے درخت کے پھل ( کھجور ) توڑے ہوئے پھلوں ( کھجور ) سے بیچنے سے منع فرمایا۔ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کہتے ہیں: مجھ سے زید بن ثابت رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع عرایا میں اجازت عطا فرمائی ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4537

أَخْبَرَنِي زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةُ أَنْ يُبَاعَ مَا فِي رُءُوسِ النَّخْلِ بِتَمْرٍ بِكَيْلٍ مُسَمًّى،‏‏‏‏ إِنْ زَادَ لِي وَإِنْ نَقَصَ فَعَلَيَّ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Messenger of Allah forbade Muzabanah. Ad Muzabanah is when what is art the tops of the trees is sold for a certain amount f dried dates; if there are more then I gain, and if there are less the I lose.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مزابنہ سے منع فرمایا، اور مزابنہ یہ ہے کہ درخت میں موجود پھل کو متعین توڑے ہوئے پھلوں سے بیچنا اس طور پر کہ زیادہ ہوا تو بھی میرا ( یعنی کا ) اور کم ہوا تو بھی میرے ذمہ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4538

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةُ:‏‏‏‏ بَيْعُ الثَّمَرِ بِالتَّمْرِ كَيْلًا،‏‏‏‏ وَبَيْعُ الْكَرْمِ بِالزَّبِيبِ كَيْلًا .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the messenger of Allah forbade Muzabana, and Muzabanah means selling fresh dates still on tree for dried dates by measure, and selling fresh grapes for raisins by measure.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مزابنہ سے منع فرمایا، مزانبہ درخت پر لگے کھجور کو توڑے ہوئے کھجور سے ناپ کر بیچنا، اور بیل پر لگے تازہ انگور کو توڑے ہوئے انگور ( کشمش ) سے ناپ کر بیچنا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4539

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو الْأَحْوَصِ،‏‏‏‏ عَنْ طَارِقٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ،‏‏‏‏ عَنْ رَافِعِ بْنِ خَدِيجٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ الْمُحَاقَلَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةِ .
It was narrated that Rafi bin Khadij said: the Messenger of Allah forbade Muhaqalah and Muzabana. (Hasan )
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع محاقلہ اور مزانبہ سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4540

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي الْعَرَايَا .
It was narrated from Salim that his father said: Zaid bin Thabit told me that the Messenger of Allah granted a concession regarding the sale of 'Arays.
مجھ سے زید بن ثابت رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع عرایا میں اجازت دی ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4541

قَالَ الْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ:‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ وَهْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي يُونُسُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي خَارِجَةُ بْنُ زَيْدِ بْنِ ثَابِتٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي الْعَرَايَا بِالتَّمْرِ وَالرُّطَبِ .
Kharijah bin Zaid bin Thabit narrated from his father that: the Messenger of Allah granted a concession regarding 'Araya sales regarding dried dates and fresh dates.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع عرایا میں خشک کھجور کو تر کھجور سے بیچنے کی اجازت دی ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4542

أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي نَافِعٌ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ ثَابِتٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي بَيْعِ الْعَرَايَا تُبَاعُ بِخِرْصِهَا .
It was narrated from Zaid bin Thabit that: the Messenger of Allah granted a concession allowing Araya sales by estimation.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عاریت والی بیع میں اجازت دی کہ ( اس کی تازہ کھجوروں کو ) اندازہ کر کے ( توڑی ہوئی ) کھجوروں کے بدلے بیچی ( جا سکتی ) ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4543

حَدَّثَنَا عِيسَى بْنُ حَمَّادٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي زَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي بَيْعِ الْعَرِيَّةِ بِخِرْصِهَا تَمْرًا .
Zaid bin Thabit narrated that: the Messenger of Allah granted a concession allowing 'Araya sales for dried dates by estimation.
مجھ سے زید بن ثابت رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع عریہ کی اجازت دی کہ اس ( کی تازہ کھجوروں کو ) اندازہ لگا کر کے خشک کھجوروں کے بدلے بیچی ( جا سکتی ) ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4544

أَخْبَرَنَا أَبُو دَاوُدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ أَنَّ سَالِمًا أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ إِنَّ زَيْدَ بْنَ ثَابِتٍ أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي بَيْعِ الْعَرَايَا بِالرُّطَبِ وَبِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ وَلَمْ يُرَخِّصْ فِي غَيْرِ ذَلِكَ .
It was narrated the Zaid bin Thabit sadi: The Messenger of Allah granted a concession allowing 'Araya sales for fresh dates and for dried dates, but he did not allow anything other than that.
ان سے زید بن ثابت رضی اللہ عنہ نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عاریت والی بیع میں اجازت دی کہ وہ توڑی ہوئی تازہ اور سوکھی کھجور سے بیچی جا سکتی ہے۔ اس کے علاوہ کسی اور چیز میں رخصت نہیں دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4545

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ وَيَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ دَاوُدَ بْنِ الْحُصَيْنِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ رَخَّصَ فِي الْعَرَايَا أَنْ تُبَاعَ بِخِرْصِهَا فِي خَمْسَةِ أَوْسُقٍ،‏‏‏‏ أَوْ مَا دُونَ خَمْسَةِ أَوْسُقٍ .
It was narrated from Au Hurairah that the prophet granted a concession allowing estimation for 'Ararya sales, so long as they were five Wasq or less then that
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے عاریت والی بیع میں ( یہ ) اجازت دی کہ پانچ وسق یا پانچ وسق سے کم کھجور اندازہ لگا کر کے بیچی جائے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4546

صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني: حديث نمبر 4541
It was narrated from Sahl bin Abi Hathamah that the Prophet forbade selling fruits before their condition was known, but he granted a concession allowing 'Araya sales by estimate, so its people could eat fresh dates.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے پھل بیچنے سے منع فرمایا جب تک کہ پک نہ جائیں اور بیع عرایا میں اجازت دی کہ اندازہ لگا کر کے بیچا جائے، تاکہ کچی کھجور والے تازہ کھجور کھا سکیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4547

أَخْبَرَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ عِيسَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي الْوَلِيدُ بْنُ كَثِيرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي بُشَيْرُ بْنُ يَسَارٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَافِعَ بْنَ خَدِيجٍ،‏‏‏‏ وَسَهْلَ بْنَ أَبِي حَثْمَةَ حَدَّثَاهُ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُزَابَنَةِ بَيْعُ الثَّمَرِ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ إِلَّا لِأَصْحَابِ الْعَرَايَا فَإِنَّهُ أَذِنَ لَهُمْ .
Rafi bin Khadij and Sahl Bi Abi Hathamah narrated that the Messenger of Allah forbade Muzabanah, which means selling fresh dates still on the tree for dried dates, except in cases of 'Araya, for which he gave permission. (Sahih
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مزابنہ سے منع فرمایا، یعنی: درخت کے پھل کو توڑے ہوئے پھل سے بیچنا، سوائے اصحاب عرایا کے، آپ نے انہیں اس کی اجازت دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4548

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ بُشَيْرِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَصْحَابِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُمْ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ رَخَّصَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي بَيْعِ الْعَرَايَا بِخَرْصِهَا . .
It was narrated from Bashir bin yasar that the Companions of the Messenger of Allah said: The Messenger of Allah granted a concession allowing 'Araya sales by estimate.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تخمینہ ( اندازہ ) لگا کر کے عاریت والی بیع کی اجازت دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4549

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَالِكٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عَبْدُ اللَّهِ بْنُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَبِي عَيَّاشٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعْدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ التَّمْرِ بِالرُّطَبِ ؟،‏‏‏‏ فَقَالَ لِمَنْ حَوْلَهُ:‏‏‏‏ أَيَنْقُصُ الرُّطَبُ إِذَا يَبِسَ ؟ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ فَنَهَى عَنْهُ .
it was narrated that Sa'd said: The Messenger of Allah was asked about (buying) fresh dates with dried dates, and he said to those who were around him: 'Will fresh dates decrease (in weight or volume) when they dry out? they said Yes,' so he forbade that.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے تازہ کھجوروں کے بدلے خشک کھجور بیچنے کے بارے میں پوچھا گیا تو آپ نے اپنے اردگرد موجود لوگوں سے سوال کیا: جب تازہ کھجور سوکھ جاتی ہے تو کیا کم ہو جاتی ہے؟ انہوں نے کہا: ہاں، تو آپ نے اس سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4550

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَلِيِّ بْنِ مَيْمُونٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يُوسُفَ الْفِرْيَابِيُّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ إِسْمَاعِيل بْنِ أُمَيَّةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعْدِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الرُّطَبِ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَيَنْقُصُ إِذَا يَبِسَ ؟ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ فَنَهَى عَنْهُ .
It was narrated that Sa 'd bin Malik said: The Messenger of Allah was asked about (buying) said; 'Will fresh dates decrees (in weight or volume) when they dry out? 'They said 'yes so he forbade that
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سوکھی کھجور کے بدلے تازہ کھجور بیچنے کے متعلق سوال کیا گیا؟ تو آپ نے فرمایا: ”کیا تازہ کھجور سوکھنے پر کم ہو جائے گی؟“ لوگوں نے کہا: جی ہاں، تو آپ نے اس سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4551

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الصُّبْرَةِ مِنَ التَّمْرِ لَا يُعْلَمُ مَكِيلُهَا بِالْكَيْلِ الْمُسَمَّى مِنَ التَّمْرِ .
Jabir bin 'Abdullahsaid: The Messenger of Allah forbade selling a heap of dried dates whose volume is unknown for known volume of dried dates,
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بے ناپی کھجور کے ڈھیر کو ناپی ہوئی کھجور سے بیچنے سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4552

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا تُبَاعُ الصُّبْرَةُ مِنَ الطَّعَامِ بِالصُّبْرَةِ مِنَ الطَّعَامِ،‏‏‏‏ وَلَا الصُّبْرَةُ مِنَ الطَّعَامِ بِالْكَيْلِ الْمُسَمَّى مِنَ الطَّعَامِ .
Abu Zubair narrated that he heard Jabir bin 'Abdullah say: The Prophet said: ' A heap of grain should not be sold for a heap of grain, or for a heap of grain of known measure.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اناج کا ڈھیر اناج کے ڈھیر سے نہیں بیچا جائے گا ۱؎، اور نہ ہی اناج کا ڈھیر ناپے اناج سے ۲؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4553

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ الْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ أَنْ يَبِيعَ ثَمَرَ حَائِطِهِ وَإِنْ كَانَ نَخْلًا بِتَمْرٍ كَيْلًا،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ كَرْمًا أَنْ يَبِيعَهُ بِزَبِيبٍ كَيْلًا،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ زَرْعًا أَنْ يَبِيعَهُ بِكَيْلِ طَعَامٍ،‏‏‏‏ نَهَى عَنْ ذَلِكَ كُلِّهِ .
It was narrated that Ibn 'umar said: The Messenger of Allah forbade Muzabanah, which refers to when a man sells the dates of his grove while they are still on the trees, for a measure of dry on the tree, for a measure of dry dates, estimating the amount( of dates on the trees). Or, if it is grapes, he sells them when they are still on the vines, for a measure of raisins, estimating the amount (of grapes on the vines). Or if it is grain in the field, he sells it for grain that has been harvested, estimating the amount (of grain in the fields). He forbade all of that.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مزابنہ سے منع فرمایا ہے ”مزابنہ یہ ہے کہ آدمی اپنے باغ میں لگے پھل کو بیچے، اگر وہ کھجور ہو تو نپی ہوئی کھجور سے بیچے، اور اگر انگور ہو تو اسے نپے ہوئے خشک انگور ( منقیٰ یا کشمش ) سے بیچے، اور اگر کھڑی کھیتی ( فصل ) ہو تو اسے نپے ہوئے اناج سے بیچے“۔ آپ نے ان تمام اقسام کی بیع سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4554

حَدَّثَنَا عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَخْلَدُ بْنُ يَزِيدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُخَابَرَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُحَاقَلَةِ،‏‏‏‏ وَعَنْ بَيْعِ الثَّمَرِ قَبْلَ أَنْ يُطْعَمَ،‏‏‏‏ وَعَنْ بَيْعِ ذَلِكَ إِلَّا بِالدَّنَانِيرِ وَالدَّرَاهِمِ .
It was narrated from Jabir that: the Messenger of Allah forbade Mukhabarah, Muzabanah and Muhaqalah, and selling dates before they arte fit or eating, and selling them for anything except Dinars and Dirhams. ,
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع مخابرہ، مزابنہ اور محاقلہ سے منع فرمایا، اور کھانے کے لائق ہونے سے پہلے کھجور کو بیچنے سے، اور اسے سوائے دینار اور درہم کے کسی اور چیز سے بیچنے سے ( منع فرمایا ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4555

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ النَّخْلَةِ حَتَّى تَزْهُوَ،‏‏‏‏ وَعَنِ السُّنْبُلِ حَتَّى يَبْيَضَّ وَيَأْمَنَ الْعَاهَةَ،‏‏‏‏ نَهَى الْبَائِعَ وَالْمُشْتَرِيَ .
It was narrated from Ibn 'umar that: the Messenger of Allah forbade selling dates in the trees before they ripen or selling ears of corn before the grains become visible and there is no fear of blight. He forbade that to the seller ad the buyer. ,
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا کھجور کے بیچنے سے یہاں تک کہ وہ خوش رنگ ہو جائے، اور بالی کے بیچنے سے یہاں تک کہ وہ سفید پڑ جائے ( یعنی پک جائے ) اور آفت سے محفوظ ہو جائے۔ آپ نے بیچنے اور خریدنے والے دونوں کو روکا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4556

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو الْأَحْوَصِ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ حَبِيبِ بْنِ أَبِي ثَابِتٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَجُلًا مَنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنَّا لَا نَجِدُ الصَّيْحَانِيَّ وَلَا الْعِذْقَ بِجَمْعِ التَّمْرِ حَتَّى نَزِيدَهُمْ ؟،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ بِعْهُ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ ثُمَّ اشْتَرِ بِهِ .
It was narrate from Abu Salih that: a man form among the companions of the Prophet told him, he said: O Messenger of Allah we cannot buy Saihani dates or 'idhq dates for the same amount of mixed dates (which are of inferior quality). Should we increase (the amount we give in payment for the better quality dates)? The messenger of Allah said: Sell them for silver them buy with it
اللہ کے رسول! ہم «صیحانی» ( نامی کھجور ) اور «عذق» ( نامی کھجور ) ردی کھجور کے بدلے نہیں پاتے جب تک کہ ہم زیادہ نہ دیں، تو آپ نے فرمایا: ”اسے درہم سے بیچ دو پھر اس سے ( «صیحانی» اور «عذق» کو ) خرید لو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4557

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الْمَجِيدِ بْنِ سُهَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ وَعَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ:‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اسْتَعْمَلَ رَجُلًا عَلَى خَيْبَرَ،‏‏‏‏ فَجَاءَ بِتَمْرٍ جَنِيبٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَكُلُّ تَمْرِ خَيْبَرَ هَكَذَا ؟ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ وَاللَّهِ يَا رَسُولَ اللَّهِ إِنَّا لَنَأْخُذُ الصَّاعَ مِنْ هَذَا بِصَاعَيْنِ،‏‏‏‏ وَالصَّاعَيْنِ بِالثَّلَاثِ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا تَفْعَلْ،‏‏‏‏ بِعِ الْجَمْعَ بِالدَّرَاهِمِ،‏‏‏‏ ثُمَّ ابْتَعْ بِالدَّرَاهِمِ جَنِيبًا .
It was narrated from Abu Sa'eed Al'Khudri and Abu Hurairah that: the Messenger of Allah appointed a man in charge of kharibar and he brought some Janib dates. The messenger of Allah said; Are all the dates if khaibar like this? He said: No (by Allah, O Messenger of Allah) we take a Sa of these for two for three Sas (of other types of dates). The messenger of Allah said: do not do that Sell the mixed dates for Dirhams then buy the Janib dates with the Dirhams ,
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص کو خیبر کا عامل بنایا، وہ «جنیب» ( نامی عمدہ قسم کی ) کھجور لے کر آیا تو آپ نے فرمایا: ”کیا خیبر کی ساری کھجوریں اسی طرح ہیں؟“ وہ بولا: نہیں، اللہ کی قسم! ہم یہ کھجور دو صاع کے بدلے ایک صاع یا تین صاع کے بدلے دو صاع لیتے ہیں، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”ایسا نہ کرو، گھٹیا اور ردی کھجوروں کو درہم ( پیسوں ) سے بیچ دو، پھر درہم سے «جنیب» خرید لو“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4558

أَخْبَرَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ وَإِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ خَالِدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدٌ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ:‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أُتِيَ بِتَمْرٍ رَيَّانَ،‏‏‏‏ وَكَانَ تَمْرُ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَعْلًا فِيهِ يُبْسٌ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَنَّى لَكُمْ هَذَا ؟ ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ ابْتَعْنَاهُ صَاعًا بِصَاعَيْنِ مِنْ تَمْرِنَا،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا تَفْعَلْ،‏‏‏‏ فَإِنَّ هَذَا لَا يَصِحُّ،‏‏‏‏ وَلَكِنْ بِعْ تَمْرَكَ،‏‏‏‏ وَاشْتَرِ مِنْ هَذَا حَاجَتَكَ .
It was narrated from Abu Sa'eed Al-udri that: some dates from trees that were irrigated artificially were brought to the Messenger of Allah and the dates of the messenger of Allah were dates from trees that were nourished by their roots. He said: Where did you get these from? They said: We bought a Sa of them for two Sa s of our dates: He said: Do not do that, for this is not right. Rather sell your dates and but what you need of these,
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس «ریان» ( نامی عمدہ ) کھجوریں لائی گئیں اور آپ کی «بعل» نامی ( گھٹیا قسم کی ) سوکھی کھجور تھی تو آپ نے فرمایا: ”تمہارے پاس یہ کھجوریں کہاں سے آئیں؟“ لوگوں نے کہا: ہم نے اپنی دو صاع کھجوروں کے بدلے اسے ایک صاع خریدی ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”ایسا نہ کرو، اس لیے کہ یہ چیز صحیح نہیں، البتہ تم اپنی کھجوریں بیچ دو اور پھر اس نقدی سے اپنی ضرورت کی دوسری کھجوریں خریدو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4559

حَدَّثَنِي إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هِشَامٌ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو سَعِيدٍ الْخُدْرِيُّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا نُرْزَقُ تَمْرَ الْجَمْعِ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَنَبِيعُ الصَّاعَيْنِ بِالصَّاعِ،‏‏‏‏ فَبَلَغَ ذَلِكَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا صَاعَيْ تَمْرٍ بِصَاعٍ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا صَاعَيْ حِنْطَةٍ بِصَاعٍ وَلَا دِرْهَمًا بِدِرْهَمَيْنِ .
A Abu Sa 'eed al- Khudri said: We used to be given mixed dates during the time of the Messenger of Allah and we would sell two Sa s for one Sa News of that reached the Messenger of Allah and he said Do not sell) two Sa s of dates for a Sa, or two Sa s of wheat for s Sa or a Dirham for two Dirhams. ,
ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں ردی کھجوریں ملتی تھیں تو ہم دو صاع دے کر ایک صاع ( اچھی کھجوریں ) خرید لیتے تھے، یہ بات رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو معلوم ہوئی تو آپ نے فرمایا: ”کھجور کے دو صاع ایک صاع کے بدلے، گیہوں کے دو صاع ایک صاع کے بدلے اور دو درہم ایک درہم کے بدلے نہ لیے جائیں“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4560

أَخْبَرَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى وَهُوَ ابْنُ حَمْزَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَوْزَاعِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبُو سَلَمَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبُو سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا نَبِيعُ تَمْرَ الْجَمْعِ صَاعَيْنِ بِصَاعٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا صَاعَيْ تَمْرٍ بِصَاعٍ،‏‏‏‏ وَلَا صَاعَيْ حِنْطَةٍ بِصَاعٍ،‏‏‏‏ وَلَا دِرْهَمَيْنِ بِدِرْهَمٍ .
Abu Sa' eed said: We used to sell two Sa s of mixed dates for a Sa but the Prophet said (Do not sell) two Sa s dates for a Sa or two Sa s wheat or a Sa or two Dirhams for a Dirham. ,
ہم لوگ دو صاع ردی کھجوروں کے بدلے ایک صاع ( عمدہ قسم کی کھجوریں ) لیتے تھے، تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”ایک صاع کھجور کے بدلے دو صاع کھجور، ایک صاع گیہوں کے بدلے دو صاع گی ہوں، اور ایک درہم کے بدلے دو درہم لینا جائز نہیں“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4561

أَخْبَرَنَا هِشَامُ بْنُ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى وَهُوَ ابْنُ حَمْزَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْأَوْزَاعِيُّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي يَحْيَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عُقْبَةُ بْنُ عَبْدِ الْغَافِرِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبُو سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَتَى بِلَالٌ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِتَمْرٍ بَرْنِيٍّ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا هَذَا ؟ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ اشْتَرَيْتُهُ صَاعًا بِصَاعَيْنِ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَوِّهْ،‏‏‏‏ عَيْنُ الرِّبَا لَا تَقْرَبْهُ .
Abu Saeed said: Bilal brought some Bami dates to the Messenger of Allah and he said: 'What is this? 'He said: 'I bought a Sa of them for two Sas. The Messenger of Allah said: O! The essence of Riba, do not approach it. '
بلال رضی اللہ عنہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس برنی نامی کھجور لائے، تو آپ نے فرمایا: ”یہ کیا ہے؟“ وہ بولے: یہ میں نے ایک صاع دو صاع دے کر خریدی ہیں۔ آپ نے فرمایا: ”افسوس! یہ تو عین سود ہے، اس کے نزدیک مت جانا“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4562

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكِ بْنِ أَوْسِ بْنِ الْحَدَثَانِ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ عُمَرَ بْنَ الْخَطَّابِ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الذَّهَبُ بِالْوَرِقِ رِبًا إِلَّا هَاءَ وَهَاءَ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرُ بِالتَّمْرِ رِبًا إِلَّا هَاءَ وَهَاءَ،‏‏‏‏ وَالْبُرُّ بِالْبُرِّ رِبًا إِلَّا هَاءَ وَهَاءَ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرُ بِالشَّعِيرِ رِبًا إِلَّا هَاءَ وَهَاءَ .
Umar bin Al-Khattab said: The Messenger of Allah said: '(Exchanging) gold for silver is Riba unless it is done on the spot. (Exchanging) dates for dates is Riba unless it is done on the spot. (Exchanging) wheat for wheat is Riba unless it is done on the spot. (Exchanging) barley is Riba unless it is done on the spot. '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سونا، چاندی کے بدلے سود ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد ہو، کھجور کھجور کے بدلے سود ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد ہو، گی ہوں گیہوں کے بدلے سود ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد ہو، جو جو کے بدلے سود ہے، سوائے اس کے کہ نقدا نقد ہو“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4563

أَخْبَرَنَا وَاصِلُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ فُضَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي زُرْعَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ التَّمْرُ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ وَالْحِنْطَةُ بِالْحِنْطَةِ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرُ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالْمِلْحُ بِالْمِلْحِ يَدًا بِيَدٍ،‏‏‏‏ فَمَنْ زَادَ،‏‏‏‏ أَوِ ازْدَادَ،‏‏‏‏ فَقَدْ أَرْبَى،‏‏‏‏ إِلَّا مَا اخْتَلَفَتْ أَلْوَانُهُ .
Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: 'Dates for dates, wheat for wheat, barley for barley, salt for salt, exchanged hand to hand. Whoever gives more or takes more has engaged in Riba unless they are of different types.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کھجور کے بدلے کھجور، گیہوں کے بدلے گی ہوں، جَو کے بدلے جَو اور نمک کے بدلے نمک میں خرید و فروخت نقدا نقد ہے، جس نے زیادہ دیا، یا زیادہ لیا تو اس نے سود لیا، سوائے اس کے کہ جنس بدل جائے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4564

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ بَزِيعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَلَمَةُ وَهُوَ ابْنُ عَلْقَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سِيرِينَ،‏‏‏‏ عَنْ مُسْلِمِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ وَعَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَتِيكٍ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ جَمَعَ الْمَنْزِلُ بَيْنَ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ وَمُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَهُمْ عُبَادَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الذَّهَبِ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْوَرِقِ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ وَالْبُرِّ بِالْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرِ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرِ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ قَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ وَالْمِلْحِ بِالْمِلْحِ،‏‏‏‏ وَلَمْ يَقُلْهُ الْآخَرُ إِلَّا مِثْلًا بِمِثْلٍ يَدًا بِيَدٍ،‏‏‏‏ وَأَمَرَنَا أَنْ نَبِيعَ الذَّهَبَ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ وَالْوَرِقَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْبُرَّ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرَ بِالْبُرِّ يَدًا بِيَدٍ كَيْفَ شِئْنَا،‏‏‏‏ قَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ فَمَنْ زَادَ،‏‏‏‏ أَوِ ازْدَادَ،‏‏‏‏ فَقَدْ أَرْبَى .
It was narrated that Muslim bin Yasar and 'Abdullah bin 'Atik said: Ubadah bin As-Samit and Muawiyah met at a stopping place on the road. 'Ubadah told them: 'The Messenger of Allah forbade selling gold for gold, silver for silver, wheat for wheat, barley for barley, dates for dates '- one of them said: 'salt for salt, ' but the other did not say it- unless it was like for like, hand to hand. And he commanded us to sell gold for silver and silver for gold, and wheat for barley and barley for wheat, and to hand, however we wanted. ' And one of them said: Whoever gives more or ask for more has engaged in Riba. '
یک دن عبادہ بن صامت اور معاویہ رضی اللہ عنہما اکٹھا ہوئے، عبادہ رضی اللہ عنہ نے لوگوں سے حدیث بیان کی کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں سونے کو سونے کے بدلے، چاندی کو چاندی کے بدلے، گیہوں کو گیہوں کے بدلے، جَو کو جَو کے بدلے اور کھجور کو کھجور کے بدلے ( ان میں سے ایک نے کہا: نمک کو نمک کے بدلے، دوسرے نے یہ نہیں کہا ) بیچنے سے منع کیا، مگر برابر برابر اور نقدا نقد، اور ہمیں حکم دیا کہ ہم سونا چاندی کے بدلے، چاندی سونے کے بدلے، گیہوں جو کے بدلے، جَو گیہوں کے بدلے نقداً نقد بیچیں جیسے بھی ہم چاہیں ۱؎ ان ( دونوں تابعی راویوں ) میں سے ایک نے یہ بھی کہا: ”جس نے زیادہ دیا یا زیادہ لیا تو اس نے سود لیا“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4565

أَخْبَرَنَا الْمُؤَمَّلُ بْنُ هِشَامٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل وَهُوَ ابْنُ عُلَيَّةَ،‏‏‏‏ عَنْ سَلَمَةَ بْنِ عَلْقَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ سِيرِينَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مُسْلِمُ بْنُ يَسَارٍ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ عُبَيْدٍ وَقَدْ كَانَ يُدْعَى ابْنَ هُرْمُزَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ جَمَعَ الْمَنْزِلُ بَيْنَ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ وَبَيْنَ مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ حَدَّثَهُمْ عُبَادَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الذَّهَبِ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةِ بِالْفِضَّةِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرِ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ وَالْبُرِّ بِالْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرِ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ قَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ وَالْمِلْحِ بِالْمِلْحِ،‏‏‏‏ وَلَمْ يَقُلْهُ الْآخَرُ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ مِثْلًا بِمِثْلٍ قَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ مَنْ زَادَ أَوِ ازْدَادَ فَقَدْ أَرْبَى،‏‏‏‏ وَلَمْ يَقُلْهُ الْآخَرُ،‏‏‏‏ وَأَمَرَنَا أَنْ نَبِيعَ الذَّهَبَ بِالْفِضَّةِ،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْبُرَّ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرَ بِالْبُرِّ يَدًا بِيَدٍ كَيْفَ شِئْنَا .
Muslim bin Yasar and Abdullah bin Ubaid who was called Ibn Hurmuz narrated that 'Ubadah bin As-Samit and Muawiyah met at a stopping place on the road. 'Ubadah told them: The Messenger of Allah forbade selling gold for gold, silver for silver, dates for dates, wheat for wheat, barley for barley - one of them said: salt for salt, but the other did not say it- unless it was equal amount for equal amount, like for like. One of them said: Whoever gives more or takes more has engaged in Riba, but he other one did not say it. And he commanded us to sell gold for silver and silver for gold, and wheat for barley and barley for wheat, hand to hand, however we wanted.
عبادہ بن صامت اور معاویہ رضی اللہ عنہما ایک جگہ اکٹھا ہوئے، عبادہ رضی اللہ عنہ نے لوگوں سے حدیث بیان کی کہ ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سونا سونے کے بدلے، چاندی چاندی کے بدلے، کھجور کھجور کے بدلے، گیہوں گی ہوں کے بدلے اور جَو جَو کے بدلے ( ان دونوں راویوں میں سے ایک نے کہا: ) نمک نمک کے بدلے، ( دوسرے نے یہ نہیں کہا ) بیچنے سے منع کیا مگر برابر برابر، نقدا نقد ( ان میں سے ایک نے کہا: ) جس نے زیادہ دیا یا زیادہ طلب کیا، اس نے سود لیا، ( اسے دوسرے ( راوی ) نے نہیں کہا ) اور ہمیں حکم دیا کہ ہم سونا چاندی کے بدلے، چاندی سونے کے بدلے، گیہوں جَو کے بدلے اور جَو گیہوں کے بدلے بیچیں، نقدا نقد جس طرح چاہیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4566

أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ الْمُفَضَّلِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَلَمَةُ بْنُ عَلْقَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مُسْلِمُ بْنُ يَسَارٍ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ عُبَيْدٍ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ جَمَعَ الْمَنْزِلُ بَيْنَ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ وَبَيْنَ مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ فَقَالَ عُبَادَةُ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نَبِيعَ الذَّهَبَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْوَرِقَ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ وَالْبُرَّ بِالْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرَ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرَ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ قَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ وَالْمِلْحَ بِالْمِلْحِ،‏‏‏‏ وَلَمْ يَقُلِ الْآخَرُ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ قَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ مَنْ زَادَ أَوِ ازْدَادَ فَقَدْ أَرْبَى،‏‏‏‏ وَلَمْ يَقُلِ الْآخَرُ وَأَمَرَنَا أَنْ نَبِيعَ الذَّهَبَ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ وَالْوَرِقَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْبُرَّ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرَ بِالْبُرِّ يَدًا بِيَدٍ كَيْفَ شِئْنَا،‏‏‏‏ فَبَلَغَ هَذَا الْحَدِيثُ مُعَاوِيَةَ فَقَامَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا بَالُ رِجَالٍ يُحَدِّثُونَ أَحَادِيثَ عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَدْ صَحِبْنَاهُ وَلَمْ نَسْمَعْهُ مِنْهُ،‏‏‏‏ فَبَلَغَ ذَلِكَ عُبَادَةَ بْنَ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ فَقَامَ فَأَعَادَ الْحَدِيثَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَنُحَدِّثَنَّ بِمَا سَمِعْنَاهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ،‏‏‏‏ وَإِنْ رَغِمَ مُعَاوِيَةُ. خَالَفَهُ قَتَادَةُ رَوَاهُ،‏‏‏‏ عَنْ مُسْلِمِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْأَشْعَثِ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَادَةَ.
Muslim bin Yasar and 'Abdullah bin 'Ubaid said: Ubadah bin As-Samit and Muawiyah met at a stopping place on the road. 'Ubadah said: 'The Messenger of Allah forbade us to sell gold for gold, silver for silver, wheat for wheat, barley for barley, dates for dates ' - one of them said: salt for salt, but the other did not say unless it was equal amount for equal amount, like for like. One of them said: Whoever gives more or takes more has engaged in Riba, but the other one did not say it. And the commanded us to sell gold for silver and silver for gold, and wheat for barley and barley for wheat, hand to hand, however we wanted.' News of this hadith reached Muawiyah and he stood up and said: 'What is the matter with men who narrate Hadiths from the Messenger of Allah when we accompanied him and we never heard him say it? News of that reached 'Ubadah bin As-Samit and he stood up and repeated the Hadith, then he said: 'We will narrate what we heard from the Messenger of Allah, whether Muawiyah likes it or not. ' Qatadah contradicted him, he reported it from Muslim bin Yasar, from Abu Al-=Ashath, from 'Ubadah.
عبادہ بن صامت اور معاویہ رضی اللہ عنہما ایک جگہ اکٹھا ہوئے تو عبادہ رضی اللہ عنہ نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا کہ ہم سونا سونے کے بدلے، چاندی چاندی کے بدلے، گیہوں گیہوں کے بدلے، جَو جَو کے بدلے اور کھجور کھجور کے بدلے بیچیں مگر نقدا نقد اور برابر برابر ( ان دونوں راویوں میں سے کسی ایک نے کہا: ) اور نمک نمک کے بدلے، ( یہ دوسرے نے نہیں کہا اور پھر ان میں سے ایک نے کہا: ) جس نے زیادہ دیا یا زیادہ کا مطالبہ کیا تو اس نے سود کا کام کیا، ( یہ دوسرے نے نہیں کہا ) اور آپ نے ہمیں حکم دیا کہ ہم سونا چاندی سے، چاندی سونے سے، گیہوں جَو سے اور جَو گیہوں سے نقدا نقد بیچیں، جس طرح چاہیں ( یعنی کم و زیادتی ) ۔ جب یہ حدیث معاویہ رضی اللہ عنہ کو پہنچی تو انہوں نے کھڑے ہو کر کہا: کیا بات ہے آخر لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ایسی حدیثیں بیان کرتے ہیں جو ہم نے نہیں سنیں حالانکہ ہم بھی آپ کی صحبت میں رہے، یہ بات عبادہ بن صامت رضی اللہ عنہ کو پہنچی تو وہ کھڑے ہوئے اور دوبارہ حدیث بیان کی اور بولے: ہم تو اسے ضرور بیان کریں گے جو ہم نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا ہے گرچہ معاویہ رضی اللہ عنہ کو یہ ناپسند ہو۔ قتادہ نے اس حدیث کو اس کے برعکس مسلم بن یسار سے، انہوں نے ابوالاشعث سے انہوں نے عبادہ رضی اللہ عنہ سے روایت کیا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4567

أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ آدَمَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي عَرُوبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ مُسْلِمِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْأَشْعَثِ الصَّنْعَانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ وَكَانَ بَدْرِيًّا وَكَانَ بَايَعَ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ أَنْ لَا يَخَافَ فِي اللَّهِ لَوْمَةَ لَائِمٍ،‏‏‏‏ أَنَّ عُبَادَةَ قَامَ خَطِيبًا،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَيُّهَا النَّاسُ،‏‏‏‏ إِنَّكُمْ قَدْ أَحْدَثْتُمْ بُيُوعًا لَا أَدْرِي مَا هِيَ أَلَا إِنَّ الذَّهَبَ بِالذَّهَبِ وَزْنًا بِوَزْنٍ تِبْرُهَا وَعَيْنُهَا،‏‏‏‏ وَإِنَّ الْفِضَّةَ بِالْفِضَّةِ وَزْنًا بِوَزْنٍ تِبْرُهَا وَعَيْنُهَا،‏‏‏‏ وَلَا بَأْسَ بِبَيْعِ الْفِضَّةِ بِالذَّهَبِ يَدًا بِيَدٍ،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةُ أَكْثَرُهُمَا،‏‏‏‏ وَلَا تَصْلُحُ النَّسِيئَةُ أَلَا إِنَّ الْبُرَّ بِالْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرَ بِالشَّعِيرِ مُدْيًا بِمُدْيٍ،‏‏‏‏ وَلَا بَأْسَ بِبَيْعِ الشَّعِيرِ بِالْحِنْطَةِ يَدًا بِيَدٍ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرُ أَكْثَرُهُمَا،‏‏‏‏ وَلَا يَصْلُحُ نَسِيئَةً أَلَا وَإِنَّ التَّمْرَ بِالتَّمْرِ مُدْيًا بِمُدْيٍ،‏‏‏‏ حَتَّى ذَكَرَ الْمِلْحَ مُدًّا بِمُدٍّ،‏‏‏‏ فَمَنْ زَادَ أَوِ اسْتَزَادَ فَقَدْ أَرْبَى .
It was narrated from 'Ubdah bin As-Samit-who had been present at Badar and had given his pledge to the Prophet swearing not to fear the blame of any blamer for the sake of Allah that 'Ubadah stood up to deliver a speech and said: O people, you have invented kinds of transactions, I do not know what they are, but make sure it is gold for gold, of the same weight, or silver for silver, of the same weight. There is nothing wrong with selling silver for gold, hand to hand, giving more silver than gold, but no credit is allowed. When you sell wheat for wheat and barley for barley, it should be measure for measure, but there is nothing wrong with selling barley for wheat, hand to hand, giving more barley than wheat, but no credit is allowed. And when you sell dates for dates, it should be measure for measure And he mentioned salt, measure for measure, and whoever gives more or asks for more has engaged in Riba.
کہ وہ خطاب کرنے کے لیے کھڑے ہوئے اور کہا: لوگو! تم نے خرید و فروخت سے متعلق بعض ایسی چیزیں ایجاد کر لی ہیں کہ میں نہیں جانتا کہ وہ کیا ہیں؟ سنو! سونا سونے کے بدلے، برابر برابر وزن کا ہو، ڈلا ہو یا سکہ، چاندی چاندی کے بدلے برابر برابر وزن ڈالا ہو یا سکہ، اور کوئی حرج نہیں ( یعنی ) چاندی کو سونے سے نقدا نقد بیچنے میں جب کہ چاندی زیادہ ہو، البتہ اس میں «نسیئہ» ( ادھار ) درست نہیں، سنو! گیہوں گیہوں کے بدلے، اور جَو جَو کے بدلے برابر برابر ہو، البتہ جَو گیہوں کے بدلے نقدا نقد بیچنے میں کوئی حرج نہیں جب جَو زیادہ ہو لیکن «نسیئہ» ( ادھار ) درست نہیں، سنو! کھجور کھجور کے بدلے برابر برابر ہو یہاں تک کہ انہوں نے ذکر کیا کہ نمک ( نمک کے بدلے ) برابر برابر ہو، جس نے زیادہ دیا، یا زیادہ کا مطالبہ کیا تو اس نے سود لیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4568

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى،‏‏‏‏ وَإِبْرَاهِيمُ بْنُ يَعْقُوبَ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ عَاصِمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هَمَّامٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا قَتَادَةُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْخَلِيلِ،‏‏‏‏ عَنْ مُسْلِمٍ الْمَكِّيِّ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْأَشْعَثِ الصَّنْعَانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الذَّهَبُ بِالذَّهَبِ تِبْرُهُ وَعَيْنُهُ وَزْنًا بِوَزْنٍ،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةُ بِالْفِضَّةِ تِبْرُهُ وَعَيْنُهُ وَزْنًا بِوَزْنٍ،‏‏‏‏ وَالْمِلْحُ بِالْمِلْحِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرُ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ وَالْبُرُّ بِالْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرُ بِالشَّعِيرِ سَوَاءً بِسَوَاءٍ،‏‏‏‏ مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ فَمَنْ زَادَ أَوِ ازْدَادَ فَقَدْ أَرْبَى ،‏‏‏‏ وَاللَّفْظُ لِمُحَمَّدٍ لَمْ يَذْكُرِ ابْنُ يَعْقُوبَ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرُ بِالشَّعِيرِ.
It was narrated that 'Ubadah bin As-Samit said: The messenger of Allah said: 'Gold for gold, of equal measure; silver for silver, of equal measure; salt for salt, dates for dates wheat for wheat, barley for barley, like for like. Whoever gives more or takes more has engaged in Riba. ' (Sahih) The wording is that of Muhammad Yaqub did not mention - Wheat for wheat .
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سونا سونے کے بدلے، ڈلا ہو یا سکہ، برابر برابر ہو، چاندی چاندی کے بدلے ڈالا ہو یا سکہ، برابر برابر ہو، نمک نمک کے بدلے، کھجور کھجور کے بدلے، گیہوں گیہوں کے بدلے اور جَو جَو کے بدلے برابر برابر اور یکساں ہو، لہٰذا جو زیادہ دے یا زیادہ کا مطالبہ کرے تو اس نے سود لیا“۔ یہ الفاظ محمد بن المثنیٰ کے ہیں، ابراہیم بن یعقوب نے ”جَو جَو کے بدلے“ کا ذکر نہیں کیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4569

أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ أَنَّ أَبَا الْمُتَوَكِّلِ مَرَّ بِهِمْ فِي السُّوقِ،‏‏‏‏ فَقَامَ إِلَيْهِ قَوْمٌ أَنَا مِنْهُمْ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْنَا أَتَيْنَاكَ لِنَسْأَلَكَ عَنِ الصَّرْفِ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِيَّ،‏‏‏‏ قَالَ لَهُ رَجُلٌ:‏‏‏‏ مَا بَيْنَكَ وَبَيْنَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ غَيْرُ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَيْسَ بَيْنِي وَبَيْنَهُ غَيْرُهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَإِنَّ الذَّهَبَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْوَرِقَ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ قَالَ سُلَيْمَانُ:‏‏‏‏ أَوْ قَالَ:‏‏‏‏ وَالْفِضَّةَ بِالْفِضَّةِ،‏‏‏‏ وَالْبُرَّ بِالْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرَ بِالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرَ بِالتَّمْرِ،‏‏‏‏ وَالْمِلْحَ بِالْمِلْحِ،‏‏‏‏ سَوَاءً بِسَوَاءٍ،‏‏‏‏ فَمَنْ زَادَ عَلَى ذَلِكَ،‏‏‏‏ أَوِ ازْدَادَ،‏‏‏‏ فَقَدْ أَرْبَى،‏‏‏‏ وَالْآخِذُ وَالْمُعْطِي فِيهِ سَوَاءٌ .
It was narrated from Sulaiman bin Ali: Abu Al-Mutawakkil passed by them in the market and some people, including me, stood up to greet him. We said: 'We have come to you to ask you about transactions.' He said: 'I heard a man say to Abu Saeed Al-Khudri': 'Is there anyone between you and the Messenger of Allah (in the chain of narrators) apart from Abu Saeed Al-Khudri? He said: 'There is no one else between him and I. He said: Gold for gold, silver for silver, wheat for wheat, barley for barley, dates for dates, salt for salt, equal amounts. Whoever gives more than that or takes more has engaged in Riba, and the taker and the giver are the same. '
بازار میں ان کے پاس سے ابوالمتوکل کا گزر ہوا، تو کچھ لوگ ان کے پاس گئے، ان لوگوں میں میں بھی تھا، ہم نے کہا: ہم آپ کے پاس آئے ہیں تاکہ آپ سے بیع صرف ۱؎ کے بارے میں پوچھیں، تو انہوں نے کہا: میں نے ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کو ( کہتے ) سنا، ( اس پر ) ایک شخص نے ان سے کہا: آپ کے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے درمیان ابوسعید رضی اللہ عنہ کے علاوہ اور کوئی نہیں ہے؟ انہوں نے کہا: میرے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے درمیان ان ( ابوسعید رضی اللہ عنہ ) کے علاوہ کوئی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا: سونا سونے کے بدلے اور چاندی چاندی کے بدلے اور گیہوں گیہوں کے بدلے، جَو جَو کے بدلے، کھجور کھجور کے بدلے، نمک نمک کے بدلے برابر برابر ہو، اب جو اس میں زیادہ دے یا زیادہ کا مطالبہ کرے تو اس نے سود کا کام کیا، اور سود لینے اور دینے والے ( جرم میں ) دونوں برابر ہیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4570

أَخْبَرَنِي هَارُونُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ إِسْمَاعِيل:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَكِيمُ بْنُ جَابِرٍ. ح وَأَنْبَأَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَكِيمُ بْنُ جَابِرٍ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ:‏‏‏‏ الذَّهَبُ الْكِفَّةُ بِالْكِفَّةِ ،‏‏‏‏ وَلَمْ يَذْكُرْ يَعْقُوبُ:‏‏‏‏ الْكِفَّةُ بِالْكِفَّةِ،‏‏‏‏ فَقَالَ مُعَاوِيَةُ:‏‏‏‏ إِنَّ هَذَا لَا يَقُولُ شَيْئًا،‏‏‏‏ قَالَ عُبَادَةُ:‏‏‏‏ إِنِّي وَاللَّهِ مَا أُبَالِي أَنْ لَا أَكُونَ بِأَرْضٍ يَكُونُ بِهَا مُعَاوِيَةُ،‏‏‏‏ إِنِّي أَشْهَدُ أَنِّي سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ ذَلِكَ.
It was narrated that 'Ubadah bin As-Samit said: I heard the Messenger of Allah say: 'Gold, equal amount. ' (One of the narrators) Yaqub did not mention: Equal amount. Muawiyah said: This does not mean anything. 'Ubadah said; By Allah I do not care if I am in a land where Muawiyah is not present. I bear witness that I heard the Messenger of Allah say that.
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: ”سونا ایک پلڑا دوسرے پلڑے کے برابر ہو“، تو معاویہ رضی اللہ عنہ نے کہا: یہ بات تو میرے سمجھ میں نہیں آتی، تو عبادہ رضی اللہ عنہ نے کہا: اللہ کی قسم! مجھے پروا نہیں اگر میں اس سر زمین میں نہ رہوں جہاں معاویہ رضی اللہ عنہ رہیں، میں گواہی دیتا ہوں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4571

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُوسَى بْنِ أَبِي تَمِيمٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ الدِّينَارُ بِالدِّينَارِ،‏‏‏‏ وَالدِّرْهَمُ بِالدِّرْهَمِ،‏‏‏‏ لَا فَضْلَ بَيْنَهُمَا .
It was narrated from Abu Hurairah that the Messenger of Allah said: Dinar for Dinar Dirham for Dirham, no difference between them.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”دینار کے بدلے دینار اور درہم کے بدلے درہم ہو تو ان دونوں میں کمی زیادتی نہ ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4572

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدِ بْنِ قَيْسٍ الْمَكِّيِّ،‏‏‏‏ عَنْ مُجَاهِدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ عُمَرُ:‏‏‏‏ الدِّينَارُ بِالدِّينَارِ،‏‏‏‏ وَالدِّرْهَمُ بِالدِّرْهَمِ،‏‏‏‏ لَا فَضْلَ بَيْنَهُمَا،‏‏‏‏ هَذَا عَهْدُ نَبِيِّنَا صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِلَيْنَا .
It was narrated that Mujahid said: Umar said: Dinar for Dinar, Dirham for Dirham, no difference between them, this is the obligation that our Prophet enjoined upon us.
دینار کے بدلے دینار، درہم کے بدلے درہم کی بیع میں کمی زیادتی جائز نہیں، یہ ہم سے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا عہد ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4573

أَخْبَرَنَا وَاصِلُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ فُضَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي نُعْمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الذَّهَبُ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَزْنًا بِوَزْنٍ،‏‏‏‏ مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةُ بِالْفِضَّةِ،‏‏‏‏ وَزْنًا بِوَزْنٍ،‏‏‏‏ مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ فَمَنْ زَادَ أَوِ ازْدَادَ،‏‏‏‏ فَقَدْ أَرْبَى .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah said: 'Gold for gold, weight for weight, like for like; and silver for silver, weight for weight, like for like. Whoever gives more or takes more has engaged in Riba. '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سونے کے بدلے سونا، برابر برابر اور یکساں ہو گا، اور چاندی کے بدلے چاندی برابر برابر اور یکساں ہو گی، جس نے زیادہ دیا یا زیادہ کا مطالبہ کیا تو اس نے سود کا کام کیا“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4574

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَبِيعُوا الذَّهَبَ بِالذَّهَبِ إِلَّا مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ وَلَا تُشِفُّوا بَعْضَهَا عَلَى بَعْضٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَبِيعُوا الْوَرِقَ بِالْوَرِقِ إِلَّا مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَبِيعُوا مِنْهَا شَيْئًا غَائِبًا بِنَاجِزٍ .
It was narrated from Abu Saeed Al-Khudri that the Messenger of Allah said: Do not sell gold for gold except like for like and do not differentiate. Do not sell silver for silver except like for like, and do not sell it in return for something to be paid later.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سونا سونے کے بدلے نہ بیچو مگر برابر برابر، اور ان میں سے ایک کا دوسرے پر اضافہ نہ کرو، اور چاندی کے بدلے چاندی مت بیچو مگر برابر برابر اور ان میں سے کسی کو نقد کے بدلے ادھار نہ بیچو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4575

أَخْبَرَنَا حُمَيْدُ بْنُ مَسْعَدَةَ،‏‏‏‏ وَإِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ وَهُوَ ابْنُ زُرَيْعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عَوْنٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بَصُرَ عَيْنِي وَسَمِعَ أُذُنِي مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَذَكَرَ النَّهْيَ عَنِ الذَّهَبِ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ وَالْوَرِقِ بِالْوَرِقِ،‏‏‏‏ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ،‏‏‏‏ مِثْلًا بِمِثْلٍ،‏‏‏‏ وَلَا تَبِيعُوا غَائِبًا بِنَاجِزٍ،‏‏‏‏ وَلَا تُشِفُّوا أَحَدَهُمَا عَلَى الْآخَرِ .
It was narrated that Abu Saeed Al-Khudri said: My eyes saw and my ears heard the Messenger of Allah. And he mentioned the prohibition of (selling) gold for gold and silver for silver, unless it is equal amounts, like for like. And do not sell it in return for something to be paid later, and do not differentiate.
میری آنکھوں نے دیکھا اور میرے کانوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا کہ آپ نے سونے کے بدلے سونا اور چاندی کے بدلے چاندی بیچنے سے روکا ہے، سوائے اس کے کہ وہ برابر ہوں، اور ( ان میں سے ) کسی نقد کے بدلے ادھار نہ بیچو، اور نہ ہی ان میں سے ایک کا دوسرے پر اضافہ کرو۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4576

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ أَنَّ مُعَاوِيَةَ بَاعَ سِقَايَةً مِنْ ذَهَبٍ،‏‏‏‏ أَوْ وَرِقٍ بِأَكْثَرَ مِنْ وَزْنِهَا،‏‏‏‏ فَقَالَ أَبُو الدَّرْدَاءِ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَنْهَى عَنْ مِثْلِ هَذَا،‏‏‏‏ إِلَّا مِثْلًا بِمِثْلٍ .
It was narrated from 'Ata' bin Yasir that: Muawiyah sold a cup of gold or silver for more than its weight. Abu Ad-Darda' said: I heard the Messenger of Allah forbid such transactions unless it was like for like.
معاویہ رضی اللہ عنہ نے پینے کا برتن جو سونے یا چاندی کا تھا اس سے زائد وزن کے بدلے بیچا تو ابو الدرداء رضی اللہ عنہ نے کہا: میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس طرح کی بیع سے منع فرماتے ہوئے سنا، سوائے اس کے کہ وہ برابر برابر ہوں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4577

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي شُجَاعٍ سَعِيدِ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ خَالِدِ بْنِ أَبِي عِمْرَانَ،‏‏‏‏ عَنْ حَنَشٍ الصَّنْعَانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ فَضَالَةَ بْنِ عُبَيْدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ اشْتَرَيْتُ يَوْمَ خَيْبَرَ قِلَادَةً فِيهَا ذَهَبٌ،‏‏‏‏ وَخَرَزٌ بِاثْنَيْ عَشَرَ دِينَارًا،‏‏‏‏ فَفَصَّلْتُهَا فَوَجَدْتُ فِيهَا أَكْثَرَ مِنَ اثْنَيْ عَشَرَ دِينَارًا،‏‏‏‏ فَذُكِرَ ذَلِكَ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا تُبَاعُ حَتَّى تُفَصَّلَ .
It was narrated the Fadalah bin 'Ubaid said: On the Day of Khaibar I bought a necklace containing gold and ggems for twelve Dinars. The I took it apart and found that it contatined more than twelve Dinars. Mentiion of that was made to the Prophet and he said: 'It should not be sold until it is taken apart.
خیبر کے دن میں نے ایک ہار جس میں سونا اور نگینے لگے ہوئے تھے، بارہ دینار میں خریدا، پھر میں نے انہیں الگ کیا تو اس میں لگا ہوا سونا بارہ دینار سے زیادہ کا تھا، اس کا ذکر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا گیا تو آپ نے فرمایا: ”جب تک الگ کر لیا جائے اسے نہ بیچا جائے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4578

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَحْبُوبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا اللَّيْثُ بْنُ سَعْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ خَالِدِ بْنِ أَبِي عِمْرَانَ،‏‏‏‏ عَنْ حَنَشٍ الصَّنْعَانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ فَضَالَةَ بْنِ عُبَيْدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَصَبْتُ يَوْمَ خَيْبَرَ قِلَادَةً فِيهَا ذَهَبٌ وَخَرَزٌ فَأَرَدْتُ أَنْ أَبِيعَهَا،‏‏‏‏ فَذُكِرَ ذَلِكَ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ افْصِلْ بَعْضَهَا مِنْ بَعْضٍ،‏‏‏‏ ثُمَّ بِعْهَا .
It was narrated that Fadalah bin 'Ubad said: On the Day of Khaibar I got a necklace containing gold and gems, and I wanted to sell it. Mention of that was made to the Prophet and he said: 'Take it apart, and then sell it. '
مجھے خیبر کے دن ایک ہار ملا جس میں سونا اور نگینے تھے، میں نے اسے بیچنا چاہا، اس کا تذکرہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا گیا تو آپ نے فرمایا: ”ایک کو دوسرے سے الگ کر دو پھر بیچو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4579

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرٍو،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْمِنْهَالِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بَاعَ شَرِيكٌ لِي وَرِقًا بِنَسِيئَةٍ فَجَاءَنِي فَأَخْبَرَنِي،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ هَذَا لَا يَصْلُحُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ قَدْ وَاللَّهِ بِعْتُهُ فِي السُّوقِ وَمَا عَابَهُ عَلَيَّ أَحَدٌ،‏‏‏‏ فَأَتَيْتُ الْبَرَاءَ بْنَ عَازِبٍ،‏‏‏‏ فَسَأَلْتُهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ قَدِمَ عَلَيْنَا النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمَدِينَةَ وَنَحْنُ نَبِيعُ هَذَا الْبَيْعَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا كَانَ يَدًا بِيَدٍ فَلَا بَأْسَ،‏‏‏‏ وَمَا كَانَ نَسِيئَةً فَهُوَ رِبًا ،‏‏‏‏ ثُمَّ قَالَ لِي:‏‏‏‏ ائْتِ زَيْدَ بْنَ أَرْقَمَ،‏‏‏‏ فَأَتَيْتُهُ فَسَأَلْتُهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مِثْلَ ذَلِكَ.
It was narrated that abu Al-Minhal said: Sharik sold some silver on credit for me. He came to me and told me. And I said: 'This is not correct.' He said; 'By Allah, I did this transaction in the market and no one criticized me .' So I went to Al-Bara bin Azib and asked him about that. He said: 'The Prophet came to us in Al-Madinah and we used to do this kind of transaction, but he said: Whatever is hand to hand, there is nothing wrong with it, but whatever is on credit, is Riba. Then he said to me: 'Go to Zaid bin Arqam.' So I went to him and asked him, and he said the same thing.
شریک نے کچھ چاندی ادھار بیچی، پھر میرے پاس کر مجھے بتایا تو میں نے کہا: یہ درست نہیں، انہوں نے کہا: اللہ کی قسم! میں نے تو اسے بازار میں بیچا ہے، لیکن کسی نے اسے غلط نہیں کہا، چنانچہ میں براء بن عازب رضی اللہ عنہما کے پاس آ کر ان سے پوچھا تو انہوں نے کہا: مدینے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے پاس آئے اور ہم اسی طرح سے بیچا کرتے تھے، تو آپ نے فرمایا: ”جب تک نقدا نقد ہو تو کوئی حرج نہیں، لیکن ادھار ہو تو یہ سود ہے“، پھر انہوں نے مجھ سے کہا: زید بن ارقم رضی اللہ عنہ کے پاس جاؤ، میں نے ان کے پاس جا کر معلوم کیا تو انہوں نے بھی اسی جیسا بتایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4580

أَخْبَرَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ دِينَارٍ،‏‏‏‏ وَعَامِرُ بْنُ مُصْعَبٍ،‏‏‏‏ أَنَّهُمَا سَمِعَا أَبَا الْمِنْهَالِ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ الْبَرَاءَ بْنَ عَازِبٍ،‏‏‏‏ وَزَيْدَ بْنَ أَرْقَمَ،‏‏‏‏ فَقَالَا:‏‏‏‏ كُنَّا تَاجِرَيْنِ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَسَأَلْنَا نَبِيَّ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الصَّرْفِ ؟،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنْ كَانَ يَدًا بِيَدٍ فَلَا بَأْسَ،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ نَسِيئَةً فَلَا يَصْلُحُ .
Abu Al-Minhal said: I asked Al-Bara bin 'Azib and Zaid bin Arqam and they said: 'We were merchants at the time of the Messenger of Allah and we asked the Prophet of Allah about money exchange. He said: If it is done hand to hand there is nothing wrong with it, but if it is done on credit then it is not right.
میں نے براء بن عازب اور زید بن ارقم رضی اللہ عنہما سے پوچھا تو انہوں نے کہا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں ہم دونوں تاجر تھے، ہم نے آپ سے بیع صرف ( اثمان کی خرید و فروخت ) کے بارے میں پوچھا، تو آپ نے فرمایا: ”اگر وہ نقدا نقد ہو تو کوئی حرج نہیں اور اگر ادھار ہو تو یہ صحیح نہیں“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4581

أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْحَكَمِ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ حَبِيبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا الْمِنْهَالِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ الْبَرَاءَ بْنَ عَازِبٍ عَنِ الصَّرْفِ ؟،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ سَلْ زَيْدَ بْنَ أَرْقَمَ فَإِنَّهُ خَيْرٌ مِنِّي وَأَعْلَمُ،‏‏‏‏ فَسَأَلْتُ زَيْدًا:‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ سَلْ الْبَرَاءَ فَإِنَّهُ خَيْرٌ مِنِّي وَأَعْلَمُ،‏‏‏‏ فَقَالَا جَمِيعًا:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ الْوَرِقِ بِالذَّهَبِ دَيْنًا .
Abu Al-Minhal said: I asked Al-Bara bin 'Azib about money exchange. He said: 'Ask Zaid bin Arqam, for he is better than me and more knowledgeable.' So I asked Zaid and he said: 'Ask Al-Bara for he is better than me and more knowledgeable.' And they both said: 'The Messenger of Allah forbade (selling) silver for gold on credit. '
میں نے بیع صرف کے بارے میں براء بن عازب رضی اللہ عنہما سے پوچھا، تو انہوں نے کہا: زید بن ارقم رضی اللہ عنہ سے معلوم کر لو، وہ مجھ سے بہتر ہیں اور زیادہ جاننے والے ہیں۔ چنانچہ میں نے زید رضی اللہ عنہ سے پوچھا تو انہوں نے کہا: براء رضی اللہ عنہ سے معلوم کرو وہ مجھ سے بہتر ہیں اور زیادہ جاننے والے ہیں، تو ان دونوں نے کہا: ”رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سونے کے بدلے چاندی ادھار بیچنے سے روکا ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4582

وَفِيمَا قُرِئَ عَلَيْنَا أَحْمَدُ بْنُ مَنِيعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبَّادُ بْنُ الْعَوَّامِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ أَبِي إِسْحَاق،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ أَبِي بَكْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الْفِضَّةِ بِالْفِضَّةِ،‏‏‏‏ وَالذَّهَبِ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ إِلَّا سَوَاءً بِسَوَاءٍ،‏‏‏‏ وَأَمَرَنَا أَنْ نَبْتَاعَ الذَّهَبَ بِالْفِضَّةِ كَيْفَ شِئْنَا،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةَ بِالذَّهَبِ كَيْفَ شِئْنَا .
Abdur-Rahman bin Abi Bakrah narrated that his father said: The Messenger of Allah forbade selling silver for silver and gold for gold, unless it was of equal amounts. And he told us to sell gold for silver however we wanted, and silver for gold however we wanted.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے چاندی کے بدلے چاندی اور سونے کے بدلے سونا بیچنے سے منع فرمایا، مگر برابر برابر، اور ہمیں حکم دیا کہ چاندی کے بدلے سونا جیسے چاہیں خریدیں اور سونے کے بدلے چاندی جیسے چاہیں ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4583

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ كَثِيرٍ الْحَرَّانِيُّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو تَوْبَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُعَاوِيَةُ بْنُ سَلَّامٍ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي كَثِيرٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي بَكْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ نَبِيعَ الْفِضَّةَ بِالْفِضَّةِ إِلَّا عَيْنًا بِعَيْنٍ سَوَاءً بِسَوَاءٍ،‏‏‏‏ وَلَا نَبِيعَ الذَّهَبَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ إِلَّا عَيْنًا بِعَيْنٍ سَوَاءً بِسَوَاءٍ،‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَبَايَعُوا الذَّهَبَ بِالْفِضَّةِ كَيْفَ شِئْتُمْ،‏‏‏‏ وَالْفِضَّةَ بِالذَّهَبِ كَيْفَ شِئْتُمْ .
It was narrated from 'Abdur-Rahman bin Abi Bakrah that his father said: The Messenger of Allah forbade us from selling silver for silver unless it was of equal amounts, or selling gold for gold unless it was of equal amounts. The messenger of Allah said: 'Sell gold for silver however you want, and silver for gold however you want. '
ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا کہ ہم چاندی کے بدلے چاندی بیچیں مگر نقدا نقد اور برابر برابر، اور سونے کے بدلے سونا بیچیں مگر نقدا نقد اور برابر برابر، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”چاندی کے بدلے سونا اور سونے کے بدلے چاندی جیسے چاہو بیچو“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4584

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي يَزِيدَ،‏‏‏‏ سَمِعَ ابْنَ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أُسَامَةُ بْنُ زَيْدٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا رِبًا إِلَّا فِي النَّسِيئَةِ .
Usmah bin Zaid Narrated that the Messenger of Allah said: There is no Riba except in credit.'
مجھ سے اسامہ بن زید رضی اللہ عنہما نے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سود تو صرف ادھار میں ہے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4585

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرٍو،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي صَالِحٍ،‏‏‏‏ سَمِعَ أَبَا سَعِيدٍ الْخُدْرِيَّ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ قُلْتُ لِابْنِ عَبَّاسٍ:‏‏‏‏ أَرَأَيْتَ هَذَا الَّذِي تَقُولُ،‏‏‏‏ أَشَيْئًا وَجَدْتَهُ فِي كِتَابِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ،‏‏‏‏ أَوْ شَيْئًا سَمِعْتَهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَا وَجَدْتُهُ فِي كِتَابِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ،‏‏‏‏ وَلَا سَمِعْتُهُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَلَكِنْ أُسَامَةُ بْنُ زَيْدٍ أَخْبَرَنِي،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّمَا الرِّبَا فِي النَّسِيئَةِ .
It was narrated that Abu Salih heard Abu Saeed Al-Khudri say: I said to Ibn Abbas: 'Do you think that what you are saying is something that you found in the Book of Allah, or something that you heard from the Messenger of Allah?' He said: 'I did not find it in the Book of Allah, nor did I hear it from the messenger of Allah, rather Usamah bin Zaid told me that the Messenger of Allah said: 'Riba is only in credit. '
میں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے کہا: آپ جو یہ باتیں کہتے ہیں، کیا آپ نے انہیں کتاب اللہ ( قرآن ) میں پایا ہے یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا ہے؟ تو انہوں نے کہا: نہ تو میں نے انہیں کتاب اللہ ( قرآن ) میں پایا ہے اور نہ ہی انہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے سنا ہے، لیکن اسامہ بن زید رضی اللہ عنہما نے مجھ سے بیان کیا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سود تو صرف ادھار میں ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4586

أَخْبَرَنِي أَحْمَدُ بْنُ يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي نُعَيْمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنْتُ أَبِيعُ الْإِبِلَ بِالْبَقِيعِ فَأَبِيعُ بِالدَّنَانِيرِ وَآخُذُ الدَّرَاهِمَ،‏‏‏‏ فَأَتَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي بَيْتِ حَفْصَةَ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنِّي أُرِيدُ أَنْ أَسْأَلَكَ إِنِّي أَبِيعُ الْإِبِلَ بِالْبَقِيعِ فَأَبِيعُ بِالدَّنَانِيرِ وَآخُذُ الدَّرَاهِمَ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا بَأْسَ أَنْ تَأْخُذَهَا بِسِعْرِ يَوْمِهَا،‏‏‏‏ مَا لَمْ تَفْتَرِقَا وَبَيْنَكُمَا شَيْءٌ .
It was narrated that Ibn 'Umar said: I used to sell camels at Al-Baqi and I would sell Dinars in exchange for Dirhams. I came to the Prophet in the house of Hafsah and said: 'O Messenger of Allah, I want to ask you: I sell camels in Al-Baqi and I sell Dinars in exchange for Dirhams. He said: 'There is nothing wrong with it if you take the price on that day, unless you depart when there is still unfinished business between you both (buyer and seller). '
میں بقیع میں اونٹ بیچتا، چنانچہ میں دینار سے بیچتا تھا اور درہم لیتا تھا، پھر میں ام المؤمنین حفصہ رضی اللہ عنہا کے گھر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا، تو میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! میں آپ سے کچھ معلوم کرنا چاہتا ہوں، میں بقیع میں اونٹ بیچتا ہوں تو دینار سے بیچتا اور درہم لیتا ہوں؟ آپ نے فرمایا: ”کوئی حرج نہیں، اگر تم اسی دن کے بھاؤ سے لے لو جب تک کہ جدا نہ ہو اور تمہارے درمیان ایک دوسرے کا کچھ باقی نہ ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4587

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو الْأَحْوَصِ،‏‏‏‏ عَنْ سِمَاكٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنْتُ أَبِيعُ الذَّهَبَ بِالْفِضَّةِ،‏‏‏‏ أَوِ الْفِضَّةَ بِالذَّهَبِ،‏‏‏‏ فَأَتَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَأَخْبَرْتُهُ بِذَلِكَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ إِذَا بَايَعْتَ صَاحِبَكَ فَلَا تُفَارِقْهُ وَبَيْنَكَ وَبَيْنَهُ لَبْسٌ .
It was narrated that Ibn 'Umar said: I used to sell gold for silver, or silver for gold. I came to the Messenger of Allah and told him about that, and he said: 'If you make a deal with your companion, d o not leave him when there is still any ambiguity (in the deal) between you. '
میں چاندی کے بدلے سونا یا سونے کے بدلے چاندی بیچتا تھا۔ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آیا، میں نے آپ کو اس کی خبر دی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جب تم اپنے ساتھی سے بیچو تو اس سے الگ نہ ہو جب تک تمہارے اور اس کے درمیان کوئی چیز باقی رہے ( یعنی حساب بے باق کر کے الگ ہو ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4588

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا مُوسَى بْنُ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ:‏‏‏‏ أَنَّهُ كَانَ يَكْرَهُ أَنْ يَأْخُذَ الدَّنَانِيرَ مِنَ الدَّرَاهِمِ،‏‏‏‏ وَالدَّرَاهِمَ مِنَ الدَّنَانِيرِ .
It was narrated from Saeed bin Jubair that: he did not like to exchange Dinars for Dirhams or Dirhams for Dinars.
وہ اس چیز کو ناپسند کرتے تھے کہ وہ درہم ٹھیرا کر دینار اور دینار ٹھیرا کر درہم لیں ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4589

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا مُؤَمَّلٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هَاشِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ:‏‏‏‏ أَنَّهُ كَانَ لَا يَرَى بَأْسًا يَعْنِي فِي قَبْضِ الدَّرَاهِمِ مِنَ الدَّنَانِيرِ،‏‏‏‏ وَالدَّنَانِيرِ مِنَ الدَّرَاهِمِ .
It was narrated from Saeed bin Jubair, from Ibn 'Umar, that: he did not see anything wrong with parying Dirhams for Dinars.
وہ اس میں کوئی حرج نہیں سمجھتے تھے یعنی دینار طے کر کے کر درہم لینے اور درہم طے کر کے کر دینار لینے میں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4590

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْهُذَيْلِ،‏‏‏‏ عَنْ إِبْرَاهِيمَ:‏‏‏‏ فِي قَبْضِ الدَّنَانِيرِ مِنَ الدَّرَاهِمِ أَنَّهُ كَانَ يَكْرَهُهَا إِذَا كَانَ مِنْ قَرْضٍ .
It was narrated from Ibrahim, with regard to exchanging Dirnars for Dirhams, that: he disliked it (this transaction) if it was done on credit. (Da 'if )
درہم طے کر کے کر دینار لینے کو وہ ناپسند کرتے تھے جب وہ قرض کے طور پر ہوں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4591

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ مُوسَى أَبِي شِهَابٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ:‏‏‏‏ أَنَّهُ كَانَ لَا يَرَى بَأْسًا وَإِنْ كَانَ مِنْ قَرْضٍ .
It was narrated from Saeed bin Jubair that: he did not see anything wrong with it even if it was on credit.
وہ اس میں کوئی حرج نہیں سمجھتے تھے خواہ قرض کے طور پر ہو۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4592

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُوسَى بْنُ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ بِمِثْلِهِ. قَالَ أَبُو عَبْد الرَّحْمَنِ:‏‏‏‏ كَذَا وَجَدْتُهُ فِي هَذَا الْمَوْضِعِ.
Something similar was narrated form Saeed bin Jubair. Abu 'Abdur-Rehman (An-Nasai) said: This is what I have found on this topic.
سعید بن جبیر سے اسی طرح مروی ہے۔ ابوعبدالرحمٰن نسائی کہتے ہیں: میں نے اس مقام میں اسے اسی طرح پایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4593

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُعَافَى،‏‏‏‏ عَنْ حَمَّادِ بْنِ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَتَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ رُوَيْدَكَ أَسْأَلُكَ إِنِّي أَبِيعُ الْإِبِلَ بِالْبَقِيعِ بِالدَّنَانِيرِ،‏‏‏‏ وَآخُذُ الدَّرَاهِمَ ؟،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا بَأْسَ أَنْ تَأْخُذَ بِسِعْرِ يَوْمِهَا،‏‏‏‏ مَا لَمْ تَفْتَرِقَا وَبَيْنَكُمَا شَيْءٌ .
It was narrated that Ibn 'Umar said: I came to the Prophet and said: 'Wait, I want to ask you something. I sell camels in Al-Baqi with a price set in Dinars but I accept Dirhams instead.' He said: 'There is nothing wrong with it if you take the price on that day, still unfinished business between you both (buyer and seller) '
میں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آ کر عرض کیا: ٹھہریے! میں آپ سے کچھ پوچھنا چاہتا ہوں؟ میں بقیع میں دینار کے بدلے اونٹ بیچتا ہوں اور درہم لیتا ہوں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اگر اسی دن کے بھاؤ سے لو تو کوئی حرج نہیں جب تک کہ تم ایک دوسرے سے الگ نہ ہو اور تمہارے درمیان ایک دوسرے پر کچھ باقی ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4594

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي مُحَارِبُ بْنُ دِثَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَمَّا قَدِمَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمَدِينَةَ،‏‏‏‏ دَعَا بِمِيزَانٍ فَوَزَنَ لِي وَزَادَنِي .
It was narrated that Jabir said: When the Prophet (ﷺ) came to Al-Madinah, he called for a scale and weighed (something) for me and gave me more.
جب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ آئے تو آپ نے ترازو منگا کر اس سے مجھے تول کر دیا اور مجھے اس سے کچھ زیادہ دیا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4595

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ يَزِيدَ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ مِسْعَرٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَارِبِ بْنِ دِثَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَضَانِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَزَادَنِي .
It was narrated that Jabir said: 'The Messenger of Allah paid off what he owed me, and gave me more.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے میرا قرض دیا اور مجھے مزید دیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4596

أَخْبَرَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ سِمَاكٍ،‏‏‏‏ عَنْ سُوَيْدِ بْنِ قَيْسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ جَلَبْتُ أَنَا وَمَخْرَفَةُ الْعَبْدِيُّ بَزًّا مِنْ هَجَرَ،‏‏‏‏ فَأَتَانَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَنَحْنُ بِمِنًى وَوَزَّانٌ يَزِنُ بِالْأَجْرِ،‏‏‏‏ فَاشْتَرَى مِنَّا سَرَاوِيلَ،‏‏‏‏ فَقَالَ لِلْوَزَّانِ:‏‏‏‏ زِنْ وَأَرْجِحْ .
It was narrated that Suwaid bin Qais said: Makhrafah Al-Abdi and I brought some cloth from Hajar, and the Messenger of Allah came to us while we were in Mina where there w a man who weighed (goods) in return for payment. He bought some trousers from us, and said to the man who weighed: 'Weigh it, and allow more. '
میں اور مخرفہ عبدی رضی اللہ عنہ مقام ہجر سے کپڑا لائے، ہم منیٰ میں تھے کہ ہمارے پاس رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آ گئے، وہاں ایک تولنے والا تھا جو اجرت پر تول رہا تھا، تو آپ نے ہم سے پاجامہ خریدا اور تولنے والے سے فرمایا: ”جھکتا ہوا تولو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4597

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ سِمَاكِ بْنِ حَرْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا صَفْوَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بِعْتُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ سَرَاوِيلَ قَبْلَ الْهِجْرَةِ فَأَرْجَحَ لِي .
It was narrated that Simak bin Harb said: I heard Abu Safwan say: 'I bought a pair of trousers from the Messenger of Allah before the Hijrah, and he weighed it for me and allowed me. '
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ہجرت سے قبل پاجامے بیچے تو آپ نے میرے لیے جھکتی ہوئی تول تولی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4598

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ الْمُلَائِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ. ح وَأَنْبَأَنَا مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا أَبُو نُعَيْمٍ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ حَنْظَلَةَ،‏‏‏‏ عَنْ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الْمِكْيَالُ عَلَى مِكْيَالِ أَهْلِ الْمَدِينَةِ،‏‏‏‏ وَالْوَزْنُ عَلَى وَزْنِ أَهْلِ مَكَّةَ ،‏‏‏‏ وَاللَّفْظُ لِإِسْحَاقَ.
It was narrated that Ibn 'Umar said: The Messenger of Allah said: Volume is to be measured according to the system of the people of Al-Madinah, and weight is to be measured according to the system of the peole of Makkah. ' (Sahih) This is the wording of Ishaq (one of the narrators).
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ” «مکیال» ( ناپنے کا آلہ ) مدینے والوں کا معتبر ہے اور وزن اہل مکہ کا معتبر ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4599

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ طَعَامًا فَلَا يَبِعْهُ حَتَّى يَسْتَوْفِيَهُ .
It was narrated that Ibn 'Umar said: The Messenger of Allah said: 'Whoever buys food, let him not sell it until he has taken possession of it. '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے غلہ خریدا تو وہ اسے اس وقت تک نہ بیچے جب تک اسے مکمل طور پر اپنی تحویل میں نہ لے لے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4600

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا ابْنُ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ طَعَامًا فَلَا يَبِعْهُ حَتَّى يَقْبِضَهُ .
It was narrated from 'Abdullah bin 'Umar that the Messenger of Allah said: Whoever buys food let him not sell it until he has taken possession of it.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے غلہ خریدا تو اسے اس وقت تک نہ بیچے جب تک اس کو اپنی تحویل میں نہ لے لے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4601

أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَرْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا قَاسِمٌ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ طَعَامًا فَلَا يَبِيعُهُ حَتَّى يَكْتَالَهُ .
It was narrated that Ibn 'Abbas said: The Messenger of Allah said: 'Whoever buys food, let him not sell it until he has checked its weight.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جو اناج خریدے تو اسے اس وقت تک نہ بیچے جب تک اسے ناپ نہ لے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4602

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرٍو،‏‏‏‏ عَنْ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِمِثْلِهِ،‏‏‏‏ وَالَّذِي قَبْلَهُ حَتَّى يَقْبِضَهُ.
It was narrated that Ibn 'Abbas said: I heard the Prophet say something similar to the preceding two reports until he takes possession of it.
میں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے اسی طرح سے سنا، ( اس سے پہلی والی روایت میں «حتى يقبضه» کے الفاظ ہیں ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4603

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ عَنْ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ أَمَّا الَّذِي نَهَى عَنْهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَنْ يُبَاعَ حَتَّى يُسْتَوْفَى الطَّعَامُ .
It was narrated that Tawus said: I heard Ibn 'Abbas say: 'As for that which the Messenger of Allah forbade, (it is) selling before taking possession of food. '
میں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما کو کہتے ہوئے سنا: ناپ تول کر لینے سے جس چیز کے پہلے بیچنے سے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے روکا وہ غلہ ہے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4604

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَعْمَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ طَاوُسٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ طَعَامًا فَلَا يَبِيعُهُ حَتَّى يَقْبِضَهُ ،‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ:‏‏‏‏ فَأَحْسَبُ أَنَّ كُلَّ شَيْءٍ بِمَنْزِلَةِ الطَّعَامِ.
It was narrated that Ibn 'Abbas said: The Messenger of Allah said: 'Whoever buys food let him not sell it until he takes possession of it. Ibn 'Abbas said: I think the same applies to everything else as to food.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جو کوئی گیہوں خریدے تو اسے نہ بیچے جب تک اس کو اپنی تحویل میں نہ لے لے“۔ ابن عباس رضی اللہ عنہما کہتے ہیں: میرا خیال ہے کہ ہر چیز گیہوں ہی کی طرح ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4605

أَخْبَرَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْ حَجَّاجِ بْنِ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عَطَاءٌ،‏‏‏‏ عَنْ صَفْوَانَ بْنِ مَوْهَبٍ أَنَّهُ أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ صَيْفِيٍّ،‏‏‏‏ عَنْ حَكِيمِ بْنِ حِزَامٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا تَبِعْ طَعَامًا حَتَّى تَشْتَرِيَهُ وَتَسْتَوْفِيَهُ ‏.‏
It was narrated that Hakim bin Hizam said: The Messenger of Allah said: Do not sell food until you have bought it and taken possession of it. '
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تم اناج ( غلہ ) مت بیچو جب تک اسے خرید نہ لو اور ناپ نہ لو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4606

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ وَأَخْبَرَنِي عَطَاءٌ ذَلِكَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عِصْمَةَ الْجُشَمِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ حَكِيمِ بْنِ حِزَامٍ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ.
Ibn Jurayi said: Ata' told me that from 'Abdullah bin 'Ismah Al-Jushami from Hakim bin Hizam from the prophet.
حکیم بن حزام رضی اللہ عنہ نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے یہ حدیث روایت کی ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4607

أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو الْأَحْوَصِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الْعَزِيزِ بْنِ رُفَيْعٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي رَبَاحٍ،‏‏‏‏ عَنْ حِزَامِ بْنِ حَكِيمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ حَكِيمُ بْنُ حِزَامٍ:‏‏‏‏ ابْتَعْتُ طَعَامًا مِنْ طَعَامِ الصَّدَقَةِ،‏‏‏‏ فَرَبِحْتُ فِيهِ قَبْلَ أَنْ أَقْبِضَهُ،‏‏‏‏ فَأَتَيْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَذَكَرْتُ ذَلِكَ لَهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا تَبِعْهُ حَتَّى تَقْبِضَهُ .
Hakim bin Hizam said: I bought some food and made food and made a profit on it (by selling it) before I took possession of it. I came to the Messenger of Allah and told him about that and he said: 'Do not sell it until you take possession of it. '
میں نے صدقے کے اناج میں سے خریدا تو اسے اپنی تحویل میں لینے سے پہلے ہی مجھے اس میں نفع ملا، میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آ کر آپ سے اس کا ذکر کیا، تو آپ نے فرمایا: ”جب تک تحویل میں نہ لے لو اسے مت بیچو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4608

أَخْبَرَنَا سُلَيْمَانُ بْنُ دَاوُدَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ وَهْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ الْحَارِثِ،‏‏‏‏ عَنْ الْمُنْذِرِ بْنِ عُبَيْدٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْقَاسِمِ بْنِ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى أَنْ يَبِيعَ أَحَدٌ طَعَامًا اشْتَرَاهُ بِكَيْلٍ حَتَّى يَسْتَوْفِيَهُ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Prophet forbade anyone to sell food that he brought
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا کہ کوئی ناپ کر خریدا ہوا اناج بیچے جب تک کہ اسے پورا پورا اپنی تحویل میں نہ لے لے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4609

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا فِي زَمَانِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَبْتَاعُ الطَّعَامَ،‏‏‏‏ فَيَبْعَثُ عَلَيْنَا مَنْ يَأْمُرُنَا بِانْتِقَالِهِ مِنَ الْمَكَانِ الَّذِي ابْتَعْنَا فِيهِ إِلَى مَكَانٍ سِوَاهُ قَبْلَ أَنْ نَبِيعَهُ .
It was narrated that 'Abdullah bin 'Umar said: During the time the Messenger of Allah we used to buy food, and he sent someone to tell us to remove it from the place where we had bought it, to another place, b before selling
ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں اناج خریدتے تھے، پھر آپ ایک شخص کو ہمارے پاس بھیجتے جو ہمیں حکم دیتا کہ اسے اس جگہ سے کسی دوسری جگہ منتقل کر لے جہاں سے ہم نے خریدا ہے قبل اس کے کہ ہم اسے فروخت کریں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4610

أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ عُبَيْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي نَافِعٌ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ:‏‏‏‏ أَنَّهُمْ كَانُوا يَبْتَاعُونَ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي أَعْلَى السُّوقِ جُزَافًا،‏‏‏‏ فَنَهَاهُمْ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ يَبِيعُوهُ فِي مَكَانِهِ حَتَّى يَنْقُلُوهُ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: they used to buy and sell during the time of the Messenger of Allah at the top of the marketplace without measuring. The Messenger of Allah forbade them to sell it in the place where they had bought it until they moved it.
لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد میں بازار کی اونچی جگہ پر ڈھیر خریدا کرتے تھے تو آپ نے انہیں اسے اسی جگہ بیچنے سے روکا جب تک کہ وہ اسے منتقل نہ کر لیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4611

أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الْحَكَمِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعَيْبُ بْنُ اللَّيْثِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ أَنَّ ابْنَ عُمَرَ حَدَّثَهُمْ:‏‏‏‏ أَنَّهُمْ كَانُوا يَبْتَاعُونَ الطَّعَامَ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنَ الرُّكْبَانِ،‏‏‏‏ فَنَهَاهُمْ أَنْ يَبِيعُوا فِي مَكَانِهِمُ الَّذِي ابْتَاعُوا فِيهِ حَتَّى يَنْقُلُوهُ إِلَى سُوقِ الطَّعَامِ .
It was narrated from Nafi that Ibn 'UMar told them, that: they used to buy foold from the riders at the time of the Messenger of Allah and he forbade them to sell it in the place where they had bought it until they moved it to the food market.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد میں لوگ سواروں سے اناج ( غلہ ) خریدتے تھے تو آپ نے انہیں اسی جگہ بیچنے سے روکا جہاں انہوں نے اسے خریدا تھا، یہاں تک کہ وہ اسے غلہ منڈی منتقل کر لیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4612

أَخْبَرَنَا نَصْرُ بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ،‏‏‏‏ عَنْ مَعْمَرٍ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ رَأَيْتُ النَّاسَ يُضْرَبُونَ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا اشْتَرَوْا الطَّعَامَ جُزَافًا،‏‏‏‏ أَنْ يَبِيعُوهُ حَتَّى يُؤْوُوهُ إِلَى رِحَالِهِمْ .
It was narrated from Salim that his father said: I saw people being beaten (in punishment) at the time of the Messenger of Allah for buying food unmeasured and selling it before bringing it to their own camp.
میں نے دیکھا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں لوگوں کی پٹائی اس بات پر ہوتی تھی کہ جب وہ اناج اندازہ لگا کر خریدیں تو اسے گھر تک لانے سے پہلے ہی فروخت کر دیں۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4613

أَخْبَرَنِي مُحَمَّدُ بْنُ آدَمَ،‏‏‏‏ عَنْ حَفْصِ بْنِ غِيَاثٍ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَسْوَدِ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ اشْتَرَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْ يَهُودِيٍّ طَعَامًا إِلَى أَجَلٍ وَرَهَنَهُ دِرْعَهُ .
It was narrated that 'Aishah said: The Messenger of Allah bought some food from a Jew with payment to be made later, and he put his shield in pledge for that.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک یہودی سے کچھ مدت تک کے لیے ادھار اناج خریدا اور اس کے پاس اپنی زرہ رہن رکھی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4614

أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هِشَامٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا قَتَادَةُ،‏‏‏‏ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ:‏‏‏‏ أَنَّهُ مَشَى إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِخُبْزِ شَعِيرٍ وَإِهَالَةٍ سَنِخَةٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ وَلَقَدْ رَهَنَ دِرْعًا لَهُ عِنْدَ يَهُودِيٍّ بِالْمَدِينَةِ،‏‏‏‏ وَأَخَذَ مِنْهُ شَعِيرًا لِأَهْلِهِ .
It was narrated from Anas bin Malik that he brought some barley bread and rancid oil to the Messenger of Allah. He said: He put his armor in pledge for that with a Jew in Al-Madinah, and he took some barley from him for his family.
وہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس جو کی ایک روٹی اور بودار چربی لے گئے، اور آپ نے اپنی زرہ مدینے کے ایک یہودی کے پاس گروی رکھ دی تھی اور اپنے گھر والوں کے لیے اس سے جَو لیے تھے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4615

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ وَحُمَيْدُ بْنُ مَسْعَدَةَ،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَحِلُّ سَلَفٌ وَبَيْعٌ،‏‏‏‏ وَلَا شَرْطَانِ فِي بَيْعٍ،‏‏‏‏ وَلَا بَيْعُ مَا لَيْسَ عِنْدَكَ .
It was narrated from'Amr bin Shu'aib, from his father that his grandfather, Said: that the Messenger of Allah said: It is not permissible to lend on the condition of a sale, or to have two conditions in one transaction, or to sell what you do not have. (Sahih
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”ادھار اور بیع ایک ساتھ جائز نہیں ۱؎، اور نہ ہی ایک بیع میں دو شرطیں درست ہیں ۲؎، اور نہ اس چیز کی بیع درست ہے جو سرے سے تمہارے پاس ہو ہی نہ“ ۳؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4616

أَخْبَرَنَا عُثْمَانُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ سُلَيْمَانَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبَّادِ بْنِ الْعَوَّامِ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي عَرُوبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي رَجَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ عُثْمَانُ هُوَ مُحَمَّدُ بْنُ سَيْفٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَطَرٍ الْوَرَّاقِ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَيْسَ عَلَى رَجُلٍ بَيْعٌ فِيمَا لَا يَمْلِكُ .
It was narrated from 'Amr bin Shu'aib, from his father, that his grandfather said: The Messenger of Allah said: 'No man is bound by a transaction involving the sale of something that he does not possess.'''
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اس چیز کا بیچنا آدمی کے لیے جائز نہیں جس کا وہ مالک نہ ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4617

حَدَّثَنَا زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو بِشْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ يُوسُفَ بْنِ مَاهَكَ،‏‏‏‏ عَنْ حَكِيمِ بْنِ حِزَامٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ يَأْتِينِي الرَّجُلُ فَيَسْأَلُنِي الْبَيْعَ لَيْسَ عِنْدِي أَبِيعُهُ مِنْهُ،‏‏‏‏ ثُمَّ أَبْتَاعُهُ لَهُ مِنَ السُّوقِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَبِعْ مَا لَيْسَ عِنْدَكَ .
It was narrated that Hakim bin Hizam said: I asked the Prophet O Messenger of Allah, a man may come to me and ask me to sell him something that I do not have. Can I sell it to him then go and buy it from the market?' He said: 'Do not sell what you do not have.'''
میں نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا: اللہ کے رسول! میرے پاس آدمی آتا ہے اور وہ مجھ سے ایسی چیز خریدنا چاہتا ہے جو میرے پاس نہیں ہوتی۔ کیا میں اس سے اس چیز کو بیچ دوں اور پھر وہ چیز اسے بازار سے خرید کر دے دوں؟ آپ نے فرمایا: ”جو چیز تمہارے پاس نہ ہو اسے مت بیچو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4618

أَخْبَرَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي الْمُجَالِدِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ ابْنَ أَبِي أَوْفَى:‏‏‏‏ عَنِ السَّلَفِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا نُسْلِفُ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَأَبِي بَكْرٍ،‏‏‏‏ وَعُمَرَ فِي الْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرِ إِلَى قَوْمٍ لَا أَدْرِي أَعِنْدَهُمْ أَمْ لَا ،‏‏‏‏ وَابْنُ أَبْزَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مِثْلَ ذَلِكَ.
It was narrated that 'Abdullah Ibn Abi Awfa about paying in advance. He said: 'We used to pay in advance during the time of the Messenger of Allah and Abu Bakr and 'Umar, for wheat, barley and dates, paying people whom we did not know if they had those things or not.'''Ibn Abza said meaning, similarly.
میں نے ابن ابی اوفی سے بیع سلم کے متعلق پوچھا تو انہوں نے کہا: ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ، ابوبکر اور عمر رضی اللہ عنہما کے زمانے میں گی ہوں، جَو اور کھجور میں ایسے لوگوں سے بیع سلم کرتے تھے کہ مجھے نہیں معلوم، آیا ان کے یہاں یہ چیزیں ہوتی بھی تھیں یا نہیں۔ اور ابن ابزیٰ نے ( سوال کرنے پر ) اسی طرح کہا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4619

أَخْبَرَنَا مَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو دَاوُدَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي الْمُجَالِدِ،‏‏‏‏ وَقَالَ مَرَّةً:‏‏‏‏ عَبْدُ اللَّهِ،‏‏‏‏ وَقَالَ مَرَّةً:‏‏‏‏ مُحَمَّدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ تَمَارَى أَبُو بُرْدَةَ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ شَدَّادٍ فِي السَّلَمِ،‏‏‏‏ فَأَرْسَلُونِي إِلَى ابْنِ أَبِي أَوْفَى فَسَأَلْتُهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا نُسْلِمُ عَلَى عَهْدِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَعَلَى عَهْدِ أَبِي بَكْرٍ،‏‏‏‏ وَعَلَى عَهْدِ عُمَرَ فِي الْبُرِّ،‏‏‏‏ وَالشَّعِيرِ،‏‏‏‏ وَالزَّبِيبِ،‏‏‏‏ وَالتَّمْرِ إِلَى قَوْمٍ مَا نُرَى عِنْدَهُمْ ،‏‏‏‏ وَسَأَلْتُ ابْنَ أَبْزَى،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مِثْلَ ذَلِكَ.
Ibn Abi Al-Mujalid-on one occasion he (the narrator) said 'Abdullah, and on another occasion he said Muhammad - said: Abu Burdah and 'Abdullah bin Shaddad argued about payment in advance. They sent me to Ibn Abi Awfa and I asked him (about that). He said: 'We used to pay in advance during the time of the Messenger of Allah and Abu Bakr and 'Umar, for wheat, barley, raisins and dates, paying people whom we did not see it with them. And I asked Ibn Abza and he said something similar to that.
ابوبردہ اور عبداللہ بن شداد میں سلم کے سلسلے میں بحث ہو گئی تو انہوں نے مجھے ابن ابی اوفی رضی اللہ عنہ کے پاس بھیجا، میں نے ان سے پوچھا تو انہوں نے کہا: ہم لوگ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں اور ابوبکر و عمر رضی اللہ عنہما کے زمانے میں گیہوں، جَو، کشمش اور کھجور میں بیع سلم کیا کرتے تھے، ایسے لوگوں سے جن کے پاس ہم یہ چیزیں نہیں پاتے اور ( ابن ابی المجالد کہتے ہیں کہ میں نے ابن ابزیٰ سے پوچھا تو انہوں نے اسی طرح کہا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4620

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي نَجِيحٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ كَثِيرٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْمِنْهَالِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ ابْنَ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَدِمَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمَدِينَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَهُمْ يُسْلِفُونَ فِي التَّمْرِ السَّنَتَيْنِ وَالثَّلَاثَ،‏‏‏‏ فَنَهَاهُمْ وَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ أَسْلَفَ سَلَفًا فَلْيُسْلِفْ فِي كَيْلٍ مَعْلُومٍ،‏‏‏‏ وَوَزْنٍ مَعْلُومٍ إِلَى أَجَلٍ مَعْلُومٍ .
It was narrated that Abu Al-Minhal said: I heard Ibn 'Abbas say: 'When the Prophet came (to al-Madinah), they used to pay in advance for dates, two or three years in advance. He forbade them that and said: 'whoever pays in advance for dates, let him pay for a known amount or a known weight, to be delivered at a known time'''
میں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما کو کہتے سنا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ آئے تو لوگ کھجور میں دو تین سال کے لیے بیع سلم کرتے تھے، آپ نے انہیں روک دیا، اور فرمایا: ”جو بیع سلم کرے تو مقررہ ناپ، مقررہ وزن میں مقررہ مدت تک کے لیے کرے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4621

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ يَسَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي رَافِعٍ:‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اسْتَسْلَفَ مِنْ رَجُلٍ بَكْرًا،‏‏‏‏ فَأَتَاهُ يَتَقَاضَاهُ بَكْرَهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ لِرَجُلٍ:‏‏‏‏ انْطَلِقْ فَابْتَعْ لَهُ بَكْرًا ،‏‏‏‏ فَأَتَاهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا أَصَبْتُ إِلَّا بَكْرًا رَبَاعِيًا خِيَارًا،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَعْطِهِ،‏‏‏‏ فَإِنَّ خَيْرَ الْمُسْلِمِينَ أَحْسَنُهُمْ قَضَاءً .
It was narrated from Abu Rafi that the Messenger of Allah borrowed a young camel from a man, and then he came to get his camel back. He said to a man: Go and buy a young camel for him. He came and said: I could only get a Raba camel of good quality. He said: Give it to him, for the best of the Muslims is the one who is best in repaying.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک شخص سے اونٹ کے بچے میں بیع سلم کی، وہ شخص اپنے نوجوان اونٹ کا تقاضا کرتا ہوا آیا تو آپ نے ایک شخص سے کہا: ”جاؤ، اس کے لیے نوجوان اونٹ خرید دو“، اس نے آپ کے پاس آ کر کہا: مجھے تو سوائے بہترین، «رباعی» ( جو ساتویں برس میں لگ چکا ہو ) نوجوان اونٹ کے کوئی نہیں ملا، آپ نے فرمایا: ”اسے وہی دے دو، اس لیے کہ بہترین مسلمان وہ ہے جو قرض ادا کرنے میں بہتر ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4622

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ سَلَمَةَ بْنِ كُهَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ لِرَجُلٍ عَلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ سِنٌّ مِنَ الْإِبِلِ فَجَاءَ يَتَقَاضَاهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَعْطُوهُ ،‏‏‏‏ فَلَمْ يَجِدُوا إِلَّا سِنًّا فَوْقَ سِنِّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَعْطُوهُ ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَوْفَيْتَنِي،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ خِيَارَكُمْ أَحْسَنُكُمْ قَضَاءً .
It was narrated that Abu Hurairah said: A man had lent a camel of a certain age to the Prophet and he came to get it back. He said: Give it to him But they could only find a camel that was older than it. He said: Give it to him. He said: You have repaid me well, The Messenger of Allah said; The best of you is the one who is best in repaying
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ذمہ ایک شخص کا ایک جوان اونٹ باقی تھا، وہ آپ کے پاس تقاضا کرتا ہوا آیا تو آپ نے ( صحابہ سے ) فرمایا: ”اسے دے دو“، انہیں اس سے زیادہ عمر کے ہی اونٹ ملے تو آپ نے فرمایا: ”اسی کو دے دو“، اس نے کہا: آپ نے پورا پورا ادا کیا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تم میں سب سے بہتر وہ ہے جو قرض کی ادائیگی میں بہتر ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4623

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مَهْدِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُعَاوِيَةُ بْنُ صَالِحٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ سَعِيدَ بْنَ هَانِئٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عِرْبَاضَ بْنَ سَارِيَةَ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ بِعْتُ مِنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَكْرًا فَأَتَيْتُهُ أَتَقَاضَاهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَجَلْ لَا أَقْضِيكَهَا إِلَّا نَجِيبَةً ،‏‏‏‏ فَقَضَانِي فَأَحْسَنَ قَضَائِي،‏‏‏‏ وَجَاءَهُ أَعْرَابِيٌّ يَتَقَاضَاهُ سِنَّهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَعْطُوهُ سِنًّا ،‏‏‏‏ فَأَعْطَوْهُ يَوْمَئِذٍ جَمَلًا،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ هَذَا خَيْرٌ مِنْ سِنِّي ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ خَيْرُكُمْ خَيْرُكُمْ قَضَاءً .
Irbad bin Saryah said: I lent a young camel to the Messenger of Allah, and I came to ask him to repay me. He said: 'Yes, I will only repay you with a superior she-camel.' so he repaid me and repaid me well. Then a Bedouin came to him to ask to repay him a camel of a certain age, and the Messenger of Allah said: 'Give him a camel of certain age.' On that day they gave him a mature camel and he said: 'This is better than my camel.' He (The Prophet) Said:' The best of you is the one who is best in repaying.'''
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ایک جوان اونٹ بیچا تو میں آپ کے پاس اس کا تقاضا کرنے آیا، آپ نے فرمایا: ”میں تو تمہیں بختی ( عمدہ قسم کا اونٹ ) دوں گا“، پھر آپ نے مجھے ادا کیا تو بہت اچھا ادا کیا، اور آپ کے پاس ایک اعرابی ( دیہاتی ) اپنا جوان اونٹ مانگتے ہوئے آیا تو آپ نے فرمایا: ”اسے جوان اونٹ دے دو“، تو اس دن ان لوگوں نے اسے ایک بڑا ( مکمل ) اونٹ دیا، اس نے کہا: یہ تو میرے اونٹ سے بہتر ہے، آپ نے فرمایا: ”تم میں بہتر وہ ہے جو بہتر طرح سے قرض ادا کرے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4624

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ وَيَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ،‏‏‏‏ وَخَالِدُ بْنُ الْحَارِثِ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ وأَخْبَرَنِي أَحْمَدُ بْنُ فَضَالَةَ بْنِ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ بْنُ مُوسَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ صَالِحٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ أَبِي عَرُوبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْ سَمُرَةَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الْحَيَوَانِ بِالْحَيَوَانِ نَسِيئَةً .
It was narrated from Sasmurah that: the Messenger of Allah forbade selling animals in exchange for animal's ion credit.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ذی روح کے بدلے ذی روح کو ادھار بیچنے سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4625

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ عَبْدٌ فَبَايَعَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى الْهِجْرَةِ،‏‏‏‏ وَلَا يَشْعُرُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّهُ عَبْدٌ،‏‏‏‏ فَجَاءَ سَيِّدُهُ يُرِيدُهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ بِعْنِيهِ ،‏‏‏‏ فَاشْتَرَاهُ بِعَبْدَيْنِ أَسْوَدَيْنِ،‏‏‏‏ ثُمَّ لَمْ يُبَايِعْ أَحَدًا بَعْدُ حَتَّى يَسْأَلَهُ أَعَبْدٌ هُوَ.
It was narrated that Jabir Sair: A slave came and gave his pledge to the Messenger of Allah to emigrate, and the Prophet did not realize that he was a slave. Then his master came looking for him. The Prophet said; 'Sell him to me.' So he bought him for two black slaves, then he did not accept until he had asked; 'Is he a slave?'''
ایک غلام آیا تو اس نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے ہجرت پر بیعت کی، آپ کو یہ علم نہیں تھا کہ یہ غلام ہے، اتنے میں اسے ڈھونڈتا ہوا اس کا مالک آ پہنچا تو آپ نے فرمایا: ”اسے میرے ہاتھ بیچ دو“، چنانچہ آپ نے اسے دو کالے غلاموں کے بدلے خرید لیا، پھر آپ نے اس کے بعد کسی سے بیعت نہیں لی جب تک کہ اس سے پوچھ نہ لیتے کہ وہ غلام ہے؟۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4626

أَخْبَرَنَا يَحْيَى بْنُ حَكِيمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ جَعْفَرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ السَّلَفُ فِي حَبَلِ الْحَبَلَةِ رِبًا .
It was narrated from Ibn 'Abbas that the Propher said: Paying in advance for the offspring of the offspring of a pregnant animal (Habal al-Habalah) is Riba''
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”حمل والے جانور کے حمل کی بیع سلم کرنا سود ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4627

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ سَعِيدِ بْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ حَبَلِ الْحَبَلَةِ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Prophet forbade selling the offspring of the offspring of a pregnant animal (Habal Al-Habalah)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے حاملہ کے حمل کو بیچنے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4628

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ حَبَلِ الْحَبَلَةِ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Prophet forbade selling the offspring of the offspring of a pregnant animal (Habal Al-Habalah)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے حاملہ کے حمل کو بیچنے سے منع فرمایا ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4629

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ وَالْحَارِثُ بْنُ مِسْكِينٍ قِرَاءَةً عَلَيْهِ وَأَنَا أَسْمَعُ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ الْقَاسِمِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ حَبَلِ الْحَبَلَةِ،‏‏‏‏ وَكَانَ بَيْعًا يَتَبَايَعُهُ أَهْلُ الْجَاهِلِيَّةِ،‏‏‏‏ كَانَ الرَّجُلُ يَبْتَاعُ جَزُورًا إِلَى أَنْ تُنْتِجَ النَّاقَةُ،‏‏‏‏ ثُمَّ تُنْتِجُ الَّتِي فِي بَطْنِهَا .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Messenger of Allah forbade selling the offspring of the offspring of a pregnant animal (Habal Al-Habalah), which was a transaction practiced by the people of the Jahiliyyah, whereby a man would buy camel to slaughter, but he would wait until the she-camel had produced offspring and the offspring in her belly had then produced offspring.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حاملہ کے حمل کی بیع سے منع فرمایا اور یہ ایسی بیع تھی جو جاہلیت کے لوگ کیا کرتے تھے، ایک شخص اونٹ خریدتا اور پیسے دینے کا وعدہ اس وقت تک کے لیے کرتا جب وہ اونٹنی جنے اور پھر اس کا بچہ جنے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4630

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ السِّنِينَ .
It was narrated that Jabir said: The Messenger of Allah forbade selling the produce several years in advance.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی سال کی بیع کرنے سے منع فرمایا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4631

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ حُمَيْدٍ الْأَعْرَجِ،‏‏‏‏ عَنْ سُلَيْمَانَ وَهُوَ ابْنُ عَتِيقٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ السِّنِينَ .
It was narrated from Jabir that: the Messenger of Allah forbade selling the produce several years in advance.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی سال کی بیع کرنے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4632

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَزِيدُ بْنُ زُرَيْعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُمَارَةُ بْنُ أَبِي حَفْصَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عِكْرِمَةُ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ كَانَ عَلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بُرْدَيْنِ قِطْرِيَّيْنِ،‏‏‏‏ وَكَانَ إِذَا جَلَسَ فَعَرِقَ فِيهِمَا ثَقُلَا عَلَيْهِ،‏‏‏‏ وَقَدِمَ لِفُلَانٍ الْيَهُودِيِّ بَزٌّ مِنْ الشَّأْمِ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ لَوْ أَرْسَلْتَ إِلَيْهِ فَاشْتَرَيْتَ مِنْهُ ثَوْبَيْنِ إِلَى الْمَيْسَرَةِ،‏‏‏‏ فَأَرْسَلَ إِلَيْهِ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ قَدْ عَلِمْتُ مَا يُرِيدُ مُحَمَّدٌ،‏‏‏‏ إِنَّمَا يُرِيدُ أَنْ يَذْهَبَ بِمَالِي أَوْ يَذْهَبَ بِهِمَا،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كَذَبَ قَدْ عَلِمَ أَنِّي مِنْ أَتْقَاهُمْ لِلَّهِ وَآدَاهُمْ لِلْأَمَانَةِ .
It was narrated that 'Aishah said: The Messenger of Allah was wearing two Qitri garments which, if he sat and sweated, would become heavy (and uncomfortable). A Jewish man got some fabric from Ash-sham so I said: 'Why don't you send word to him to buy two garments from him, and pay him when things get easier?' So he sent word to him, but he said: 'I know what Muhammad wants; he wants to go away with my money and take them (the two garments).' The Messenger of Allah said; 'He is lying; he knows that I am one of the ones who fear Allah the most, and are most honest in fulfilling trusts.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس دو قطری چادریں تھیں، جب آپ بیٹھتے اور ان میں پسینہ آتا تو وہ بھاری ہو جاتیں، ایک یہودی کا شام سے کپڑا آیا تو میں نے عرض کیا: اگر آپ اس کے پاس کسی کو بھیج کر تاوقت سہولت ( قیمت ادا کرنے کے وعدہ پر ) دو کپڑے خرید لیتے تو بہتر ہوتا، چنانچہ آپ نے اس کے پاس ایک شخص کو بھیجا، اس ( یہودی ) نے کہا: مجھے معلوم ہے محمد کیا چاہتے ہیں، وہ تو میرا مال ہضم کرنا چاہتے ہیں، یا یہ دونوں چادروں کو ہضم کرنا چاہتے ہیں، اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اس نے جھوٹ کہا، اسے معلوم ہے کہ میں سب سے زیادہ اللہ سے ڈرنے والا ہوں اور سب سے زیادہ امانت کا ادا کرنے والا ہوں“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4633

أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ عَنْ خَالِدٍ،‏‏‏‏ عَنْ حُسَيْنٍ الْمُعَلِّمِ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ سَلَفٍ وَبَيْعٍ،‏‏‏‏ وَشَرْطَيْنِ فِي بَيْعٍ وَرِبْحِ،‏‏‏‏ مَا لَمْ يُضْمَنْ .
It was narrated from 'Amr bin shu'aib, from his father, from his grandfather, that: the Messenger of Allah prohibited lending on the condition of a sale, or to have two conditions in one transaction, or to profit from what you do not posses.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سلف اور بیع ایک ساتھ کرنے، ایک بیع میں دو شرطیں لگانے، اور اس چیز کے نفع لینے سے منع فرمایا جس کے تاوان کا وہ ذمے دار ( ضامن ) نہ ہو ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4634

أَخْبَرَنَا زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ حَتَّى ذَكَرَ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عَمْرٍو،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لَا يَحِلُّ سَلَفٌ وَبَيْعٌ،‏‏‏‏ وَلَا شَرْطَانِ فِي بَيْعٍ،‏‏‏‏ وَلَا رِبْحُ،‏‏‏‏ مَا لَمْ يُضْمَنْ .
Amr bin shu'aib said: My father told me, mar rating from his father, from his father (and he mentioned 'Abdullah bin 'Amr) that he said: The Messenger of Allah said: It is not permissible to lend on the condition of a sale, or to stipulate two conditions in one transaction, or to make a profit on that which you do not possess.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سلف ( قرض ) اور بیع ایک ساتھ جائز نہیں، اور نہ ایک بیع میں دو شرطیں، اور نہ ہی ایسی چیز کا نفع جس کے تاوان کی ذمے داری نہ ہو“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4635

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ رَافِعٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَعْمَرٌ،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ سَلَفٍ وَبَيْعٍ،‏‏‏‏ وَعَنْ شَرْطَيْنِ فِي بَيْعٍ وَاحِدٍ،‏‏‏‏ وَعَنْ بَيْعِ مَا لَيْسَ عِنْدَكَ،‏‏‏‏ وَعَنْ رِبْحِ مَا لَمْ يُضْمَنْ .
It was narrated from 'Amr bin Shu'aib, from his father, that his grandfather said: The Messenger of Allah forbade lending on the condition of a sale, selling what you do not have, and profiting on what you do not possess.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سلف ( قرض ) اور بیع ایک ساتھ کرنے سے، ایک ہی بیع میں دو شرطیں لگانے سے، اور اس چیز کے بیچنے سے جو تمہارے پاس موجود نہ ہو اور ایسی چیز کے نفع سے جس کے تاوان کی ذمہ داری نہ ہو، ( ان سب سے ) منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4636

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ وَيَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ وَمُحَمَّدُ بْنُ الْمُثَنَّى،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَمْرٍو،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعَتَيْنِ فِي بَيْعَةٍ .
It was narrated that Abu Hurairah said: The Messenger of Allah forbade two transactions in one.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک بیع میں دو بیع کرنے سے منع فرمایا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4637

أَخْبَرَنَا زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبَّادُ بْنُ الْعَوَّامِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ حُسَيْنٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يُونُسُ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنِ الْمُحَاقَلَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُخَابَرَةِ،‏‏‏‏ وَعَنِ الثُّنْيَا إِلَّا أَنْ تُعْلَمَ .
It was narrated from Jabir that: the Prophet forbade Muhaqalah, Muzahanah, Mukhabarah and selling with an exception unless it is defined.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع محاقلہ، مزابنہ، مخابرہ سے اور بیع میں استثناء کرنے سے سوائے اس کے کہ مقدار معلوم ہو منع فرمایا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4638

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ وأَخْبَرَنَا زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا ابْنُ عُلَيَّةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا أَيُّوبُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ الْمُحَاقَلَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُزَابَنَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُخَابَرَةِ،‏‏‏‏ وَالْمُعَاوَمَةِ،‏‏‏‏ وَالثُّنْيَا،‏‏‏‏ وَرَخَّصَ فِي الْعَرَايَا .
It was narrated that Jabir said: The Messenger of Allah forbade Muhaqalah, Muzahanah, Mukhabarah, Mu'awamah, and selling with an exception unless it is defined but he gave concession allowing 'Araya.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے بیع محاقلہ، مزابنہ، مخابرہ، معاومہ ( کئی سالوں کی بیع ) اور بیع میں الگ کرنے سے منع فرمایا اور بیع عرایا ( عاریت والی بیع ) میں رخصت دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4639

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ أَيُّمَا امْرِئٍ أَبَّرَ نَخْلًا،‏‏‏‏ ثُمَّ بَاعَ أَصْلَهَا،‏‏‏‏ فَلِلَّذِي أَبَّرَ ثَمَرُ النَّخْلِ،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَشْتَرِطَ الْمُبْتَاعُ .
It was narrated from Ibn 'Umar that the Prophet said: Any man who pollinates a date-palm tree then sells it, the fruits of the tree are for the one who pollinated it, unless the purchaser stipulated otherwise.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جو بھی کوئی کھجور کے درخت کی پیوند کاری کرے پھر اس درخت کو بیچے تو درخت کا پھل پیوند کاری کرنے والے کا ہو گا، سوائے اس کے کہ خریدنے والا پھل کی شرط لگا لے“ ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4640

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّهْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ مَنِ ابْتَاعَ نَخْلًا بَعْدَ أَنْ تُؤَبَّرَ فَثَمَرَتُهَا لِلْبَائِعِ،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَشْتَرِطَ الْمُبْتَاعُ،‏‏‏‏ وَمَنْ بَاعَ عَبْدًا وَلَهُ مَالٌ فَمَالُهُ لِلْبَائِعِ،‏‏‏‏ إِلَّا أَنْ يَشْتَرِطَ الْمُبْتَاعُ .
It was narrated from Salim, from his father that the Prophet said: Whoever buys a date-palm tree after it has been pollinated, its fruits belong to the seller, unless the purchaser has stipulated otherwise. And whoever buys a slave who has wealth, his wealth belongs to the seller, unless the purchaser has stipulated otherwise. (sahih)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جو کوئی تابیر ( پیوند کاری ) ہو جانے کے بعد ( کھجور کا ) درخت خریدے تو اس کا پھل بائع کا ہو گا سوائے اس کے کہ خریدار شرط لگا دے، اور جو غلام بیچے اور اس کے پاس مال ہو تو اس کا مال بائع کا ہو گا سوائے اس کے کہ خریدار شرط لگا دے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4641

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا سَعْدَانُ بْنُ يَحْيَى،‏‏‏‏ عَنْ زَكَرِيَّا،‏‏‏‏ عَنْ عَامِرٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنْتُ مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي سَفَرٍ فَأَعْيَا جَمَلِي فَأَرَدْتُ أَنْ أُسَيِّبَهُ،‏‏‏‏ فَلَحِقَنِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَدَعَا لَهُ،‏‏‏‏ فَضَرَبَهُ فَسَارَ سَيْرًا لَمْ يَسِرْ مِثْلَهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ بِعْنِيهِ بِوُقِيَّةٍ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ لَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ بِعْنِيهِ ،‏‏‏‏ فَبِعْتُهُ بِوُقِيَّةٍ،‏‏‏‏ وَاسْتَثْنَيْتُ حُمْلَانَهُ إِلَى الْمَدِينَةِ،‏‏‏‏ فَلَمَّا بَلَغْنَا الْمَدِينَةَ أَتَيْتُهُ بِالْجَمَلِ وَابْتَغَيْتُ ثَمَنَهُ،‏‏‏‏ ثُمَّ رَجَعْتُ فَأَرْسَلَ إِلَيَّ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَتُرَانِي إِنَّمَا مَاكَسْتُكَ لِآخُذَ جَمَلَكَ خُذْ جَمَلَكَ وَدَرَاهِمَكَ .
It was narrated that Jabir bin 'Abdullah said: I was with the Prophet on a journey, and my camel got tired. I thought I wanted to let it go, but the Messenger of Allah met me and prayed for it (the camel) and hit it. Then it started to run like never before. He said: 'Sell it to me for one Uwqyah.' I said 'No.' He said: 'Sell it to me.' So I sold it to him for one Uwqiyah but stipulated an exception, to ride it until we reached al-Madinah. When we reached Al-Medina, I brought the camel to him and asked him for its price, then I went back. He sent word to me saying; 'Do you think I bargained with you to take your camel?' Take your camel and your Dirhams.
میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ایک سفر میں تھا، میرا اونٹ تھک کر چلنے سے عاجز آ گیا، تو میں نے چاہا کہ اسے چھوڑ دوں، اتنے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم مجھ سے آ ملے، آپ نے اس کے لیے دعا کی اور اسے تھپتھپایا، اب وہ ایسا چلا کہ اس طرح کبھی نہ چلا تھا، آپ نے فرمایا: ”اسے ایک اوقیہ ( ۴۰ درہم ) میں مجھ سے بیچ دو“، میں نے کہا: نہیں ( بلکہ وہ آپ ہی کا ہے ) ، آپ نے فرمایا: ”اسے مجھ سے بیچ دو“ تو میں نے ایک اوقیہ میں اسے آپ کے ہاتھ بیچ دیا اور مدینے تک اس پر سوار ہو کر جانے کی شرط لگائی ۱؎، جب ہم مدینہ پہنچے تو میں اونٹ لے کر آپ کے پاس آیا اور اس کی قیمت چاہی، پھر میں لوٹا تو آپ نے مجھے بلا بھیجا، اور فرمایا: ”کیا تم سمجھتے ہو کہ میں نے کم قیمت لگائی تاکہ میں تمہارا اونٹ لے سکوں، لو اپنا اونٹ بھی لے لو اور اپنے درہم بھی“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4642

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عِيسَى بْنِ الطَّبَّاعِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ،‏‏‏‏ عَنْ مُغِيرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الشَّعْبِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ غَزَوْتُ مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى نَاضِحٍ لَنَا،‏‏‏‏ ثُمَّ ذَكَرْتُ الْحَدِيثَ بِطُولِهِ،‏‏‏‏ ثُمَّ ذَكَرَ كَلَامًا مَعْنَاهُ،‏‏‏‏ فَأُزْحِفَ الْجَمَلُ فَزَجَرَهُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَانْتَشَطَ حَتَّى كَانَ أَمَامَ الْجَيْشِ،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يَا جَابِرُ،‏‏‏‏ مَا أَرَى جَمَلَكَ إِلَّا قَدِ انْتَشَطَ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ بِبَرَكَتِكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بِعْنِيهِ،‏‏‏‏ وَلَكَ ظَهْرُهُ حَتَّى تَقْدَمَ ،‏‏‏‏ فَبِعْتُهُ وَكَانَتْ لِي إِلَيْهِ حَاجَةٌ شَدِيدَةٌ وَلَكِنِّي اسْتَحْيَيْتُ مِنْهُ،‏‏‏‏ فَلَمَّا قَضَيْنَا غَزَاتَنَا وَدَنَوْنَا اسْتَأْذَنْتُهُ بِالتَّعْجِيلِ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنِّي حَدِيثُ عَهْدٍ بِعُرْسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَبِكْرًا تَزَوَّجْتَ أَمْ ثَيِّبًا ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ بَلْ ثَيِّبًا،‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عَمْرٍو أُصِيبَ وَتَرَكَ جَوَارِيَ أَبْكَارًا،‏‏‏‏ فَكَرِهْتُ أَنْ آتِيَهُنَّ بِمِثْلِهِنَّ،‏‏‏‏ فَتَزَوَّجْتُ ثَيِّبًا،‏‏‏‏ تُعَلِّمُهُنَّ وَتُؤَدِّبُهُنَّ فَأَذِنَ لِي،‏‏‏‏ وَقَالَ لِي:‏‏‏‏ ائْتِ أَهْلَكَ عِشَاءً ،‏‏‏‏ فَلَمَّا قَدِمْتُ أَخْبَرْتُ خَالِي بِبَيْعِي الْجَمَلَ فَلَامَنِي،‏‏‏‏ فَلَمَّا قَدِمَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ غَدَوْتُ بِالْجَمَلِ،‏‏‏‏ فَأَعْطَانِي ثَمَنَ الْجَمَلِ وَالْجَمَلَ وَسَهْمًا مَعَ النَّاسِ.
It was narrated that Jabir said: I went on a campaign with the Messenger of Allah riding a camel of ours, then he quoted the whole Hadih. Then he said words to the effect that: The camel got tried and the Prophet hit it, so it became energetic and came to the front of the army. The Prophet said: 'O Jabir, I see that your camel has become energetic.' I said: It is because of your blessing, O Messenger of Allah,' He said: 'Sell it to me, and you can ride it till we arrive (in Al-Madinah). 'So I sold it to him. I was in great need of it myself but I felt too shy to refuse. When we finished our campaign, and we were close to Al-Madinah, I asked his permission to go on ahead. I said: 'O Messenger of Allah, I am newly married.' He said; 'Have you married a virgin or a previously married woman?' I said: 'A previously married woman, O Messenger of Allah. 'Abdullah bin 'Arm died and left behind young druthers, and I did not like to bring to them someone who was like them, so I married a previously married woman who could teach the, and rise them with good manners.' So he gave me permission, and said to me; 'Go to When I arrived, I told my maternal uncle that I had sold the camel and he scolded me. When the Messenger of Allah came, I brought the camel to him, and he gave me the price of the camel, and the camel, and share (of the spoils of war) with the rest of the people.
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ اپنے سینچائی کرنے والے اونٹ پر بیٹھ کر جہاد کیا، پھر انہوں نے لمبی حدیث بیان کی، پھر ایک چیز کا تذکرہ کیا جس کا مطلب یہ ہے کہ اونٹ تھک گیا تو اسے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ڈانٹا تو وہ تیز ہو گیا یہاں تک کہ سارے لشکر سے آگے نکل گیا، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جابر! تمہارا اونٹ تو لگ رہا ہے کہ بہت تیز ہو گیا ہے“، میں نے عرض کیا: آپ کے ذریعہ سے ہونے والی برکت سے اللہ کے رسول! آپ نے فرمایا: ”اسے، میرے ہاتھ بیچ دو۔ البتہ تم ( مدینہ ) پہنچنے تک اس پر سوار ہو سکتے ہو“، چنانچہ میں نے اسے بیچ دیا حالانکہ مجھے اس کی سخت ضرورت تھی۔ لیکن مجھے آپ سے شرم آئی۔ جب ہم غزوہ سے فارغ ہوئے اور ( مدینے کے ) قریب ہوئے تو میں نے آپ سے جلدی سے آگے جانے کی اجازت مانگی، میں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! میں نے ابھی جلد شادی کی ہے، آپ نے فرمایا: ”کنواری سے شادی کی ہے یا بیوہ سے؟“ میں نے عرض کیا: بیوہ سے، اللہ کے رسول! والد صاحب عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما مارے گئے اور انہوں نے کنواری لڑکیاں چھوڑی ہیں، تو مجھے برا معلوم ہوا کہ میں ان کے پاس ان جیسی ( کنواری لڑکی ) لے کر آؤں، لہٰذا میں نے بیوہ سے شادی کی ہے جو انہیں تعلیم و تربیت دے گی، تو آپ نے مجھے اجازت دے دی اور مجھ سے فرمایا: ”اپنی بیوی کے پاس شام کو جانا“، جب میں مدینے پہنچا تو میں نے اپنے ماموں کو اونٹ بیچنے کی اطلاع دی، تو انہوں نے مجھے ملامت کی، جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پہنچے تو میں صبح کو اونٹ لے کر آپ کے پاس گیا، تو آپ نے مجھے اونٹ کی قیمت ادا کی اور اونٹ بھی دے دیا اور ( مال غنیمت میں سے ) ایک حصہ سب لوگوں کے برابر دیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4643

حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الْعَلَاءِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ سَالِمِ بْنِ أَبِي الْجَعْدِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنْتُ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي سَفَرٍ،‏‏‏‏ وَكُنْتُ عَلَى جَمَلٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا لَكَ فِي آخِرِ النَّاسِ ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ أَعْيَا بَعِيرِي فَأَخَذَ بِذَنَبِهِ ثُمَّ زَجَرَهُ،‏‏‏‏ فَإِنْ كُنْتُ إِنَّمَا أَنَا فِي أَوَّلِ النَّاسِ يُهِمُّنِي رَأْسُهُ فَلَمَّا دَنَوْنَا مِنْ الْمَدِينَةِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَا فَعَلَ الْجَمَلُ بِعْنِيهِ ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ بَلْ هُوَ لَكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ بَلْ بِعْنِيهِ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ بَلْ هُوَ لَكَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ بَلْ بِعْنِيهِ،‏‏‏‏ قَدْ أَخَذْتُهُ بِوُقِيَّةٍ ارْكَبْهُ،‏‏‏‏ فَإِذَا قَدِمْتَ الْمَدِينَةَ فَأْتِنَا بِهِ ،‏‏‏‏ فَلَمَّا قَدِمْتُ الْمَدِينَةَ جِئْتُهُ بِهِ،‏‏‏‏ فَقَالَ لِبِلَالٍ:‏‏‏‏ يَا بِلَالُ،‏‏‏‏ زِنْ لَهُ أُوقِيَّةً،‏‏‏‏ وَزِدْهُ قِيرَاطًا ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ هَذَا شَيْءٌ زَادَنِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَلَمْ يُفَارِقْنِي،‏‏‏‏ فَجَعَلْتُهُ فِي كِيسٍ فَلَمْ يَزَلْ عِنْدِي حَتَّى جَاءَ أَهْلُ الشَّامِ يَوْمَ الْحَرَّةِ،‏‏‏‏ فَأَخَذُوا مِنَّا مَا أَخَذُوا .
It was narrated that Jabir 'Abdullah said: I was with the Messenger of Allah on a journey, and I was riding a camel. He said: 'Why are you at the back of the people?, I said: 'My camel is tired, He took hold of its tail and shouted at it, then I was at the front of the people, worrying that it would go ahead of the others. When we drew close to al-Madinah he said: 'What happened to the camel? Sell it to me.' I said, No, it is yours O Messenger of Allah.; He said, 'No, sell it tome. I said, 'No, it is yours, O Messenger of Allah.' He said: 'No, sell it to me. I will take it for one Uwqiyah but you (continue to) ride it. Then when you reach Al-Madinah, bring it to us.' So when I reached Al-Madinah, I brought it him. He said to Bilal: 'O Bilal, weight out for him one Uwqiyyah and add a Qirat.' I said: 'This is something extra that the Messenger of Allah gave to.' I kept it with me and put it in a bag, and it stayed with me until the people of Ash-Sham came on the Day of Al-Harrah and took from us what they took.'
میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ایک سفر میں تھا، میں ایک اونٹ پر سوار تھا۔ آپ نے فرمایا: ”کیا وجہ ہے کہ تم سب سے پیچھے میں ہو؟“ میں نے عرض کیا: میرا اونٹ تھک گیا ہے، آپ نے اس کی دم کو پکڑا اور اسے ڈانٹا، اب حال یہ تھا کہ میں سب سے آگے تھا، ( ایسا نہ ہو کہ لوگوں کے اونٹ سے آگے بڑھ جائے اس لیے ) مجھے اس کے سر سے ڈر ہو رہا تھا، تو جب ہم مدینے سے قریب ہوئے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”اونٹ کا کیا ہوا؟ اسے میرے ہاتھ بیچ دو“، میں نے عرض کیا: نہیں، بلکہ وہ آپ ہی کا ہے، اللہ کے رسول! آپ نے فرمایا: ”نہیں، اسے میرے ہاتھ بیچ دو“، میں نے عرض کیا: نہیں، بلکہ وہ آپ ہی کا ہے، آپ نے کہا: ”نہیں، بلکہ اسے میرے ہاتھ بیچ دو، میں نے اسے ایک اوقیہ میں لے لیا، تم اس پر سوار ہو اور جب مدینہ پہنچ جاؤ تو اسے ہمارے پاس لے آنا“، جب میں مدینے پہنچا تو اسے لے کر آپ کے پاس آیا، آپ نے بلال رضی اللہ عنہ سے فرمایا: ”بلال! انہیں ایک اوقیہ ( چاندی ) دے دو اور ایک قیراط مزید دے دو“، میں نے عرض کیا: یہ تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے زیادہ دیا ہے، ( یہ سوچ کر کہ ) وہ مجھ سے کبھی جدا نہ ہو، تو میں نے اسے ایک تھیلی میں رکھا، پھر وہ قیراط میرے پاس برابر رہا یہاں تک کہ حرہ کے دن ۱؎ اہل شام آئے اور ہم سے لوٹ لے گئے جو لے گئے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4644

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَدْرَكَنِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَكُنْتُ عَلَى نَاضِحٍ لَنَا سَوْءٍ،‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ لَا يَزَالُ لَنَا نَاضِحُ سَوْءٍ يَا لَهْفَاهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ تَبِيعُنِيهِ،‏‏‏‏ يَا جَابِرُ ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ بَلْ هُوَ لَكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ اغْفِرْ لَهُ،‏‏‏‏ اللَّهُمَّ ارْحَمْهُ،‏‏‏‏ قَدْ أَخَذْتُهُ بِكَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ وَقَدْ أَعَرْتُكَ ظَهْرَهُ إِلَى الْمَدِينَةِ ،‏‏‏‏ فَلَمَّا قَدِمْتُ الْمَدِينَةَ هَيَّأْتُهُ،‏‏‏‏ فَذَهَبْتُ بِهِ إِلَيْهِ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا بِلَالُ أَعْطِهِ ثَمَنَهُ ،‏‏‏‏ فَلَمَّا أَدْبَرْتُ دَعَانِي فَخِفْتُ أَنْ يَرُدَّهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ هُوَ لَكَ .
It was narrated tat Jabir Said: The Messenger of Allah caught up with me when I was riding a bad camel of ours, and I said: 'We have a bad camel, mare's the pit! The Prophet said: Will you sell it to me, O Jabir?' I Said, 'No, It is yours, O Messenger of Allah.; He said: 'O Allah forgive him; O Allah, have mercy on him. I will buy it for such and such, and I will lend it to you to ride until (we reach) al-Madinah.' When Reached al-Madinah, I prepared it, and brought it to him, and he said: O Bilal, give him its price,' When I turned to leave, he called me back, and I was afraid that he would give it back at he said: 'It is yours.
مجھے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پایا کہ میں اپنے سینچنے والے اونٹ پر سوار تھا، میں نے عرض کیا: افسوس! ہمارے پاس ہمیشہ پانی سینچنے والا اونٹ ہی رہتا ہے، تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جابر! کیا تم اسے میرے ہاتھ بیچو گے؟“ میں نے عرض کیا: یہ تو آپ ہی کا ہے، اللہ کے رسول! آپ نے فرمایا: ”اے اللہ! اس کی مغفرت کر، اس پر رحم فرما، میں نے تو اسے اتنے اتنے دام پر لے لیا ہے، اور مدینے تک اس پر سوار ہو کر جانے کی تمہیں اجازت دی ہے“، جب میں مدینے آیا تو اسے تیار کر کے آپ کی خدمت میں حاضر ہوا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بلال! انہیں اس کی قیمت دے دو“، جب میں لوٹنے لگا تو آپ نے مجھے بلایا، مجھے اندیشہ ہوا کہ آپ اسے لوٹائیں گے، آپ نے فرمایا: ”یہ تمہارا ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4645

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبِي،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو نَضْرَةَ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا نَسِيرُ مَعَ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَنَا عَلَى نَاضِحٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ أَتَبِيعُنِيهِ بِكَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ وَاللَّهُ يَغْفِرُ لَكَ ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ هُوَ لَكَ يَا نَبِيَّ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَتَبِيعُنِيهِ بِكَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ وَاللَّهُ يَغْفِرُ لَكَ ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ هُوَ لَكَ يَا نَبِيَّ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَتَبِيعُنِيهِ بِكَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ وَاللَّهُ يَغْفِرُ لَكَ ؟ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ نَعَمْ،‏‏‏‏ هُوَ لَكَ،‏‏‏‏ قَالَ أَبُو نَضْرَةَ:‏‏‏‏ وَكَانَتْ كَلِمَةً يَقُولُهَا الْمُسْلِمُونَ:‏‏‏‏ افْعَلْ كَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ وَاللَّهُ يَغْفِرُ لَكَ .
It was narrated that Jabir bin 'Abdullah said: We were traveling with the Messenger of Allah and I was riding a camel. The Messenger of Allah said to me: 'Will you sell it to me for such and such, may Allah forgive you?', I said, I said, 'Yes, it is yours, O Prophet of Allah.' He said: 'Will you sell it to me for such and such, may Allah forgive your?' I said: 'Yes, it is yours, O Prophet of Allah.' He said: 'Will you sell it to me for such and such, may Allah forgives you?' I said: 'Yes, it is yours. '''(One of the narrators) Abu Nadrah said: This became a phrase that was used by the Muslims: 'Do such and such, may Allah forgive you.
ہم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ جا رہے تھے، میں سینچائی کرنے والے ایک اونٹ پر سوار تھا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”کیا تم اسے میرے ہاتھ اتنے اتنے میں بیچو گے؟ اللہ تمہیں معاف کرے“، میں نے عرض کیا: ہاں، اللہ کے نبی! وہ آپ کا ہی ہے، آپ نے فرمایا: ”کیا تم اسے میرے ہاتھ اتنے اور اتنے میں بیچو گے؟ اللہ تمہیں معاف کرے“، میں نے عرض کیا: ہاں، اللہ کے نبی! وہ آپ ہی کا ہے، آپ نے فرمایا: ”کیا تم اسے میرے ہاتھ اتنے اور اتنے میں بیچو گے؟ اللہ تمہیں معاف کرے“، میں نے عرض کیا: ہاں، وہ آپ ہی کا ہے۔ ابونضرہ کہتے ہیں: یہ مسلمانوں کا تکیہ کلام تھا کہ جب کسی سے کہتے: ایسا ایسا کرو تو کہتے: «واللہ یغفر لک» ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4646

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا جَرِيرٌ،‏‏‏‏ عَنْ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَسْوَدِ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ اشْتَرَيْتُ بَرِيرَةَ فَاشْتَرَطَ أَهْلُهَا وَلَاءَهَا،‏‏‏‏ فَذَكَرْتُ ذَلِكَ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَعْتِقِيهَا،‏‏‏‏ فَإِنَّ الْوَلَاءَ لِمَنْ أَعْطَى الْوَرِقَ ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ فَأَعْتَقْتُهَا،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ فَدَعَاهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَخَيَّرَهَا مِنْ زَوْجِهَا،‏‏‏‏ فَاخْتَارَتْ نَفْسَهَا،‏‏‏‏ وَكَانَ زَوْجُهَا حُرًّا.
It was narrated that 'Aishah said: I bought Barirah and her masters stipulated that her loyalty (Wala) should be to them, I mentioned that to the Prophet and he said: 'Set her free, and loyalty belongs to the one who pays the silver.''' She said: so I set her free. The Messenger of Allah called her and gave her the choice regarding her husband, and she chose herself. Her husband was a free man.
میں نے بریرہ رضی اللہ عنہا کو خریدا تو ان کے گھر والوں نے ولاء ( وراثت ) کی شرط لگائی، میں نے اس کا ذکر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا، تو آپ نے فرمایا: ”اسے آزاد کر دو، کیونکہ ولاء ( وراثت ) اس کا حق ہے جس نے درہم ( روپیہ ) دیا ہے“، چنانچہ میں نے انہیں آزاد کر دیا، پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے انہیں بلایا اور انہیں ان کے شوہر کے بارے میں اختیار دیا ۱؎ تو بریرہ رضی اللہ عنہا نے اپنے شوہر کی زوجیت میں نہ رہنے کو ترجیح دی، حالانکہ ان کے شوہر آزاد تھے ۲؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4647

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا شُعْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عَبْدَ الرَّحْمَنِ بْنَ الْقَاسِمِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ الْقَاسِمَ يُحَدِّثُ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ أَنَّهَا أَرَادَتْ أَنْ تَشْتَرِيَ بَرِيرَةَ لِلْعِتْقِ وَأَنَّهُمُ اشْتَرَطُوا وَلَاءَهَا،‏‏‏‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ اشْتَرِيهَا فَأَعْتِقِيهَا،‏‏‏‏ فَإِنَّ الْوَلَاءَ لِمَنْ أَعْتَقَ ،‏‏‏‏ وَأُتِيَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِلَحْمٍ،‏‏‏‏ فَقِيلَ:‏‏‏‏ هَذَا تُصُدِّقَ بِهِ عَلَى بَرِيرَةَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ هُوَ لَهَا صَدَقَةٌ،‏‏‏‏ وَلَنَا هَدِيَّةٌ ،‏‏‏‏ وَخُيِّرَتْ.
It was narrated from Aishah that: she wanted to buy Barirah to set her free, but they stipulated that her loyalty (should be to them. She mentioned that to the Messenger of Allah and the Messenger of Allah said: Buy her, and wet her free and loyalty (Wala) belongs to the one who sets the slave free. Some meat was brought to the Messenger of and it was said that this had been given in charity to Bariirah. He said: It is charity for her, and a gift for us. And she was given the choice
انہوں نے غلامی سے آزاد کرنے کے لیے بریرہ رضی اللہ عنہا کو خریدنا چاہا، لوگوں نے ان کے ولاء ( وراثت ) کی شرط لگائی، انہوں نے اس کا ذکر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”انہیں خرید کر آزاد کر دو، کیونکہ ولاء ( وراثت ) کا حق اسی کا ہے جو آزاد کرے“، اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس گوشت لایا گیا تو کہا گیا: یہ تو بریرہ پر کیا گیا صدقہ ہے؟ آپ نے فرمایا: ”یہ ان کے لیے صدقہ ہے اور ہمارے لیے تحفہ ( ہدیہ ) ہے“، اور انہیں ( بریرہ کو ) اختیار دیا گیا ( شوہر کے ساتھ رہنے اور نہ رہنے کا ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4648

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ نَافِعٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ عَائِشَةَ أَرَادَتْ أَنْ تَشْتَرِيَ جَارِيَةً تَعْتِقُهَا،‏‏‏‏ فَقَالَ أَهْلُهَا:‏‏‏‏ نَبِيعُكِهَا عَلَى أَنَّ الْوَلَاءَ لَنَا،‏‏‏‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكِ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا يَمْنَعُكِ ذَلِكِ،‏‏‏‏ فَإِنَّ الْوَلَاءَ لِمَنْ أَعْتَقَ .
It was narrated from'Abdullah bin 'Umar that 'Aishah wanted to but a slave woman to set her free, but her people said: We will sell her to you on condition that her loyalty (Walla) is to us, She mentioned that top the Messenger of Allah and he said: That should not stop you. Loyalty belongs to the one who sets the slave free.
ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا نے لونڈی خریدنا چاہی تاکہ اسے آزاد کریں، تو اس کے گھر والوں ( مالکان ) نے کہا: ہم اسے آپ سے اس شرط پر بیچیں گے کہ ولاء ( حق وراثت ) ہمارا ہو گا، عائشہ رضی اللہ عنہا نے اس کا ذکر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا تو آپ نے فرمایا: ”تم اس وجہ سے مت رک جانا، کیونکہ ولاء ( وراثت ) تو اس کے لیے ہے جو آزاد کرے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4649

أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَفْصِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي إِبْرَاهِيمُ،‏‏‏‏ عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي نَجِيحٍ،‏‏‏‏ عَنْ مُجَاهِدٍ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الْمَغَانِمِ حَتَّى تُقْسَمَ،‏‏‏‏ وَعَنِ الْحَبَالَى أَنْ يُوطَأْنَ حَتَّى يَضَعْنَ مَا فِي بُطُونِهِنَّ،‏‏‏‏ وَعَنْ لَحْمِ كُلِّ ذِي نَابٍ مِنَ السِّبَاعِ .
It was narrated that Ibn 'Abbas said: The Messenger of Allah forbade selling something from the spoils of war prior to its distribution, having intercourse with a pregnant woman until she gives birth, and (eating) the flesh of any predator that has fangs.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تقسیم ہونے سے پہلے مال غنیمت بیچنے، حاملہ عورتوں ۱؎ کے ساتھ بچہ کی پیدائش سے پہلے جماع کرنے اور ہر دانت والے درندے کے گوشت ( کھانے ) سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4650

أَخْبَرَنَا عَمْرُو بْنُ زُرَارَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ الشُّفْعَةُ فِي كُلِّ شِرْكٍ رَبْعَةٍ،‏‏‏‏ أَوْ حَائِطٍ لَا يَصْلُحُ لَهُ أَنْ يَبِيعَ حَتَّى يُؤْذِنَ شَرِيكَهُ،‏‏‏‏ فَإِنْ بَاعَ فَهُوَ أَحَقُّ بِهِ حَتَّى يُؤْذِنَهُ .
it was narrated that Jabir said: The Messenger of Allah said: 'Pre-emption is to be given in everything that is shared, whether it is a house or a garden. It is not right to sell it before informing one's partner, and if he sells it he (the partner) has more right to it, unless he gives Permission to sell it to someone else.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”شفعہ کا حق ہر چیز میں ہے، زمین ہو یا کوئی احاطہٰ ( باغ وغیرہ ) ، کسی حصہ دار کے لیے جائز نہیں کہ اپنے دوسرے حصہ دار کی اجازت کے بغیر اپنا حصہ بیچے، اگر اس نے بیچ دیا تو وہ ( دوسرا حصہ دار ) اس کا زیادہ حقدار ہو گا یہاں تک کہ وہ خود اس کی اجازت دیدے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4651

أَخْبَرَنَا الْهَيْثَمُ بْنُ مَرْوَانَ بْنِ الْهَيْثَمِ بْنِ عِمْرَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَكَّارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى وَهُوَ ابْنُ حَمْزَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الزُّبَيْدِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّ الزُّهْرِيَّ أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ عَنْ عُمَارَةَ بْنِ خُزَيْمَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَمَّهُ حَدَّثَهُ وَهُوَ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ابْتَاعَ فَرَسًا مِنْ أَعْرَابِيٍّ وَاسْتَتْبَعَهُ لِيَقْبِضَ ثَمَنَ فَرَسِهِ،‏‏‏‏ فَأَسْرَعَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ وَأَبْطَأَ الْأَعْرَابِيُّ وَطَفِقَ الرِّجَالُ يَتَعَرَّضُونَ لِلْأَعْرَابِيِّ،‏‏‏‏ فَيَسُومُونَهُ بِالْفَرَسِ وَهُمْ لَا يَشْعُرُونَ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ ابْتَاعَهُ،‏‏‏‏ حَتَّى زَادَ بَعْضُهُمْ فِي السَّوْمِ عَلَى مَا ابْتَاعَهُ بِهِ مِنْهُ،‏‏‏‏ فَنَادَى الْأَعْرَابِيُّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنْ كُنْتَ مُبْتَاعًا هَذَا الْفَرَسَ وَإِلَّا بِعْتُهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَامَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حِينَ سَمِعَ نِدَاءَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَلَيْسَ قَدِ ابْتَعْتُهُ مِنْكَ ؟ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ وَاللَّهِ مَا بِعْتُكَهُ،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ قَدِ ابْتَعْتُهُ مِنْكَ ،‏‏‏‏ فَطَفِقَ النَّاسُ يَلُوذُونَ بِالنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَبِالْأَعْرَابِيِّ وَهُمَا يَتَرَاجَعَانِ وَطَفِقَ الْأَعْرَابِيُّ يَقُولُ:‏‏‏‏ هَلُمَّ شَاهِدًا يَشْهَدُ أَنِّي قَدْ بِعْتُكَهُ،‏‏‏‏ قَالَ خُزَيْمَةُ بْنُ ثَابِتٍ:‏‏‏‏ أَنَا أَشْهَدُ أَنَّكَ قَدْ بِعْتَهُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَأَقْبَلَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى خُزَيْمَةَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لِمَ تَشْهَدُ ؟ ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ بِتَصْدِيقِكَ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ فَجَعَلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ شَهَادَةَ خُزَيْمَةَ شَهَادَةَ رَجُلَيْنِ.
It was narrated from 'Umarah bin Khuzaimah that his paternal uncle, who was one of the companions of the Prophet told him, that: the Prophet bought a horse from a Bedouin and asked him to follow him, so that he could pay him for the horse. The Prophet hastened but the Bedouin was slow. Men started to talk to the Bedouin and make offers for the horse, and they did not realize that the Prophet had bought it, until some of them offered more than the Prophet had bought it for. Then the Bedouin called out to the Prophet and said; Are you going to buy this horse or shall I sell it? The Prophet stood up when he heard him calling and said: Have I not bought it from you? He said: 'No, by Allah, I have not sold it to you, and the Prophet said I bought it from you. The people started to gaiter around the Prophet and the Bedouion as they were talking, and the Bedouin started to say: Bring a witness who will testify that you bought it. Khuzaimah bin habit said: I bear witness that you bought it The Prophet turned to Khunzimah and said: Why are you bearing witness? He said: Because I know that you are truthful, O Messenger of Allah made the testimony of Khuzaimah equivalent to the testimony of two men. (sahih)
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک اعرابی ( دیہاتی ) سے ایک گھوڑا خریدا، اور اس سے پیچھے پیچھے آنے کو کہا تاکہ وہ اپنے گھوڑے کی قیمت لے لے، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم آگے بڑھ گئے اور اعرابی سست رفتاری سے چلا، لوگ اعرابی سے پوچھنے لگے اور گھوڑا خریدنے کے لیے ( بڑھ بڑھ کر قیمتیں لگانے لگے ) انہیں یہ معلوم نہ تھا کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اسے خرید چکے ہیں، یہاں تک کہ ان میں سے کسی نے اس سے زیادہ قیمت لگا دی جتنے پر آپ نے اس سے خریدا تھا، اعرابی نے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو پکارا، اگر آپ اس گھوڑے کو خریدیں تو ٹھیک ورنہ میں اسے بیچ دوں، آپ نے جب اس کی پکار سنی تو ٹھہر گئے اور فرمایا: ”کیا میں نے اسے تم سے خریدا نہیں ہے؟“ اس نے کہا: نہیں، اللہ کی قسم! میں نے اسے آپ سے بیچا نہیں ہے، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”میں اسے تم سے خرید چکا ہوں“ ۱؎، اب لوگ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اور اعرابی کے اردگرد اکٹھا ہونے لگے، دونوں تکرار کر رہے تھے، اعرابی کہنے لگا: ”گواہ لائیے جو گواہی دے کہ میں اسے آپ سے بیچ چکا ہوں“، خزیمہ بن ثابت رضی اللہ عنہ نے کہا: میں گواہی دیتا ہوں کہ تم اسے بیچ چکے ہو، نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم خزیمہ رضی اللہ عنہ کی طرف متوجہ ہوئے اور فرمایا: ”تم گواہی کیسے دے رہے ہو“؟ انہوں نے کہا: آپ کے سچا ہونے پر یقین ہونے کی وجہ سے ۲؎، اللہ کے رسول! تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے خزیمہ رضی اللہ عنہ کی گواہی کو دو آدمیوں کی گواہی کے برابر قرار دیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4652

أَخْبَرَنَا مُحَمَّدُ بْنُ إِدْرِيسَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُمَرُ بْنُ حَفْصِ بْنِ غِيَاثٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبِي،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي عُمَيْسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ الْأَشْعَثِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِيهِ،‏‏‏‏ عَنْ جَدِّهِ،‏‏‏‏ قَال عَبْدُ اللَّهِ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ:‏‏‏‏ إِذَا اخْتَلَفَ الْبَيِّعَانِ وَلَيْسَ بَيْنَهُمَا بَيِّنَةٌ،‏‏‏‏ فَهُوَ مَا يَقُولُ رَبُّ السِّلْعَةِ،‏‏‏‏ أَوْ يَتْرُكَا .
Abdullah said: I heard the Messenger of Allah say: 'If the two parties to a transaction disagree, and neither of them has any proof, then it is as the owner of the goods says, or they may cancel it.'''
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا: ”بیچنے اور خریدنے والے میں اختلاف ہو جائے اور ان میں سے کسی کے پاس گواہ نہ ہو تو اس کی بات کا اعتبار ہو گا جو صاحب مال ( بیچنے والا ) ہے ۱؎ ( اور خریدار کو اسی قیمت پر لینا ہو گا ) یا پھر دونوں بیع ترک کر دیں“ ۲؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4653

أَخْبَرَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ وَيُوسُفُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ خَالِدٍ،‏‏‏‏ وَاللَّفْظُ لإِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ قَالُوا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حَجَّاجٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي إِسْمَاعِيل بْنُ أُمَيَّةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ عُبَيْدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَضَرْنَا أَبَا عُبَيْدَةَ بْنَ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ أَتَاهُ رَجُلَانِ تَبَايَعَا سِلْعَةً،‏‏‏‏ فَقَالَ أَحَدُهُمَا:‏‏‏‏ أَخَذْتُهَا بِكَذَا وَبِكَذَا،‏‏‏‏ وَقَالَ هَذَا:‏‏‏‏ بِعْتُهَا بِكَذَا وَكَذَا،‏‏‏‏ فَقَالَ أَبُو عُبَيْدَةَ:‏‏‏‏ أُتِيَ ابْنُ مَسْعُودٍ فِي مِثْلِ هَذَا،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ حَضَرْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أُتِيَ بِمِثْلِ هَذَا،‏‏‏‏ فَأَمَرَ الْبَائِعَ أَنْ يَسْتَحْلِفَ،‏‏‏‏ ثُمَّ يَخْتَارَ الْمُبْتَاعُ،‏‏‏‏ فَإِنْ شَاءَ أَخَذَ،‏‏‏‏ وَإِنْ شَاءَ تَرَكَ .
It was narrated that 'Abdul-Malik bin'Ubaid said: We were with Abu 'Ubaidah bin 'Abdullah bin Mas'ud when two men who were involved in a transaction came to him. One of them said: 'I bought it for such and such', and the other said; 'I sold it to him for such and such,' Abu 'Ubaidah said 'something like this was brought to Ibn Masud, and he said; I was with something like this was brought to him. He told the seller to swear an oath, them he gave the purchaser the choice; If he wished, he could buy it, and if he wished he could cancel (the transaction)''
ہم ابوعبیدہ بن عبداللہ بن مسعود کے پاس حاضر ہوئے، ان کے پاس دو آدمی آئے جنہوں نے ایک سامان کی خرید و فروخت کر رکھی تھی، ان میں سے ایک نے کہا: میں نے اسے اتنے اور اتنے میں لیا ہے، دوسرے نے کہا: میں نے اسے اتنے اور اتنے میں بیچا ہے تو ابوعبیدہ نے کہا: ابن مسعود رضی اللہ عنہ کے پاس بھی ایسا ہی مقدمہ آیا تو انہوں نے کہا: میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر ہوا، آپ کے پاس ایسا ہی مقدمہ آیا۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے بائع کو قسم کھانے کا حکم دیا پھر ( فرمایا: خریدار ) کو اختیار ہے، چاہے تو اسے لے اور چاہے تو چھوڑ دے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4654

أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ حَرْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَعْمَشِ،‏‏‏‏ عَنْ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ الْأَسْوَدِ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ اشْتَرَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِنْ يَهُودِيٍّ طَعَامًا بِنَسِيئَةٍ وَأَعْطَاهُ دِرْعًا لَهُ رَهْنًا .
It was narrated that 'Aishah said: The Messenger of Allah bought some food from a Jew on credit, and he gave him a shield of his as a pledge.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک یہودی سے ادھار اناج ( غلہ ) خریدا اور اسے اپنی ایک زرہ بطور رہن دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4655

أَخْبَرَنَا يُوسُفُ بْنُ حَمَّادٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ حَبِيبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ هِشَامٍ،‏‏‏‏ عَنْ عِكْرِمَةَ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ تُوُفِّيَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَدِرْعُهُ مَرْهُونَةٌ عِنْدَ يَهُودِيٍّ بِثَلَاثِينَ صَاعًا مِنْ شَعِيرٍ لِأَهْلِهِ .
It was narrated that Ibn 'Abbas said: The Messenger of Allah died when his shield was in pledge with a Jew for thirty Sa's of barley for his family
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات ہوئی اور آپ کی زرہ ایک یہودی کے پاس گھر والوں کی خاطر تیس صاع جَو کے بدلے رہن ( گروی ) رکھی ہوئی تھی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4656

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَعْتَقَ رَجُلٌ مِنْ بَنِي عُذْرَةَ عَبْدًا لَهُ عَنْ دُبُرٍ فَبَلَغَ ذَلِكَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ أَلَكَ مَالٌ غَيْرُهُ ؟ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَنْ يَشْتَرِيهِ مِنِّي ؟ ،‏‏‏‏ فَاشْتَرَاهُ نُعَيْمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ الْعَدَوِيُّ بِثَمَانِ مِائَةِ دِرْهَمٍ،‏‏‏‏ فَجَاءَ بِهَا رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَدَفَعَهَا إِلَيْهِ ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ ابْدَأْ بِنَفْسِكَ فَتَصَدَّقْ عَلَيْهَا،‏‏‏‏ فَإِنْ فَضَلَ شَيْءٌ فَلِأَهْلِكَ،‏‏‏‏ فَإِنْ فَضَلَ مِنْ أَهْلِكَ شَيْءٌ فَلِذِي قَرَابَتِكَ،‏‏‏‏ فَإِنْ فَضَلَ مِنْ ذِي قَرَابَتِكَ شَيْءٌ فَهَكَذَا،‏‏‏‏ وَهَكَذَا وَهَكَذَا،‏‏‏‏ يَقُولُ بَيْنَ يَدَيْكَ،‏‏‏‏ وَعَنْ يَمِينِكَ،‏‏‏‏ وَعَنْ شِمَالِكَ .
It was narrated that Jabir said: A man from Banu 'Adhrah stated that a slave of his was to be set free after he died. News of that reached the Messenger of Allah and he said: 'Do you have any other property basides him/' He said? 'No.' the Messenger of Allah said; 'Who will buy him from me?' Nu'aim bin 'Abdullah Al-Adawi bought him for eight hundred Dirhams, which the Messenger of Allah brought and gave to him (the former owner). Then the Messenger of Allah said: 'Start with yourself and give charity to (yourself). If there is anything left over, then give it to your family; if there is anything left over from your family, then give it to your relatives; if there is anything left over from your relatives, then give it to such and such,' saying 'In front of you, to your right and to your left.
بنی عذرہ کے ایک شخص نے اپنا ایک غلام بطور مدبر آزاد ( یعنی مرنے کے بعد آزاد ہونے کی شرط پر ) کر دیا، یہ بات رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو معلوم ہوئی، تو آپ نے فرمایا: ”کیا تمہارے پاس اس کے علاوہ کوئی مال ہے؟“ اس نے کہا: نہیں، آپ نے فرمایا: ”اس غلام کو مجھ سے کون خریدے گا؟“ چنانچہ اسے نعیم بن عبداللہ عدوی رضی اللہ عنہ نے آٹھ سو درہم میں خرید لیا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان ( دراہم ) کو لے کر آئے اور اسے ادا کر دیا، پھر فرمایا: ”اپنی ذات سے شروع کرو اور اس پر صدقہ کرو، پھر کچھ بچ جائے تو وہ تمہارے گھر والوں کا ہے، تمہارے گھر والوں سے بچ جائے تو تمہارے رشتے داروں کے لیے ہے اور اگر تمہارے رشتے داروں سے بھی بچ جائے تو اس طرح اور اس طرح“، اپنے سامنے، اپنے دائیں اور بائیں اشارہ کرتے ہوئے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4657

أَخْبَرَنَا زِيَادُ بْنُ أَيُّوبَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَيُّوبُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ:‏‏‏‏ أَنَّ رَجُلًا مِنْ الْأَنْصَارِ،‏‏‏‏ يُقَالُ لَهُ:‏‏‏‏ أَبُو مَذْكُورٍ،‏‏‏‏ أَعْتَقَ غُلَامًا لَهُ عَنْ دُبُرٍ يُقَالُ لَهُ:‏‏‏‏ يَعْقُوبُ،‏‏‏‏ لَمْ يَكُنْ لَهُ مَالٌ غَيْرُهُ،‏‏‏‏ فَدَعَا بِهِ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ يَشْتَرِيهِ ؟ ،‏‏‏‏ فَاشْتَرَاهُ نُعَيْمُ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بِثَمَانِ مِائَةِ دِرْهَمٍ فَدَفَعَهَا إِلَيْهِ،‏‏‏‏ وَقَالَ:‏‏‏‏ إِذَا كَانَ أَحَدُكُمْ فَقِيرًا فَلْيَبْدَأْ بِنَفْسِهِ،‏‏‏‏ فَإِنْ كَانَ فَضْلًا فَعَلَى عِيَالِهِ،‏‏‏‏ فَإِنْ كَانَ فَضْلًا فَعَلَى قَرَابَتِهِ،‏‏‏‏ أَوْ عَلَى ذِي رَحِمِهِ،‏‏‏‏ فَإِنْ كَانَ فَضْلًا فَهَهُنَا،‏‏‏‏ وَهَهُنَا .
It was narrated from Jabir that: a man from among the Ansar who was called Abu (Madhkur) stated that a slave of his who was called Ya'qub was to be set free after he died, and he did not own any other property apart from him. The Messenger of Allah called for him (the slave) to be brought and he said: Who will buy him? Nu'aim bin 'Abdullah bought him for eight hundred dirhams, and he gave it to him and said: If one of you is poor, let him start with himself; if there is anything left over, (let him give it) to his dependents; if there is anything left over, (let him give it) to his relatives; and if there is anything left over, (let him give it) here and there.
ابومذکور نامی انصاری نے ایک یعقوب نامی غلام کو مدبر کے طور پر آزاد کیا، اس کے پاس اس کے علاوہ کوئی اور مال نہ تھا۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے بلا کر فرمایا: ”اسے کون خریدے گا؟“ اسے نعیم ابن عبداللہ رضی اللہ عنہ نے آٹھ سو درہم میں خریدا، آپ نے اس ( انصاری ) کو وہ ( درہم ) دے کر فرمایا: ”تم میں جب کوئی محتاج ہو تو پہلے اپنی ذات سے شروع کرے، پھر اگر بچے تو اپنے گھر والوں پر، پھر اگر بچے تو اپنے رشتے داروں پر، اور اگر پھر بھی بچ رہے تو ادھر ادھر“ ( یعنی دوسرے فقراء پر خرچ کرے ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4658

أَخْبَرَنَا مَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ وَابْنُ أَبِي خَالِدٍ،‏‏‏‏ عَنْ سَلَمَةَ بْنِ كُهَيْلٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ:‏‏‏‏ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بَاعَ الْمُدَبَّرَ .
It was narrated from Jabir that: the Prophet sold a Mudabbar.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مدبر ( غلام ) کو بیچ دیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4659

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ عَنْ عُرْوَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ أَخْبَرَتْهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ بَرِيرَةَ جَاءَتْ عَائِشَةَ تَسْتَعِينُهَا فِي كِتَابَتِهَا شَيْئًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ لَهَا عَائِشَةُ:‏‏‏‏ ارْجِعِي إِلَى أَهْلِكِ،‏‏‏‏ فَإِنْ أَحَبُّوا أَنْ أَقْضِيَ عَنْكِ كِتَابَتَكِ وَيَكُونَ وَلَاؤُكِ لِي فَعَلْتُ،‏‏‏‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكَ بَرِيرَةُ لِأَهْلِهَا فَأَبَوْا، ‏‏‏‏‏‏وَقَالُوا:‏‏‏‏ إِنْ شَاءَتْ أَنْ تَحْتَسِبَ عَلَيْكِ فَلْتَفْعَلْ وَيَكُونَ لَنَا وَلَاؤُكِ،‏‏‏‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ ابْتَاعِي وَأَعْتِقِي،‏‏‏‏ فَإِنَّ الْوَلَاءَ لِمَنْ أَعْتَقَ ،‏‏‏‏ ثُمَّ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَا بَالُ أَقْوَامٍ يَشْتَرِطُونَ شُرُوطًا لَيْسَتْ فِي كِتَابِ اللَّهِ،‏‏‏‏ فَمَنِ اشْتَرَطَ شَيْئًا لَيْسَ فِي كِتَابِ اللَّهِ،‏‏‏‏ فَلَيْسَ لَهُ،‏‏‏‏ وَإِنِ اشْتَرَطَ مِائَةَ شَرْطٍ،‏‏‏‏ وَشَرْطُ اللَّهِ أَحَقُّ وَأَوْثَقُ .
It was narrated from'Aishah that Barirah came to 'Aishah asking her to help her with her contract of manumission.' Aishah said: Go back to your masters, and if they agree to let me pay off your contract of manumission, and let your loyalty be to me, then I will do it Barirah told her masters about that, but they refused and said: If she wants to seek reward (with Allah) by freeing you, let her do so, but your loyalty will be to us. She told the Messenger of Allah about that , and the Messenger of Allah said to her; Buy her and set her free, and loyalty belongs to the one who set the slave free, Then the Messenger of Allah said: What is the matter with people who stipulate conditions that are not in the Book of Allah? Whoever stipulates something that is not in the Book of Allah, it is not valid even if he stipulates one hundred conditions? The condition of Allah is more deserving of being followed and is more hinting.
بریرہ رضی اللہ عنہا عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس آئیں، اپنی کتابت کے سلسلے میں ان کی مدد چاہتی تھیں، ان سے عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا: تم اپنے گھر والوں ( مالکوں ) کے پاس لوٹ جاؤ، اب اگر وہ پسند کریں کہ میں تمہاری مکاتبت ( کی رقم ) ادا کر دوں اور تمہارا ولاء ( حق وراثت ) میرے لیے ہو گا تو میں ادا کر دوں گی، بریرہ رضی اللہ عنہا نے اس کا تذکرہ اپنے گھر والوں سے کیا تو انہوں نے انکار کیا اور کہا: اگر وہ تمہارے ساتھ بھلائی کرنا چاہتی ہیں تو کریں البتہ تمہارا ولاء ( ترکہ ) ہمارے لیے ہو گا، عائشہ رضی اللہ عنہا نے اس کا ذکر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان سے فرمایا: ”انہیں خرید لو ۲؎ اور آزاد کر دو“۔ ولاء ( وراثت ) تو اسی کا ہے جس نے آزاد کیا، پھر آپ نے فرمایا: ”کیا حال ہے ان لوگوں کا جو ایسی شرطیں لگاتے ہیں جو اللہ کی کتاب ( قرآن ) میں نہیں ہیں، لہٰذا اگر کوئی ایسی شرط لگائے جو اللہ کی کتاب ( قرآن ) میں نہ ہو، تو وہ پوری نہ ہو گی گرچہ سو شرطیں لگائی گئی ہوں، اللہ کی شرط قبول کرنے اور اعتماد کرنے کے لائق ہے“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4660

أَخْبَرَنَا يُونُسُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا ابْنُ وَهْبٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي رِجَالٌ مِنْ أَهْلِ الْعِلْمِ مِنْهُمْ يُونُسُ،‏‏‏‏ وَاللَّيْثُ،‏‏‏‏ أَنَّ ابْنَ شِهَابٍ أَخْبَرَهُمْ،‏‏‏‏ عَنْ عُرْوَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ أَنَّهَا قَالَتْ:‏‏‏‏ جَاءَتْ بَرِيرَةُ إِلَيَّ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَتْ:‏‏‏‏ يَا عَائِشَةُ،‏‏‏‏ إِنِّي كَاتَبْتُ أَهْلِي عَلَى تِسْعِ أَوَاقٍ فِي كُلِّ عَامٍ أُوقِيَّةٌ،‏‏‏‏ فَأَعِينِينِي وَلَمْ تَكُنْ قَضَتْ مِنْ كِتَابَتِهَا شَيْئًا،‏‏‏‏ فَقَالَتْ لَهَا عَائِشَةُ،‏‏‏‏ وَنَفِسَتْ فِيهَا:‏‏‏‏ ارْجِعِي إِلَى أَهْلِكِ فَإِنْ أَحَبُّوا أَنْ أُعْطِيَهُمْ ذَلِكَ جَمِيعًا وَيَكُونَ وَلَاؤُكِ لِي فَعَلْتُ،‏‏‏‏ فَذَهَبَتْ بَرِيرَةُ إِلَى أَهْلِهَا فَعَرَضَتْ ذَلِكَ عَلَيْهِمْ فَأَبَوْا،‏‏‏‏ وَقَالُوا:‏‏‏‏ إِنْ شَاءَتْ أَنْ تَحْتَسِبَ عَلَيْكِ فَلْتَفْعَلْ،‏‏‏‏ وَيَكُونَ ذَلِكِ لَنَا،‏‏‏‏ فَذَكَرَتْ ذَلِكَ عَائِشَةُ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا يَمْنَعُكِ ذَلِكِ مِنْهَا ابْتَاعِي،‏‏‏‏ وَأَعْتِقِي،‏‏‏‏ فَإِنَّ الْوَلَاءَ لِمَنْ أَعْتَقَ ،‏‏‏‏ فَفَعَلَتْ،‏‏‏‏ وَقَامَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي النَّاسِ،‏‏‏‏ فَحَمِدَ اللَّهَ تَعَالَى،‏‏‏‏ ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ أَمَّا بَعْدُ،‏‏‏‏ فَمَا بَالُ النَّاسِ يَشْتَرِطُونَ شُرُوطًا لَيْسَتْ فِي كِتَابِ اللَّهِ مَنْ،‏‏‏‏ اشْتَرَطَ شَرْطًا لَيْسَ فِي كِتَابِ اللَّهِ فَهُوَ بَاطِلٌ،‏‏‏‏ وَإِنْ كَانَ مِائَةَ شَرْطٍ،‏‏‏‏ قَضَاءُ اللَّهِ أَحَقُّ وَشَرْطُ اللَّهِ أَوْثَقُ،‏‏‏‏ وَإِنَّمَا الْوَلَاءُ لِمَنْ أَعْتَقَ .
It was narrated that 'Aishah said: Barirah came to me and said: 'O 'Sishah, I have drawn up a contract of manumission with my master, (to buy my freedom) in return for nine Uwqiyah, one Uwqiyah to be paid each year; help me,' she had not yet paid anything toward her contract of manumission.' 'Aishah, who liked her and wanted to help her, said: 'Go back to your masters and if they agree to let me pay the whole sum and that your loyalty will be to me, I will do it.' So Barirah went to her masters and suggested that to them, but they refused and said: 'if she wants to seek reward (with Allah) by freeing you, let her do so, but (you loyalty) will be to us, 'Aishah told the Messenger of Allah about that and he said: 'Do not let that stop you. Buy her and set her free, and loyalty belongs to the one who sets the slave free.; so she did that, then the Messenger of Allah stood up before the people, praised and glorified Allah, then said: 'What is the matter with people who stipulate conditions that are not in the Book of Allah? Whoever stipulates conditions that are not in even if there are a hundred conditions? The decree of Allah takes priority, and the conditions of Allah binding. And loyalty belongs to the one who sets the slaves free.'
میرے پاس بریرہ رضی اللہ عنہا نے آ کر کہا: عائشہ! میں نے نو اوقیہ کے بدلے اپنے گھر والوں ( مالکوں ) سے مکاتبت کر لی ہے کہ ہر سال ایک اوقیہ دوں گی تو آپ میری مدد کریں۔ ( اس وقت ) انہوں نے اپنی کتابت میں سے کچھ بھی ادا نہ کیا تھا۔ ان سے عائشہ رضی اللہ عنہا نے کہا اور ان میں دلچسپی لے رہی تھیں: جاؤ اپنے لوگوں ( مالکوں ) کے پاس اگر وہ پسند کریں کہ میں انہیں یہ رقم ادا کر دوں اور تمہارا ولاء ( حق وراثت ) میرے لیے ہو گا تو میں ایسا کروں، بریرہ رضی اللہ عنہا اپنے لوگوں ( مالکوں ) کے پاس گئیں اور ان کے سامنے یہ بات پیش کی، تو انہوں نے انکار کیا اور کہا: اگر وہ تمہارے ساتھ بھلائی کرنا چاہتی ہیں تو کریں لیکن وہ ولاء ( ترکہ ) ہمارا ہو گا، اس کا ذکر عائشہ نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے کیا تو آپ نے فرمایا: ”یہ چیز تمہیں ان سے مانع نہ رکھے، خریدو اور آزاد کر دو، ولاء ( ترکہ ) تو اسی کا ہے جس نے آزاد کیا“، چنانچہ انہوں نے ایسا ہی کیا، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم لوگوں میں کھڑے ہوئے اور حمد و ثنا کے بعد فرمایا: ”امابعد، لوگوں کا کیا حال ہے، وہ ایسی شرطیں لگاتے ہیں جو اللہ کی کتاب ( قرآن ) میں نہیں ہوتیں، جو ایسی شرط لگائے گا جو اللہ کی کتاب ( قرآن ) میں نہیں ہے تو وہ باطل ہے گرچہ وہ سو شرطیں ہوں، اللہ تعالیٰ کا فیصلہ زیادہ قابل قبول اور اللہ تعالیٰ کی شرط زیادہ لائق بھروسہ ہے، ولاء ( حق وراثت ) اسی کا ہے جس نے آزاد کیا“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4661

أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا خَالِدٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عُبَيْدُ اللَّهِ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الْوَلَاءِ،‏‏‏‏ وَعَنْ هِبَتِهِ .
it was narrated from 'Abdullah that: the Messenger of Allah forbade selling loyalty or giving it away.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ولاء ( وراثت ) کو بیچنے اور اسے ہبہ کرنے سے منع فرمایا ہے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4662

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا مَالِكٌ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الْوَلَاءِ،‏‏‏‏ وَعَنْ هِبَتِهِ .
It was narrated from Ibn 'Umar that: the Messenger of Allah forbade selling loyalty or giving it away. (Shah)
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ولاء ( حق وراثت ) بیچنے اور اسے ہبہ کرنے سے منع فرمایا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4663

أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ شُعْبَةَ،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عُمَرَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ الْوَلَاءِ،‏‏‏‏ وَعَنْ هِبَتِهِ .
It was narrated that Ibn 'Umar said: The Messenger of Allah forbade selling loyalty or giving it away. (Sahih)]
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ولاء بیچنے اور اسے ہبہ کرنے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4664

أَخْبَرَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ حُرَيْثٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا الْفَضْلُ بْنُ مُوسَى السِّينَانِيُّ،‏‏‏‏ عَنْ حُسَيْنِ بْنِ وَاقِدٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَيُّوبَ السَّخْتِيَانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ الْمَاءِ .
It was narrated from Jabir that: the Messenger of Allah forbade selling water.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے پانی بیچنے سے منع فرمایا ہے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4665

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ وَعَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ وَاللَّفْظُ لَهُ،‏‏‏‏ قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرِو بْنِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا الْمِنْهَالِ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ إِيَاسَ بْنَ عُمَرَ،‏‏‏‏ وَقَالَ مَرَّةً:‏‏‏‏ ابْنَ عَبْدٍ،‏‏‏‏ يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يَنْهَى عَنْ بَيْعِ الْمَاءِ ،‏‏‏‏ قَالَ قُتَيْبَةُ:‏‏‏‏ لَمْ أَفْقَهْ عَنْهُ بَعْضَ حُرُوفِ أَبِي الْمِنْهَالِ كَمَا أَرَدْتُ.
Abu Al-Minhal said: I heard Iyas bin 'Umar - and on one occasion he said: Ibn 'Abd - say: 'I heard the Messenger of Allah forbid the sale of water.
میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو پانی بیچنے سے منع فرماتے ہوئے سنا۔ قتیبہ کہتے ہیں: مجھے ان ( سفیان ) سے ایک مرتبہ ابومنہال کے بعض کلمات سمجھ میں نہیں آئے جیسا میں نے چاہا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4666

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ بْنُ سَعِيدٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا دَاوُدُ،‏‏‏‏ عَنْ عَمْرٍو،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الْمِنْهَالِ،‏‏‏‏ عَنْ إِيَاسٍ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ فَضْلِ الْمَاءِ .
It was narrated from Iyas that: the Messenger of Allah forbade selling surplus water. The keeper of al-Wahat sold the surplus water of al-Wahat, and 'Abdullah bin 'Arm disapproved of that.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فاضل پانی کے بیچنے سے منع فرمایا ہے، وہط کے نگراں نے وہط کا فاضل پانی بیچا تو عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما نے اسے ناپسند کیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4667

أَخْبَرَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ عَنْ حَجَّاجٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي عَمْرُو بْنُ دِينَارٍ،‏‏‏‏ أَنَّ أَبَا الْمِنْهَالِ أَخْبَرَهُ،‏‏‏‏ أَنَّ إِيَاسَ بْنَ عَبْدٍ صَاحِبَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَبِيعُوا فَضْلَ الْمَاءِ،‏‏‏‏ فَإِنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ بَيْعِ فَضْلِ الْمَاءِ .
Iya bin 'Abd, the companion of the Prophet said: do not sell surplus water, for the Prophet forbade the sale of surplus water.
نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابی ایاس بن عبد رضی اللہ عنہ نے کہا: فاضل پانی مت بیچو، اس لیے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فاضل پانی بیچنے سے منع فرمایا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4668

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ عَنْ مَالِكٍ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ أَسْلَمَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ وَعْلَةَ الْمِصْرِيِّ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَأَلَ ابْنَ عَبَّاسٍ عَمَّا يُعْصَرُ مِنَ الْعِنَبِ،‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ عَبَّاسٍ:‏‏‏‏ أَهْدَى رَجُلٌ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَاوِيَةَ خَمْرٍ،‏‏‏‏ فَقَالَ لَهُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ هَلْ عَلِمْتَ أَنَّ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ حَرَّمَهَا ؟ ،‏‏‏‏ فَسَارَّ وَلَمْ أَفْهَمْ مَا سَارَّ كَمَا أَرَدْتُ،‏‏‏‏ فَسَأَلْتُ إِنْسَانًا إِلَى جَنْبِهِ،‏‏‏‏ فَقَالَ لَهُ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ بِمَ سَارَرْتَهُ ؟ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَمَرْتُهُ أَنْ يَبِيعَهَا،‏‏‏‏ فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ الَّذِي حَرَّمَ شُرْبَهَا،‏‏‏‏ حَرَّمَ بَيْعَهَا ،‏‏‏‏ فَفَتَحَ الْمَزَادَتَيْنِ حَتَّى ذَهَبَ مَا فِيهِمَا .
It was narrated from Ibn Wa'lah Misri that he asked Ibn 'Abbas about what is produced from grapes. Ibn'Abbas said: A man gave the Messenger of Allah a skin full of wine, and the Prophet said to him;' did you know that Allah has forbidden it?' He whispered something and I did not understand what he whispered as I wanted to. I asked a person who was beside him and the Prophet said to him; 'What are you whispering about?' He said: 'I told him to sell it.' The Prophet said: 'The One Who forbade drinking it also forbade selling it.' Then he opened the vessels and poured out their contents.
انہوں نے ابن عباس رضی اللہ عنہما سے انگور کے رس کے بارے میں سوال کیا تو انہوں نے کہا: ایک آدمی نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو شراب کی مشکیں تحفہ میں دیں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے فرمایا: ”کیا تمہیں علم ہوا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے اسے حرام قرار دیا ہے؟“ پھر اس نے کانا پھوسی کی - میں اس بات کو اچھی طرح نہیں سمجھ سکا تو میں نے اس کی بغل کے آدمی سے پوچھا تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس سے کہا: ”تم نے اس سے کیا کانا پھوسی کی؟“، وہ بولا: میں نے اس سے کہا کہ وہ اسے بیچ دے، تو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس ذات نے اس کا پینا حرام کیا ہے، اس نے اس کا بیچنا بھی حرام کیا ہے“، تو اس آدمی نے دونوں مشکوں کا منہ کھول دیا یہاں تک کہ جو کچھ اس میں تھا بہہ گیا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4669

حَدَّثَنَا مَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا وَكِيعٌ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سُفْيَانُ،‏‏‏‏ عَنْ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الضُّحَى،‏‏‏‏ عَنْ مَسْرُوقٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ،‏‏‏‏ قَالَتْ:‏‏‏‏ لَمَّا نَزَلَتْ آيَاتُ الرِّبَا قَامَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَلَى الْمِنْبَرِ،‏‏‏‏ فَتَلَاهُنَّ عَلَى النَّاسِ ثُمَّ حَرَّمَ التِّجَارَةَ فِي الْخَمْرِ .
It was narrated that 'Aishah said: When the Verses of Riba were revealed, the Messenger of Allah (ﷺ) stood up on the Minbar and recited them to the people, then he forbade dealing in wine.
جب سود سے متعلق آیات نازل ہوئیں تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم منبر پر کھڑے ہوئے اور لوگوں کے سامنے ان کی تلاوت کی، پھر شراب کی تجارت حرام قرار دی۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4670

حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ شِهَابٍ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي بَكْرِ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ هِشَامٍ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ أَبَا مَسْعُودٍ عُقْبَةَ بْنَ عَمْرٍو،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ ثَمَنِ الْكَلْبِ،‏‏‏‏ وَمَهْرِ الْبَغِيِّ،‏‏‏‏ وَحُلْوَانِ الْكَاهِنِ .
Abu Mas'us 'Uqbah bin 'Amr said: The Messenger of Allah forbade the price of a dog, the gift of a female fornicator, and the fee of a fortuneteller.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کتے کی قیمت، زانیہ عورت کی کمائی اور نجومی کی آمدنی سے منع فرمایا ہے۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4671

أَخْبَرَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَبْدِ الْحَكَمِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا سَعِيدُ بْنُ عِيسَى،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا الْمُفَضَّلُ بْنُ فَضَالَةَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ جُرَيْجٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي رَبَاحٍ،‏‏‏‏ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي أَشْيَاءَ حَرَّمَهَا:‏‏‏‏ وَثَمَنُ الْكَلْبِ .
It was narrated that Ibn 'Abbas said: The Messenger of Allah said - among the things that be forbade - 'And the price of a dog.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کئی چیزوں کو حرام قرار دیا، کتے کی قیمت کو ( بھی ) ۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4672

أَخْبَرَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا حَجَّاجُ بْنُ مُحَمَّدٍ،‏‏‏‏ عَنْ حَمَّادِ بْنِ سَلَمَةَ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الزُّبَيْرِ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ نَهَى عَنْ ثَمَنِ الْكَلْبِ وَالسِّنَّوْرِ،‏‏‏‏ إِلَّا كَلْبِ صَيْدٍ ،‏‏‏‏ قَالَ أَبُو عَبْد الرَّحْمَنِ:‏‏‏‏ هَذَا مُنْكَرٌ.
It was narrated from Jabir bin 'Adbullah that: the Messenger of Allah forbade the price of dogs and cats, except hunting dogs. (Da'if) Abu 'Abdur-Rahman (An-Nasa'i) said: This is Munkar.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے کتے، اور بلی کی قیمت سے منع فرمایا سوائے شکاری کتے کے۔ ابوعبدالرحمٰن نسائی کہتے ہیں: یہ حدیث منکر ہے ۱؎۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4673

أَخْبَرَنَا قُتَيْبَةُ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ،‏‏‏‏ عَنْ يَزِيدَ بْنِ أَبِي حَبِيبٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَطَاءِ بْنِ أَبِي رَبَاحٍ،‏‏‏‏ عَنْ جَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ،‏‏‏‏ أَنَّهُ سَمِعَ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ يَقُولُ عَامَ الْفَتْحِ،‏‏‏‏ وَهُوَ بِمَكَّةَ:‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ وَرَسُولَهُ حَرَّمَ بَيْعَ الْخَمْرِ،‏‏‏‏ وَالْمَيْتَةِ،‏‏‏‏ وَالْخِنْزِيرِ،‏‏‏‏ وَالْأَصْنَامِ ،‏‏‏‏ فَقِيلَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ أَرَأَيْتَ شُحُومَ الْمَيْتَةِ،‏‏‏‏ فَإِنَّهُ يُطْلَى بِهَا السُّفُنُ،‏‏‏‏ وَيُدَّهَنُ بِهَا الْجُلُودُ،‏‏‏‏ وَيَسْتَصْبِحُ بِهَا النَّاسُ ؟،‏‏‏‏ فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا،‏‏‏‏ هُوَ حَرَامٌ ،‏‏‏‏ وَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عِنْدَ ذَلِكَ:‏‏‏‏ قَاتَلَ اللَّهُ الْيَهُودَ،‏‏‏‏ إِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ لَمَّا حَرَّمَ عَلَيْهِمْ شُحُومَهَا جَمَّلُوهُ،‏‏‏‏ ثُمَّ بَاعُوهُ فَأَكَلُوا ثَمَنَهُ .
It was narrated from Jabir bin 'Abdullah that he heard the Messenger of Allah say, when he was in Makkah during the Year of the Conquest: Allah and His Messenger have forbidden the sale of wine, dead animals, pigs and idols. It was said: O messenger of Allah, what do you thing about the fat of the dead animal, for ships are caulked with it, skins are daubed with it and people use it in their lamps. He said: No, it is Haram. And the Messenger of Allah then said: My Allah curse the Jews, for when Allah, the Mighty and Sublime, forbade the meat (of dead animals) to them, they melted it down and sold it, and consumed its price.
انہوں نے فتح مکہ کے سال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا اور آپ مکہ میں تھے: اللہ اور اس کے رسول نے شراب، مردار، سور اور بتوں کے بیچنے سے منع فرمایا۔ عرض کیا گیا: اللہ کے رسول! مردے کی چربی کے بارے میں کیا خیال ہے؟ اس سے تو کشتیاں چکنی کی جاتی ہیں، کھالوں میں استعمال ہوتا ہے اور لوگ اس سے چراغ جلاتے ہیں، آپ نے فرمایا: ”نہیں، وہ حرام ہے“، اس وقت آپ نے یہ بھی فرمایا: ”اللہ تعالیٰ یہودیوں کو ہلاک و برباد کرے، اللہ تعالیٰ نے ان پر چربی حرام کی تھی، انہوں نے اسے پگھلایا، پھر بیچا اور اس کی قیمت کھائی“۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4674

أَخْبَرَنِي إِبْرَاهِيمُ بْنُ الْحَسَنِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ حَجَّاجٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ ابْنُ جُرَيْجٍ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ سَمِعَ جَابِرًا، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ بَيْعِ ضِرَابِ الْجَمَلِ، ‏‏‏‏‏‏وَعَنْ بَيْعِ الْمَاءِ، ‏‏‏‏‏‏وَبَيْعِ الْأَرْضِ لِلْحَرْثِ يَبِيعُ الرَّجُلُ أَرْضَهُ وَمَاءَهُ،‏‏‏‏ فَعَنْ ذَلِكَ نَهَى النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ .
Jabir said: The Messenger of Allah forbade charging stud fees for a camel, the sale of water, the renting of land for cultivation. Selling one's land and water, this is what the Prophet forbade.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اونٹ سے جفتی کرانے پر اجرت لینے سے، پانی بیچنے اور زمین کو بٹائی پر دینے سے ۱؎ یعنی آدمی اپنی زمین اور پانی کو بیچ دے تو ان سب سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4675

أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْمَاعِيل بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَلِيِّ بْنِ الْحَكَمِ. ح وَأَنْبَأَنَا حُمَيْدُ بْنُ مَسْعَدَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَلِيِّ بْنِ الْحَكَمِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ نَافِعٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ نَهَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنْ عَسْبِ الْفَحْلِ .
It was narrated that Ibn 'Umar said: The Messenger of Allah forbade charging stud fees for a stallion.
رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے نر کو مادہ پر چھوڑنے کی اجرت لینے سے منع فرمایا۔
Ravi Bookmark Report

حدیث نمبر 4676

أَخْبَرَنَا عِصْمَةُ بْنُ الْفَضْلِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ آدَمَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ إِبْرَاهِيمَ بْنِ حُمَيْدٍ الرُّوَاسِيِّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هِشَامُ بْنُ عُرْوَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِبْرَاهِيمَ بْنِ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ رَجُلٌ مِنْ بَنِي الصَّعْقِ أَحَدِ بَنِي كِلَابٍ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ،‏‏‏‏ فَسَأَلَهُ عَنْ عَسْبِ الْفَحْلِ فَنَهَاهُ عَنْ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّا نُكْرِمُ عَلَى ذَلِكَ .
It was narrated that Anas bin Malik said: A man from Banu As-Sa'q, one of Banu Kilab, came to the Messenger of Allah and asked him about charging stud fees for a stallion. He forbade him to do that, but he said: 'We give payment for that. '